بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / فاٹاانضمام سے ڈیورنڈلائن کا مسئلہ حل ہوگا ٗسراج الحق

فاٹاانضمام سے ڈیورنڈلائن کا مسئلہ حل ہوگا ٗسراج الحق


پشاور۔ امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ وفاقی حکومت کے تمام میگا پراجیکٹس میں خیبر پختونخوا کو محروم رکھا گیا ہے ٗ وزیر اعظم خود کو ایک صوبے تک محدود د نہ رکھیں و ہ پورے پاکستا ن کے وزیر اعظم بنیں اگر فنڈز کی منصفانہ تقسیم ہو تو پھر فاٹا بھی ترقی کریگا ٗ مرکزی حکومت نئے این ایف سی کے اجراء میں مخلص نہیں ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے پشاور میں میڈیا کے نمائندوں سے غیر رسمی بات چیت کر تے ہوئے کیا ۔

اس موقع پر جماعت اسلامی خیبر پختونخوا کے جنرل سیکرٹری عبد الواسع اورصوبائی سیکرٹری اطلاعات سید جماعت علی شاہ بھی موجود تھے سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ کا قبائلی علاقوں کا خیبر پختونخوا میں انضمام فاٹا کے عوام کا جائز مطالبہ ہے اگر حکومت نے فاٹا کو صوبہ میں ضم نہ کیا تو یہ فاٹا کے عوام کے ساتھ وعدہ خلافی ہوگی اور فاٹا کے عوام میں اشتعال پیدا ہوگا انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے سر تاج عزیز کی سر براہی میں کمیٹی بنائی جس نے یہ رپورٹ پیش کی کہ فاٹا کے عوام صوبہ میں انضمام چاہتے ہیں حکومت کم از کم اپنی بنائی ہوئی کمیٹی کی رپورٹ پر تو عمل در آمد کرائے انہوں نے کہا کہ افغانستان میں ایک ایسی لابی موجود ہے جو یہ نہیں چاہتی کہ ہمارے بارڈر کے مسائل حل ہوں ہمیشہ پاکستان مخالف قوتیں افغانستان اور پاکستان کے درمیان غلط فہمیاں پیدا کرنے کی کوشش کرتی ہیں اگر قبائلی علاقے خیبر پختونخوا کا حصہ بن جائیں تو ڈیورنڈ لائن کا مسئلہ بھی باقی نہیں رہے گا اور دونوں ممالک ترقی کی راہ پر گامزن ہو جائیں گے ۔

انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ حکومت اپنی مدت پوری کرے اور کسی طور سیاسی شہید نہ بنے الیکشن کے حوالہ سے ہمار مطالبہ ہے کہ صاف اور شفاف الیکشن کا جو طریقہ آئین بیان کرتا ہے اس پر من و عن عمل کیا جائے اور انتخابی دہشت گردی کا سد باب کیا جائے۔الیکشن ریفارمز یقینی ہو جائیں اور کرپشن سے پاک انتخابی عملہ ہو ٗپارٹیاں بھی ٹکٹ دینے سے پہلے یہ دیکھیں کا امید وا ر کا ماضی کیا ہے الیکشن کمیشن دفعہ 63,62 پر عمل در آمد کو یقینی بنائے ۔

سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ اسلامی ممالک میں جنگ کی جو بھٹی گرم کی جارہی ہے اس کا مقصد صرف اور صرف مغرب کے اسلحہ ساز کارخانوں کو رواں دواں رکھنا ٗ مسلمانوں کا سرمایہ لوٹنا اورمسلم امہ کی طاقت کو ناکارہ کرنا ہے پہلے صرف ڈرگ مافیا سرگرم تھا اب ساتھ ساتھ مغرب کا اسلحہ مافیا بھی سرگرم ہو چکا ہے افغان مسئلہ کے حل ان کے باہمی گفت و شنید میں پوشیدہ ہے۔