بریکنگ نیوز
Home / انٹرنیشنل / برہان وانی کی پہلی برسی، مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال

برہان وانی کی پہلی برسی، مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال

سرینگر ۔ مقبوضہ کشمیر میں ممتاز نوجوان رہنما برہان مظفر وانی کی شہادت کی پہلی برسی پر مقبوضہ علاقے میں مکمل ہڑتال رہی۔ میڈیارپو رٹ کے مطابق ہڑتال شہید رہنما کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ایک ہفتے کے پروگراموں کا حصہ ہے جس کی کال سیدعلی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ مزاحمتی قیادت نے دی ہے۔ انہوں نے کشمیریوں سے تمام ضلع ہیڈکوارٹروں میں ریلیوں کے انعقاد کی بھی اپیل کی ۔ ایسی ہی ریلیاں دنیا بھر میں جہاں جہاں کشمیری آباد ہیں ، منعقد کی جائیں گی۔برہان مظفر وانی کو بھارتی فوجیوں نے گزشتہ برس 8جولائی کو ضلع اسلام آباد کے علاقے ککر ناگ میں ایک جعلی مقابلے میں شہید کر دیا تھا۔ ان کی شہادت کے فوراً بعد مقبوضہ علاقے میں عوامی انتفادہ شروع ہوگیا تھا جو اب تک جاری ہے۔

اس دوران بھارتی فوجیوں نے 156کشمیریوں کو شہید، 19 ہزار 4سو56کو زخمی جبکہ 3ہزار سے زائد کو بصارت سے محروم کر دیا۔انتظامیہ نے لوگوں کو احتجاج کیلئے سڑکوں پر نکلنے سے روکنے کیلئے بیس ہزار سے زائداضافی فوجیوں کو تعینات اور تمام بڑے قصبوں کی سڑکوں کو خار دارتاروں سے بلاک کردیاہے۔ موبائیل اور انٹرنیٹ سروسز بھی بند کر دی گئی ہیں۔ مقبوضہ علاقے ،خاص طورپر وسطیٰ اور جنوبی کشمیر کے اضلاع میں کرفیو اور دیگر پابندیاں عائد کر دی گئی ہیں۔ ترال جو کہ برہان وانی کا آبائی علاقہ ہے؂

میں ایک بڑی ریلی کو روکنے کے لیے سخت کرفیو نافذ کر دیاگیا ہے جبکہ قصبے کی طرف جانے والی تمام سڑکوں کی ناکہ بندی کر دی گئی ہے۔کشمیر یونیورسٹی میں ہونے والے امتحانات بھی ملتوی کردیئے ہیں۔ادھر پولیس نے رات گئے ترال شریف آباد میں واقع شہید برہان وانی کے گھر پر دھاوا بولا اور اہلخانہ کو سخت ہراساں کیا۔ دریں اثنا کٹھ پتلی انتظامیہ نے سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق ، محمد یاسین ملک ، شبیر احمد شاہ ، آغا سید حسن الموسوی الصفوی اور محمد اشرف صحرائی سمیت تمام حریت رہنماؤں کو ریلیوں کی قیادت سے روکنے کیلئے گھروں، تھانوں اور جیلوں میں منظربند کر رکھا ہیں ۔