بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / فوجی عدالتوں کے آئینی اختیارات میں ترامیم چاہتے ہیں ،چودھری شجاعت

فوجی عدالتوں کے آئینی اختیارات میں ترامیم چاہتے ہیں ،چودھری شجاعت


لاہور۔ پاکستان مسلم لیگ (ق)کے صدر و سابق وزیراعظم چودھری شجاعت حسین نے کہا ہے کہ نیشنل ایکشن پلان اور فوجی عدالتوں کے آئینی اختیارات میں ترامیم چاہتے ہیں،پیپلزپارٹی کی اے پی سی میں شرکت کیلئے متفقہ لائحہ عمل طے کر لیا، فاٹا میں اصلاحات کیلئے 5سال کا انتظار نہیں کیا جا سکتا، انہیں 2018ء سے پہلے فی الفور نافذ کیا جائے ، فوجی عدالتوں کو آزادانہ کام کرنا چاہئے ۔ وہ جمعہ کو اپنی رہائش گاہ پر بلائے گئے چار جماعتی اجلاس کے بعد ان کے قائدین کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ اجلاس میں پیپلزپارٹی کی اے پی سی میں شرکت کیلئے متفقہ لائحہ عمل طے کر لیا گیا، اجلاس میں پاکستان عوامی تحریک کے خرم نواز گنڈاپور، سنی اتحاد کونسل کے صاحبزادہ حامد رضا اور مجلس وحدت المسلمین کے علامہ ناصر عباس کے علاوہ سینیٹر کامل علی آغا، سینیٹر سعید الحسن مندوخیل، محمد بشارت راجہ، محمد یوسف خان ہوتی اور دیگر رہنما بھی موجود تھے۔

اجلاس میں ملکی و سیاسی صورتحال پر غور کیا گیا اور نیشنل ایکشن پلان، فوجی عدالتوں میں توسیع اور فاٹا کے معاملات کے حوالے سے مشترکہ لائحہ عمل پر غور کیا گیا۔ چودھری شجاعت حسین نے کہا کہ لوگ کہتے تھے کہ پیپلزپارٹی کی اے پی سی میں نہ جائیں لیکن ہمارا موقف ہے کہ قومی نوعیت کے معاملے کیلئے جب بھی کوئی بلائے تو قومی مفاد میں ضرور جانا چاہئے اور ہم ہمیشہ جاتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر موقع ملا تو نیشنل ایکشن پلان میں ترمیم کرانا چاہتے ہیں جبکہ فوجی عدالتوں کے اختیارات کے حوالے سے بھی آئینی ترمیم لانا چاہتے ہیں تاکہ فوجی عدالتیں آزادانہ اور بغیر کسی تنقید کے کام کر سکیں۔ انہوں نے کہا کہ فاٹا میں اصلاحات کیلئے 5سال کا انتظار نہیں کیا جا سکتا، انہیں 2018ء سے پہلے فی الفور نافذ کیا جائے۔

سینیٹر کامل علی آغا نے کہا کہ چودھری شجاعت حسین کی درخواست پر سب اتحادی جماعتیں اکٹھی ہیں اور آج کے اجلاس میں کل ہونے والی اے پی سی کیلئے مشترکہ لائحہ عمل طے کرنا مقصود تھا۔ خرم نواز گنڈا پور نے کہا کہ متفقہ لائحہ عمل طے کیا گیا ہے، ہم چاہتے ہیں کہ قومی و عوامی مفاد میں اکٹھے ہو کر چلیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم سی پیک کیخلاف نہیں اس پر اس طرح عمل ہونا چاہئے کہ تمام صوبے متفق ہوں۔ صاحبزادہ حامد رضا نے کہا کہ ملک و قوم کا مفاد سب سے مقدم ہے، قومی معاملات میں ہمیں متفق و متحد ہونا چاہئے۔ علامہ راجہ ناصر عباس نے کہا کہ ملک میں اسلحہ اٹھانے والوں کے خلاف نیشنل ایکشن پلان کے مطابق عملدرآمد ہونا چاہئے۔