بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / بھارتی عدالت نے بھی مسلمان دشمنی کی حدیں پارکر دیں

بھارتی عدالت نے بھی مسلمان دشمنی کی حدیں پارکر دیں


اسلام آباد۔بھارتی عدالت بھی مسلمان دشمنی کی تمام حدیں پار کر گئی،پنجاب اور ہریانہ ہائیکورٹ نے بھی اذان کے لیے سپیکر کے استعمال کو غیر ضروری قراردے دیا۔بھارتی عدالت نے گلوکار سونونگم کے اذان کے خلاف ٹوئٹ پر دائر مقدمہ بے بنیاد قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا،عدالت نے اسے سستی شہرت کے حصول کا ذریعہ قرار دیا۔پنجاب اور ہریانہ کورٹ نے کہا کہ اذان کو اسلامی عبادات کا لازمی ہونا چاہئے مگر لاوڈ اسپیکر کو نہیں۔

مذہبی عبادات کے لئے لاوڈ اسپیکر کے استعمال پر تنقید کے بعد گلوکار کے خلاف عدالتوں میں درخواستیں دائر کی گئیں۔آس محمد نامی شخص نے یہ مقدمہ دائر کیا تھا،ان کی خواہش تھی کہ سونونگم کے خلاف مجرمانہ کارروائی کی جائے۔آس نے کہا کہ سونو نگم کی ٹوئٹ سے مسلمان کمیونٹی کے مذہبی معاملات کو چلانے کے بنیادی حقوق پر ضرب پڑی ہے۔عدالت نے کہا کہ مدعا علیہ سونو نگم نے جو الفاظ استعمال کئے ہیں ان کی منصفانہ تشریح سے یہ واضح ہوتا ہے کہ مدعا علیہ کی ٹوئٹ میں لفظ غنڈہ گردی اذان کے تناظر میں نہیں بلکہ لاوڈ اسپیکر اور ایمپلی فائر کے لئے استعمال کیا گیا۔