بریکنگ نیوز
Home / دلچسپ و عجیب / ساڑھے چار لاکھ روپے کی ایک اسٹرابیری

ساڑھے چار لاکھ روپے کی ایک اسٹرابیری

ہمواشنگٹن۔ پھل غذائیت حاصل کرنے کی خاطر کھاتے ہیں مگر جاپانی معاشرے میں انہیں ایک اور حیثیت سے بھی اہم مقام حاصل ہے۔ جب کوئی خاص موقع آئے مثلاً کسی کی شادی ہو، باس سے ملنا یا مریض کی عیادت کرنے ہسپتال جانا ہو تو جاپانی میزبانوں کے لیے تحفۃً پھل خریدنا پسند کرتے ہیں۔ ہم وطنوں کی اسی عادت کو ایک ذہین کاروباری جاپانی نے آمدن کاترین ذریعہ بنالیا۔

یہ 1834ء کی بات ہے، بینزو اوشیما نامی جاپانی نے ٹوکیو میں سستے داموں پھل فروخت کرنے کی ایک دکان کھولی۔ دیانت داری اور محنت کے باعث جلد ہی دکان چل پڑی۔ 1870ء میں بینزو اوشیما کے پوتے، دریجو اوشیما نے فیصلہ کیا کہ گاہکوں کی خاطر خاص طریقوں سے پھل اگائے جائیں تاکہ وہ اپنے پیاروں کو بہترین اور نادر روزگار تحفہ دینے کے قابل ہوسکیں۔ تب تک دکان ’’سیمبی کیا‘‘ (SEMBIKIA) کہلانے لگی تھی۔

چنانچہ دریجو اوشیما نے چند باغ خریدے اور وہاں خصوصی طریقے سے پھل اگانے لگا۔ ان پھلوں کی نشوونما اور پرداخت خاص طریقوں سے کی جاتی تاکہ وہ شکل وصورت میں عام پھلوں سے منفرد ممتاز ہوجائیں۔ یہ انوکھی جدت منافع بخش ثابت ہوئی اور جاپانی سیمبی کیا کے اگائے گئے منفرد ڈیزائن والے پھل بڑی تعداد میں خریدنے لگے۔ آج ٹوکیو اور مضافات شہر میں کمپنی کی 14 دکانیں واقع ہیں۔ ان دکانوں میں منفرد شکل و صورت ہی نہیں انوکھے ذائقے رکھنے والے پھل بھی فروخت ہوتے ہیں۔ جاپانی نہایت مہنگے داموں یہ پھل خریدتے اور فخر و مسرت سے دوسروں کو تحفۃً دیتے ہیں۔ فطری بات ہے کہ قیمتی تحفہ ملنے پر میزبان کے دل میں مہمان کی عزت و منزلت بڑھ جاتی ہے۔

تاہم سیمبی کیا کی دکانوں سے صرف امیر جاپانی ہی پھل خرید سکتے ہیں۔ انگور، سیب، تربوز، خربوزہ اور اسٹربیری کمپنی کی خاص سوغات ہیں۔ کمپنی ایک ٹینس بال جتنی بڑی اسٹرابیری اگانے میں کمال مہارت رکھتی ہے۔ ایسی ایک بڑی سی اسٹرابیری ساڑھے چار لاکھ روپے تک فروخت ہوتی ہے۔