بریکنگ نیوز
Home / کالم / انسداد دہشت گردی: کامیابیوں کا سفر

انسداد دہشت گردی: کامیابیوں کا سفر


دہشت گردی کیخلاف جنگ میں کامیابی صرف دہشت گردوں کی طاقت کے مراکز منتشر اور تباہ کرنے کی حد تک محدود نہیں بلکہ اس کے ذریعے ایک نفسیاتی اور اخلاقی برتری بھی حاصل کر لی گئی ہے‘ جسکا ثبوت یہ ہے کہ دہشت گردی اور عسکریت پسندی سے تائب ہونے والوں کی تعداد میں ہر دن اضافہ ہو رہا ہے لیکن جس طرح پاکستان میں دہشت گردی میں بھارت کے ملوث ہونے اور جاسوسی کا نیٹ ورک ظاہر ہو رہا ہے‘ اس کے حقائق عالمی برادری کے سامنے رکھنے جانے چاہئیں تاکہ بھارت کا اصل چہرہ اور کردار نمایاں ہو‘ جو پاکستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنا چاہتاہے۔ کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے ترجمان احسان اللہ احسان نے اس امر کا اعتراف کیا ہے کہ بھارتی خفیہ ایجنسی ’’را‘‘ اور ’’این ڈی ایس‘‘ کا طالبان کے ساتھ گٹھ جوڑ ہے جبکہ افغانستان میں نقل و حرکت کے لئے این ڈی ایس اور افغان فوج مدد کرتی تھی۔ احسان اللہ احسان کے اعترافی ویڈیو بیان میں اس نے عسکریت پسند تنظیم میں اپنی شمولیت کے پس منظر اور اس کالعدم تنظیم کی تخریبی سرگرمیوں کے طریقۂ کار اور مقاصد کو بے نقاب کیا ہے۔ اس کے بقول تحریک طالبان پاکستان میں ذاتی مقاصد کے لئے تخریب کاری کررہی ہے اور جب مجھے معلوم ہوا کہ اس تخریب کاری کے لئے اسے بھارت کی سرپرستی حاصل ہے تو میں نے اعتراض کیا تھا کہ ہم اسلام دشمن بھارت کی کیوں مدد کررہے ہیں احسان اللہ احسان کالعدم ٹی ٹی پی کا مرکزی ترجمان ہونے کے علاوہ کالعدم تنظیم جماعت الاحرار کا بھی ترجمان رہا ہے۔

جس نے ڈیڑھ ہفتے قبل خود کو سکیورٹی فورسز کے حوالے کیا تھا اور وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثارعلی خان نے اسے دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن ردالفساد کی بہت بڑی کامیابی قرار دیا تھا۔ آج اس نے اپنے اعترافی بیان میں کالعدم ’ٹی ٹی پی‘ کو بھارتی ایجنسی ’’را‘‘ کی معاونت حاصل ہونے اور اس تنظیم کی اسلام کے تقاضوں کے منافی مذموم تخریبی سرگرمیوں کا انکشاف کیا ہے تو یہ طالبان کو اپنے بچے قرار دینے والے جید علماء کرام اور ایک مائنڈسیٹ کے تحت ان کی تخریبی سرگرمیوں اور خودکش حملوں کی حمایت کرنے والے حلقوں کے لئے لمحۂ فکریہ ہے ہماری اس سے بڑی بدقسمتی اور کیا ہو سکتی ہے کہ جن بدبختوں کے ہاتھ اس ارض وطن کے ہزاروں معصوم باشندوں کے خونِ ناحق میں رنگے ہوئے ہیں اور جو اپنی جنونی کاروائیوں کے ذریعہ ریاستی اتھارٹی کو چیلنج کرکے اس کے کمزور ہونے کا تاثر دیتے رہے ہیں‘ ہمارے بعض دینی اور سیاسی حلقوں نے انہیں گلے لگائے رکھا ہے اور انہیں ہوا بنا کر پیش کیا جاتا رہا ہے۔ اس حوالے سے احسان اللہ احسان نے اپنے اعترافی بیان میں تخریبی سرگرمیوں کے لئے بھارت کے علاوہ افغانستان کی سرپرستی حاصل ہونے کا بھی انکشاف کیا ہے تو اس سے ارض وطن پر گزشتہ کم و بیش پندرہ سال سے جاری دہشت گردی کا سارا پس منظر کھل کر سامنے آگیا ہے۔

اس سے یہ حقیقت بھی کھل کر سامنے آگئی ہے کہ بھارت نے مسلمانوں کے فروعی اختلافات کو پاکستان کی سلامتی کمزور کرنے والی دہشت گردی کی بنیاد بنایا اور پاکستان میں موجود اپنے ایجنٹوں کے ذریعے فرقہ وارانہ کشیدگی کی فضا ہموار کرکے مخصوص فرقوں کے لوگوں کو دہشت گردی کی بھینٹ چڑھایا اور پاکستان کو کمزور کرنے کے مقاصد کی تکمیل کی احسان اللہ احسان کے بقول کالعدم تحریک طالبان اور جماعت الاحرار کے لوگ سوشل میڈیا کے ذریعے لوگوں کو اسلام کے نام پر گمراہ کررہے ہیں تو ہماری ریاست اور اسکی مشینری ایسے سفاک اور ملک دشمن عناصر کی مکمل سرکوبی کے لئے کوئی بھی سخت سے سخت قدم اٹھانے میں مکمل حق بجانب ہے دہشت گردوں کو بھارتی سرپرستی حاصل ہونے کا انکشاف تو خود بھارتی جاسوس کلبھوشن بھی اپنے اقبالی بیان میں کرچکا ہے جسے کورٹ مارشل کے تحت موت کی سزا سنائی گئی ہے تو بھارت اس پر یہ واویلا کررہا ہے۔ اس تناظر میں پاکستان کی سلامتی کے درپے اور ہزاروں بے گناہ انسانوں کے خون ناحق سے ہاتھ رنگنے والے اس سمیت دیگر دہشت گرد کسی ہمدردی یا رورعایت کے ہرگز مستحق نہیں۔ (بشکریہ: دی نیوز۔ تحریر: افتخار احمد۔ ترجمہ: اَبواَلحسن اِمام)