بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا بجٹ میں 207 ارب کا ترقیاتی پروگرام شامل

خیبر پختونخوا بجٹ میں 207 ارب کا ترقیاتی پروگرام شامل

پشاور۔ خیبرپختونخوا کے نئے مالی سال 2017-18کے لئے 551 ارب سے ذائد کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا ۔صوبائی محاصل کا ٹارگٹ پورا نہ ہونے اور بجلی کے خالص منافع کی رقم بروقت نہ ملنے کے باعث حکومت کو بجٹ میں بھاری خسارے کا سامنا ہے اس سے قبل سول سیکرٹریٹ میں وزیر اعلیٰ کی صدارت میں صوبائی کابینہ کا خصوصی اجلاس منعقدہوگا جس میں نئے مالی سال کے بجٹ تجاویز اور فنانس بل کی منظوری لی جائے گی جس کے بعد وزیر خزانہ دو پہر دو بجے صوبائی اسمبلی میں نئے مالی سال کا بجٹ پیش کریں گے ۔رواں مالی سال حکومت نے 505ارب روپے کا بجٹ پیش کیا تھا جس میں موجودہ ٹیکسوں کی شرح میں روبدل کرکے 37 کروڑ روپے کے ٹیکس لگائے تھے ۔

اسی طرح رواں مالی سال کے ترقیاتی پروگرا م کا حجم 161ارب روپے تھا جس میں 36ارب روپے کا غیر ملکی امداد بھی شامل تھا ٗ سیکرٹریٹ ذرائع کے مطابق آئندہ مالی سال کے لئے بجٹ کا حجم 551 ارب سے زائد بتایا جاتا ہے جبکہ سالانہ ترقیاتی پروگرام کا حجم 207ارب روپے سے ذائد بتا یا جاتا ہے جس میں82ارب کی غیر ملکی امداد بھی شامل ہے اے ڈی پی میں سے 30 ارب روپے ضلعی حکومتو ں کو ملیں گے اسی طرح ٹیکسو ں میں ردو بدل اور بعض شعبو ں کو ٹیکس نیٹ میں لانے سے صو بائی خزانے کو 74کرو ڑ روپے کی آمد ن متوقع ہے۔

بتایا گیا ہے کہ پروفیشنل ٹیکس میں اضافے کے لئے محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسشن نے محکمہ خزانہ کو تجا ویز دی ہیں جو قومی اسمبلی کی طرف سے تجویز کر دہ آمدن کی حد سے ذائد تھیں ٗاسی لئے محکمہ خزانہ نے ان حدودکے اندر رہتے ہوئے ٹیکسو ں میں اضافہ تجویز کیا ہے ذرائع کے مطابق صو بائی محکمہ خزانہ نے الیکٹریکل کنٹریکٹر کے لائسنس کی فیس میں ردو بدل کی تجاویز تیار کی ہیں ٗان لائسنسوں کے اجراء کی فیس پانچ ہزار روپے مقر ر ہے جس پر توسیع کے لئے دو ہزار روپے وصول کئے جائیں گے ۔

نئی تجاویز کے تحت کلاس ای کے لئے اجراء کی فیس بارہ ہزار اور توسیع کے لئے پانچ ہزا ررو پے کی تجویز ہے ٗکلاس اے بی سی کے لائسنس کے اجرا ء کی فیس دس ہزار روپے اور توسیع کے لئے4 ہزار روپے تجویز کئے گئے ہیں اسی طرح محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسشن نے پراپرٹی ٹیکس کی شرح میں 100 فیصد اضافے کی تجویز دی تھی جس سے محکمہ خزانہ نے اتفاق نہ کر تے ہو ئے اسے پچاس فیصد تک کیا ہے اور پچاس فیصد اضافہ پشاور سمیت صو بے میں غیر منقولہ شہری جائیداد پر عائد ہو گا۔