بریکنگ نیوز
Home / اداریہ / حقائق کا ادراک ضروری ہے

حقائق کا ادراک ضروری ہے

امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ اس ماہ کی20 تاریخ کو اپنا منصب سنبھالیں گے امریکی صدر کی جانب سے نامزد وزیر دفاع جیمز میٹس افغانستان میں جاری کاروائیوں کیلئے پاکستان کی سرزمین استعمال کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے ڈومور کا روایتی مطالبہ بھی دہرا رہے ہیں پاکستان بار بار واضح کر چکا ہے کہ یہاں کی سرزمین کسی کے خلاف استعمال کرنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی امریکہ میں تعینات پاکستان کے سفیر جلیل عباس جیلانی نے امریکی میڈیا کے اعزاز میں دیئے جانیوالے ظہرانے میں پاکستان کی پالیسی کے خدوخال نمایاں کئے ہیں جلیل عباس جیلانی کا یہ بھی کہنا ہے کہ نئی امریکی انتظامیہ سے جب ایف16لڑاکا طیاروں سے متعلق بات ہوئی تو فیصلہ پاکستان کے حق میں ہی جائیگا پاکستانی سفیر کا کہنا ہے کہ نئی امریکی انتظامیہ جانتی ہے کہ خودپاکستان کو کن مسائل کا سامنا ہے اور یہ کہ پاکستان اور امریکہ کے بہت سارے مفادات مشترکہ ہیں خودنامزد امریکی وزیر دفاع دہشتگردی کے خلاف جنگ میں پاک فوج کی قربانیوں کا اعتراف بھی کرتے ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان شراکت داری اوراعتماد سازی کیلئے کام کاعزم بھی کرتے ہیں امریکہ کو ڈومور کا مطالبہ کرنے سے پہلے ان ارضی حقائق کا ادراک کرنا ہوگا ۔

جو پاکستان کے مثبت کردار کی دلیل ہیں لاکھوں افغان مہاجرین کے میزبان ملک کی دہشتگردی کے خلاف جنگ میں قربانیوں کو دیکھا جائے انسانی جانوں کیساتھ املاک اور معیشت کو پہنچنے والے نقصانات کو سامنے رکھا جائے افغانستان میں امن کے قیام کیلئے مذاکراتی عمل میں پاکستانی کردار ریکارڈ کا حصہ ہے پاکستان چین اورروس سرجوڑ کر افغانستان میں امن کیلئے اقدامات تجویز کر رہے ہیں اس ساری صورتحال میں کابل سے الزامات کی بوچھاڑ کے ساتھ پاکستانی سفارتخانے پر دھاواکیا پیغام دے رہا ہے پاکستان این ڈی ایس اور’’ را‘‘ کے درمیان گٹھ جوڑ پر اپنی تشویش ریکارڈ پر لاچکا ہے ایسے میں ڈومور کا مطالبہ کرنے کی بجائے افغانستان کواپنے اندرونی حالات بہتر بنانے پاکستان پر الزامات عائد کرنے کا سلسلہ ختم کرنے اور خطے میں قیام امن کیلئے پاکستان کے اصولی موقف کو سپورٹ کرنے کا کہا جائے۔

بجلی کے اضافی بل

پیسکو کے چیف ایگزیکٹوانوارالحق یوسفزئی کی ایس ایز کانفرنس میں جاری ہدایات بجلی کے صارفین کو درپیش مسائل اورمشکلات کے احساس کی عکاس ہیں چیف ایگزیکٹو نے کھلے دل کے ساتھ اپنے ادارے کی بعض خامیوں کو تسلیم کرتے ہوئے اصلاح احوال کے احکامات جاری کئے انہوں نے بجلی کے اضافی بل بھجوانے کا جاری سلسلہ ختم کرنے کی ہدایت کیساتھ نئے کنکشن کے حصول میں مشکلات کا سخت نوٹس لینے کا عندیہ دیا ہے بجلی کی کمی اور لوڈشیڈنگ ایک بڑا قومی مسئلہ ہے جس کا حل بجلی کی کسی تقسیم کار کمپنی کے پاس نہیں کمپنی اپنے بہتر نظم و ضبط اور کارکردگی کیساتھ صارفین کو درپیش دیگر مشکلات دور کرسکتی ہے جن کیلئے پیسکو کے سربراہ کی ہدایات قابل اطمینان ہیں کیا ہی بہتر ہو کہ پیسکو اپنا ریکوری سسٹم بہتر بناتے ہوئے بجلی کا بل جمع کرانے والے ان صارفین کو اندھیروں سے نجات دلا دے جو دوسروں کے گناہ کی سزا میں لوڈشیڈنگ برداشت کرتے ہیں اس سب کیساتھ غلط بل کی تصحیح کیلئے سب ڈویژن جانے والے صارفین کو جگہ جگہ ٹھوکریں کھانے سے بچانے کیلئے احترام کیساتھ ون ونڈو آپریشن کی سہولت یقینی بنائی جائے۔