بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا کی جیلوں میں خواتین قیدیوں کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ

خیبر پختونخوا کی جیلوں میں خواتین قیدیوں کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ


پشاور۔خیبر پختونخوا کی جیلوں میں خواتین قیدیوں کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے۔ بیشتر خواتین منشیات اسمگلنگ کیس میں پابند سلاسل ہیں ۔ ان قیدیوں کو خواتین کے حقوق کے لئے کام کرنے والی تنظیموں کی جانب سے قانونی امداد نہیں مل رہی ہے ۔محکمہ جیل خانہ جات ذرائع کے مطابق صوبہ بھر کی جیلوں میں صوبہ کی پچیس جیلوں میں خواتین قیدیوں کی تعداد 300 سے زیادہ ہے جن میں زیادہ سینٹرل جیل پشاور میں ہے جہاں خواتین قیدی کی تعداد 110تک جاپہنچی ہے ۔ہری پور جیل میں خواتین قیدیوں کی تعداد 35، صوابی میں 20، ڈی آئی خان میں 25،ڈگر میں17 ،تیمر گرہ میں 20 اور کرک جیل میں13 خواتین پابند سلاسل ہیں ۔ان قیدی خواتین میں 70خواتین ایسی بھی ہیں جن کے جرم کی سزا انکے بچوں کو بھی کاٹنا پڑ رہی ہے ۔

ان سزا یافتہ قید خواتین کا ایک المیہ یہ بھی ہے کہ ان کو نہ صرف اپنے گھر والوں بلکہ خواتین کے حقوق کی علمبردار تنظیموں کی جانب سے بھی کسی قسم کی قانونی امداد فراہم نہیں کی جا رہی ہے۔خواتین قیدیوں سے ملاقات کے لیے آنے والی خواتین بھی جیل میں تلاشی کے عمل سے گزرنے کے باعث ان کے پاس آنے سے کتراتی ہیں۔دوسری جانب خواتین قیدیوں کو جیل میں طبی سہولیات سمیت کئی دیگر مسائل کا بھی سامنا ہے۔