بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا کے 3اضلاع کیلئے سماجی خدمات کا پراجیکٹ منظور

خیبر پختونخوا کے 3اضلاع کیلئے سماجی خدمات کا پراجیکٹ منظور

پشاور ۔ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے صوبے کے تین اضلاع پشاور،مردان اور ایبٹ آباد میں بہترین سماجی خدمات اور سہولیات کے پراجیکٹ کی منظوری دی ہے جوسی ڈی آئی اے ڈیزائن کرے گا۔ان اضلاع میں سماجی خدمات کو اپ گریڈ کیا جائے گااورایشین ڈویلپمنٹ بینک اپ گریڈیشن کے مجموعی عمل میں شراکت دار ہو گا ۔اس سلسلے میں وزیراعلیٰ پرویز خٹک کی زیر صدارت وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں اہم اجلاس منعقد ہو اجس میں اربن گروتھ پروگرام کیلئے مربوط ترقیاتی حکمت عملی سمیت مذکورہ تین شہروں میں بہترین سماجی خدمات اور سہولیات بشمول ، پینے کے صاف پانی کی فراہمی ، سالڈ ویسٹ مینجمنٹ ، کمیونٹی موبلائزیشن یونٹ کے قیام ، فنی و تربیتی معاونت ، شراکتی منصوبہ بندی اور ادارہ جاتی اصلاحات پر تبادلہ خیا ل کیا گیا۔

سینئر صوبائی وزیر برائے بلدیات عنایت اﷲ خان، ایڈیشنل چیف سیکرٹری اعظم خان، متعلقہ محکموں کے انتظامی سیکرٹریوں ، ضلع ناظم پشاور ارباب عاصم ، مردان اور ایبٹ آباد کے ڈپٹی کمشنر زاور دیگر اعلیٰ حکام نے اجلاس میں شرکت کی ۔اجلاس کو پشاور ، مردان اور ایبٹ آباد میں سماجی خدمات کی بہترین سہولیات کیلئے سی ڈی آئی اے کے پلان پر بریفینگ دی گئی جس کے تحت سی ڈی آئی اے انفراسٹرکچر ، انوسٹمنٹ ، منصوبے کے نفاذ اور اس کی آپریشنل مینٹیننس پر فوکس کرے گا۔ شرکاء کو سی ڈی آئی اے کے کام ، پلاننگ ، اُس کی مر بوط حکمت عملی ، انفراسٹرکچر انوسٹمنٹ کے براہ راست سماجی اور ماحولیاتی فوائد کے حوالے سے بھی بریف کیا گیا ۔

پورے اربن گروتھ پروگرام کے تحت ایبٹ آباد کیلئے 121 ملین ڈالر ، مردان کیلئے 121 ملین ڈالر اورپشاور کیلئے 294 ملین ڈالر درکار ہوں گے جو واٹر سپلائی ، سالڈ ویسٹ مینجمنٹ ، سیوریج ، ٹرانسپورٹ وغیرہ کیلئے مختص کئے جاسکیں گے ۔پروگرام کے پہلے مرحلے میں منصوبے پر 128 ملین ڈالر لاگت آئے گی جس میں سے 100 ملین ڈالر ایشین ڈویلپمنٹ بینک جبکہ 28 ملین ڈالر صوبائی حکومت فراہم کرے گی ۔

مذکورہ تین اضلا ع کے سماجی شعبوں میں ضرورت کی بنیاد پر سہولیات کی تخلیق ، آپریشنل سٹاف کی استعداد کار میں اضافہ ،منصوبے پر عمل درآمد کے پلان اور ا س کو استعمال اور دیرپا بنانے کیلئے شہریوں کے رویے میں تبدیلی جیسے اُمور بھی زیر بحث آئے ۔وزیراعلیٰ نے صوبے کے تین اضلاع کے سماجی شعبوں میں اپ گریڈڈ سہولیات کیلئے منصوبے کے بنیادی تصور سے اتفاق کیااور منصوبے پر عمل درآمد کیلئے مالی ضروریات ، منصوبہ بندی اور دیگر اُمور کو حتمی شکل دینے کی ہدایت کی ۔انہوں نے منصوبے کو قابل عمل اور دیرپا بنانے کیلئے اس کی مزید تفصیلات طلب کیں۔

انہوں نے کہاکہ حکومت ان سہولیات کی فراہمی کیلئے وسائل خرچ کرے گی تاہم ان سہولیات کو مستقبل میں جاری رکھنے اور دیرپا بنانے کیلئے ان سے استفادہ کرنے والے عوام کے رویے میں تبدیلی ناگزیر ہے تاکہ وہ سہولیات کے حصول کے عوض ادائیگی کیلئے تیار ہوں ۔ انہوں نے محکمہ منصوبہ بندی و ترقیات کو ہدایت کی کہ اس منصوبے پر مناسب فورم پر بات کریں کیونکہ وہ پہلے سے ہی اس منصوبے کیلئے گرین سگنل دے چکے ہیں ۔انہوں نے محکمہ بلدیات اور متعلقہ ضلعی حکومتوں کو آپس میں رابطہ رکھنے کی ہدایت کی تاکہ منصوبے پر عمل درآمد یقینی بنایا جا سکے۔