بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / شعبہ نورالوجی کے قیام کیلئے 2ماہ کی مہلت

شعبہ نورالوجی کے قیام کیلئے 2ماہ کی مہلت

پشاور۔پشاورہائی کورٹ کے جسٹس قیصررشید اورجسٹس یونس تہیم پرمشتمل دورکنی بنچ نے خیبرٹیچنگ ہسپتال میں شعبہ نیورالوجی کے قیام کے لئے جولائی تک مہلت دیتے ہوئے کہاہے کہ مقررہ مدت میں شعبہ قائم نہ ہواتو متعلقہ حکام کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائی جائے گی عدالت عالیہ کے فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز درخواست گذار ڈاکٹرممتازعلی کی جانب سے دائرتوہین عدالت کی درخواست پرجاری کئے اس موقع پر عدالت کو بتایاگیاکہ پشاورہائی کورٹ نے کچھ عرصہ قبل احکامات جاری کئے تھے کہ خیبرٹیچنگ ہسپتال میں شعبہ نیوروسرجری قائم کیاجائے تاہم اتناعرصہ گذرنے کے باوجود یہ شعبہ قائم نہیں کیاگیا جبکہ لیڈی ریڈنگ ہسپتال اورحیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں ان شعبوں پربہت زیادہ رش ہے اورماہانہ بیس سے تیس ہزار مریض معائنہ کے لئے آتے ہیں ۔

اس موقع پرڈاکٹرممتازنے عدالت کو بتایا کہ ہسپتال ڈائریکٹر ٗ میڈیکل ڈائریکٹر اوربورڈآف گورنرزنے گذشتہ روز اجلاس بلایاتھا اورکہا ہے کہ جولائی کے آخرتک یہ شعبہ قائم کر دیا جائے گا جس میں بیس بستر ہوں گے اورابتدائی طورپرتمام عملہ تعینات کیاجائے گا اوربتایاگیاہے کہ پندرہ روز میں نئے شعبے کے قیام پرکام شروع کردیا جائے گا جبکہ نئے آلات بھی فراہم کئے جائیں گے فاضل بنچ نے اس موقع پر ہسپتال انتظامیہ کو متنبہ کیاکہ جولائی کے آخرتک اگر نیورو سرجری قائم نہ کیاگیاتو عدالت پھرخودکارروائی کرے گی ۔