بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / ‘زہریلی فروٹ چاٹ’ کھانےسے 3 بچیوں کی ہلاکت کا ڈراپ سین

‘زہریلی فروٹ چاٹ’ کھانےسے 3 بچیوں کی ہلاکت کا ڈراپ سین

سیالکوٹ: صوبہ پنجاب کے شہر سیالکوٹ میں ‘زہریلی فروٹ چاٹ’ کھانے کے باعث جاں بحق ہونے والی 3 معصوم بچیوں کے والدین نے تفتیش کے دوران اپنی بیٹیوں کو مبینہ طور پر زہر دینے کا اعتراف کرلیا۔

واضح رہے کہ رمضان المبارک میں سیالکوٹ کے علاقے نیکاپورہ کے رہائشی اردیم خان اور ان کی اہلیہ نادیہ بی بی نے مبینہ طور پر الزام عائد کیا تھا کہ ان کی بیٹیوں 3 سالہ زویا، 5 سالہ آمنہ اور 7 سالہ آیت نے ایک دکان سے فروٹ چاٹ خرید کر کھائی، جسے کھانے کے بعد ان کی موت واقع ہوگئی۔

تاہم پولیس کے مطابق شک کی بنیاد پر بچیوں کے والدین کو حراست میں لیا گیا، جنہوں نے جائیداد کے چکر میں اپنی بیٹیوں کو قتل کرنے کا اعتراف کرلیا۔

کیس کا پس منظر بتاتے ہوئے پولیس ذرائع نے بتایا کہ اردیم نے اپنی اہلیہ جمیلہ بیگم کی وفات کے بعد ان کی چھوٹی بہن نادیہ سے شادی کی، پولیس کو شبہ ہے کہ جوڑے نے جمیلہ بیگم کی جائیداد پر قبضہ کرنے کے لیے بچیوں کو قتل کیا۔

تاہم پولیس کے مطابق نادیہ نے اپنے اعترافی بیان میں بتایا کہ ان کی سوتیلی بیٹیاں ‘شوہر کے ساتھ ان کے تعلقات کے بیچ میں رکاوٹ تھیں’۔

پولیس نے نادیہ کے حوالے سے بتایا کہ انھوں نے 19 جون کو کھانے میں زہر ملایا اور اسے بچیوں کو کھلا دیا، جس سے ان کی موت واقع ہوگئی۔

اعترافی بیان کے بعد پولیس نے میاں بیوی کو تہرے قتل کے الزام میں گرفتار کرکے ان کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔

دوسری جانب بچیوں کی ہلاکت کے بعد فوڈ ڈپارٹمنٹ نے فروٹ چاٹ فروخت کرنے والی 2 دکانوں کو سیل کرکے نمونے فرانزک ٹیسٹ کے لیے بھجوائے تھے، جس کی رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی کہ ان میں کسی قسم کا زہر شامل نہیں تھا۔