بریکنگ نیوز
Home / بزنس / رمضان میں چینی نرخ 100روپے فی کلو تک بڑھنے کا امکان

رمضان میں چینی نرخ 100روپے فی کلو تک بڑھنے کا امکان


اسلام آباد۔ پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن اور وفاقی وزیر تجارت خرم دستگیر کے مابین ملک سے چینی برآمد کرنے بارے طے کئے گئے معاملات کی حقیقت کا مزید انکشاف سامنے آیا ہے ۔ وزیر تجارت اور شوگر مافیا کے مابین 16 مارچ 2017 ء کو ہونے والی خفیہ ملاقات اور اجلاس کا مکمل منٹس کی کاپی نجی نیوز ایجنسی نے حاصل کر لی ہے ۔

سرکاری دستاویزات کے مطابق وزارت تجارت کو بین الوزارتی کمیٹی نے سفارش کی تھی کہ چینی کی قیمت میں گزشتہ سال کی نسبت تین روپے فی کلو کے حساب سے اضافہ ہو چکا ہے ۔اس لئے ملک میں چینی کی قیمت برقرار رکھنے کے لئے مزید چینی برآمد کرنے کی اجازت ہر گز نہ دی جائے ۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ ملکی اور غریب عوام کے مفادات کو پس پشت ڈال کر شوگر مافیا کے مفادات کو اہمیت دیتے ہوئے ملک سے مزید 4 لاکھ میٹرک ٹن چینی برآمد کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے یہ 4 لاکھ میٹرک ٹن پہلے سے منظور شدہ 2 لاکھ 25 ہزار میٹرک ٹن چینی کی برآمد سے علیحدہ ہے اس لئے مجموعی طور پر 6 لاکھ 25 ہزار میٹرک ٹن چینی ملک سے برآمد کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے ۔

وزارت پیداوار کے ایک اعلیٰ ذرائع نے بتایا ہے کہ چینی کی برآمد سے ملک میں چینی کی قیمت میں اضافہ ہو جانے گا اور ایک ماہ تک چینی کی قیمت 70 سے 80 روپے فی کلو ہو جائے گی جبکہ رمضان شریف میں چینی کی قیمت 100 روپے ہو جائے گی کیونکہ شوگر مافیا 30 اپریل سے پہلے پہلے چینی ملک سے غائب کر دے گا جبکہ مئی کے آخری ہفتے سے رمضان شریف کی آمد ہے ۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ حکومت کے اعداد و شمار کے مطابق مارچ تک سٹرٹیجک ذخائر 8 لاکھ 50 ہزار میٹرک ٹن اور مارچ کے بعد ملک بھر میں گنا کا کرشنگ سیزن بھی ختم ہو جاتا ہے ۔