بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / الیکشن کمیشن نے پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002کے تحت سیاسی جماعتوں کی چھانٹی کا عمل شروع کردیا

الیکشن کمیشن نے پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002کے تحت سیاسی جماعتوں کی چھانٹی کا عمل شروع کردیا


اسلام آباد۔ الیکشن کمیشن نے پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002کے تحت سیاسی جماعتوں کی چھانٹی کا عمل شروع کردیا، پولیٹکل پارٹیز آرڈر اورقواعد پر پورا نہ اترنے والی جماعتوں کو ڈی لسٹ کرنے کیلیے فہرست تیارکرلی گئی۔ چند دنوں تک الیکشن کمیشن سیکریٹریٹ چیف الیکشن کمشنر اورممبران سے ڈی لسٹ کرنے کی منظوری لینے کیلیے بریفنگ دیگا۔200سے زائد سیاسی جماعتوں کے بینک اکاونٹس،صوبائی اور ضلعی سطح پرکوئی تنظیم نہ ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

الیکشن کمیشن نے 333سیاسی جماعتوں کو خطوط بھجوائے تھے لیکن دفتر نہ ہونے کی وجہ سے 58 خطوط واپس آگئے۔تفصیلات جمع نہ کرانے والی سیاسی جماعتو ں میں متحدہ مجلس عمل،نیشنل پیپلزپارٹی،آل پاکستان مسلم لیگ، ملت پارٹی، پیپلزپارٹی پارلیمنٹیرینز پیٹریاٹ، پشتونخوا ملی عوامی پارٹی بھی شامل ہیں۔ذرائع کے مطابق الیکشن کمیشن میں درج سیاسی جماعتوں کی تعداد 333تک پہنچ چکی ہے، جن میں300کے لگ بھگ ایسی جماعتیں ہیں جوکبھی بھی پارلیمنٹ کا حصہ نہیں بن سکیں اور وہ عملی طور پر غیر فعال ہیں اور الیکشن کمیشن کے لیے بوجھ بنی ہوئی ہیں۔ غیرفعال سیاسی جماعتوں کی تعداد زیادہ ہونے پر الیکشن کمیشن نے ان کی چھانٹی کا فیصلہ کیا تھا اور 12جنوری کو تمام سیاسی جماعتوں کو خطوط اور پبلک نوٹس کے ذریعے دفاتر، بینک اکانٹس،عہدیداروں اورتنظیم سازی کی تفصیلات مانگی تھیں۔

ذرائع کے مطابق 113سیاسی جماعتوں نے اپنے جواب الیکشن کمیشن کو بھجوا دیے ہیں تاہم اب 220جماعتوں کی جانب سے کوئی تفصیلات نہیں بھجوائی گئیں ان میں بلوچستان نیشنل پارٹی، مسلم لیگ نظریاتی، مسلم لیگ جونیجو،جمعیت علمائے اسلام نظریاتی،عام آدمی پارٹی ،سرائیکستان قومی اتحاد شامل ہیں۔جن جماعتوں نے الیکشن کمیشن کو اپنی تفصیلات نہیں بھجوائیں ان میں58 جماعتیں ایسی بھی ہیں جن کو لکھے گئے خطوط اس لیے واپس آگئے ہیں کہ جو پتہ دیا گیا تھا، اس پر یہ جماعتیں موجودہی نہیں۔200کے لگ بھگ ایسی جماعتیں بھی ہیں جن کی صوبائی اور ضلعی سطح پرکوئی تنظیم نہیں اورکئی برسوں سے انھوں نے انٹرا پارٹی الیکشنزکا انعقاد نہیں کرایا اور وہ پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002 پر پورا نہیں اترتیں لیکن اس کے باوجود الیکشن کمیشن میں درج ہیں۔