بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / منتخب نمائندے اختیارات کی منتقلی کی روح کو سمجھیں ، پرویز خٹک

منتخب نمائندے اختیارات کی منتقلی کی روح کو سمجھیں ، پرویز خٹک


پشاور ۔ وزیراعلیٰ خیبر پختونخواپرویز خٹک نے کہا ہے کہ ہمار ا مقامی حکومتوں کا نظام دُنیا کے بہترین گورننس سسٹمز میں سے ایک ہے ۔ ہم نے مقامی حکومتوں کو مکمل اختیارات اور وسائل دیئے ہیں بعض معاملات میں مکمل خود مختاری دی ہے تاکہ وہ فیصلہ سازی خود کرسکیں۔ انہوں نے اس بات پرتاسف کا اظہار کیا کہ بعض ضلعی ناظمین اور نمائندوں کو ابھی تک اپنے اختیارات کا علم نہیں جس کو مفاد پرست پروپیگنڈے کے طور پر استعمال کرتے ہیں ۔ہم نے قانونی طور پر اختیارات دیئے ہیں جن کو سمجھنے کی ضرورت ہے اور ان کا استعمال ذمہ داری کے ساتھ ہونا چاہیئے ۔ منتخب نمائندے اختیارات کی منتقلی کی روح کو سمجھیں ۔

اپنے اختیارات سے شناسائی حاصل کریں اور عوامی فلاح میں ذمہ داری کے ساتھ استعمال کریں ۔کوئی اختیار بغیر ذمہ داری کے نہیں ہوتا۔وہ وزیراعلیٰ ہاؤس پشاو رمیں ملاکنڈ ڈویژن کے ضلعی ناظمین کے وفد سے گفتگو کررہے تھے۔صوبائی وزیر برائے کھیل وثقافت محمود خان بھی اس موقع پر موجود تھے۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ اس ملک کا المیہ رہا ہے کہ با اختیار لوگ اختیارات اپنے ہاتھوں سے جانے نہیں دیتے اگر ان سے کوئی اختیار لے لیا جائے تو آسمان سر پر اُٹھا لیتے ہیں کیونکہ یہاں اختیارات کی منتقلی کا کلچر ہی نہیں تھا ۔تحریک انصاف واحد سیاسی جماعت ہے جس نے اختیارا ت کو حقیقی معنوں میں نچلی سطح تک منتقل کیا ۔

ہم سمجھتے ہیں کہ عوامی مسائل ، تکالیف اور رکاوٹیں نچلی سطح پر ہوتی ہیں جن کا حل بھی مقامی سطح پر ہی ہونا چاہیئے ۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ امیر کو تو کبھی کوئی فکر نہیں رہی سٹیٹس کو کی قوتوں نے نظام میں اپنے پنجے گاڑھ رکھے ہیں سسٹم میں غریب عوام کا خون ہے اور یہ لوگ یہ خون چوس رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ہم نے سٹیٹس کو کی شدید مذاحمت کے باوجود بلدیاتی حکومت کا ایک قابل عمل اور بااختیار نظام متعارف کرایا ۔قانون سازی کے ذریعے اختیارات اور ذمہ داریوں کا تعین کیا ۔نظام میں شفافیت لائے اور بہترین طرز حکمرانی کی بنیاد رکھی ۔ ہم ضلعی حکومتوں کو اب تک 50 ارب روپے دے چکے ہیں اور یہ رقم صوبے کے ترقیاتی فنڈز سے دی گئی ہے ۔ جس کی وجہ سے صوبے کے ترقیاتی اور مالیاتی امور پر بوجھ بڑھا مگر ہم اس مشکل سے گھبرائے نہیں ۔

منزل کو پانے کیلئے رکاوٹوں اور مشکلات کو دور کرنا پڑتا ہے تب جا کر قانون کی حکمرانی ہوتی ہے اور عوام کو انصاف ملتا ہے اور ہم نے ایسا کرکے دکھا یا ۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ بلدیاتی نظام کو ابھی مزید توانا ہونا ہے جب ہم صوبے میں آئے توعوامی فلاح میں وسائل کے استعمال کے سلسلے میں بڑی رکاوٹیں تھیں۔کوئی اپنی من مانی چھوڑنے کیلئے تیار ہی نہیں تھا ۔ ہم نے عوام کے وسیع تر مفاد میں عوام دشمن مافیاز کا مقابلہ کیا اور ایک مربوط بلدیاتی نظام دیا ۔

انہوں نے منتخب عوامی نمائندوں پر زور دیا کہ وہ مقامی حکومتوں کے قیام کے پیچھے مقاصد اور اپنے اختیارات کو سمجھیں ۔ذمہ داری کا احساس پیدا کریں اور ایمانداری کے ساتھ عوامی فلاح میں اپنے اختیارات استعمال کریں ۔پرویز خٹک نے کہا کہ مقامی حکومتوں کو اپنے وسائل خود بھی پیدا کرنے چاہیں۔ ملاکنڈ میں نان کسٹم پیڈ گاڑیوں کی رجسٹریشن کا عمل خوش اسلوبی سے مکمل کرنا چاہئے تاکہ ہمارے پاس مکمل ریکارڈ ہو اور اس کا صیحح استعمال یقینی ہو سکے۔