بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / چوکوں اور چوراہوں میں خواتین کا تذکرہ کلچر نہیں‘ سراج الحق

چوکوں اور چوراہوں میں خواتین کا تذکرہ کلچر نہیں‘ سراج الحق

لاہور ۔ امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ حقیقی جمہوریت کے لئے اداروں کی بالادستی ہونی چاہئے ۔سیاست میں شائستگی ہونی چاہئے ۔ چوکوں اور چوراہوں میں خواتین کا تذکرہ ہمارا کلچر نہیں ۔ اوورسیز پاکستانیوں کا ووٹ سچی قیادت آگے لانے میں معاون ہو گا ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں جماعت اسلامی کے مرکز منصورہ میں اپنے خطاب کے دوران کیا ۔ امیر جماعت اسلامی نے کہا ہے کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دیا جائے ۔ بیرون ملک ووٹرز تھانے داروں اور چوہدھریوں کے دباؤ سے آزاد ہیں اس لئے اوورسیز پاکستانیوں کے ووٹ سے ملک میں سچی اور ایماندار قیادت کا چناؤ آسان ہو گا ۔ بیرون ملک جانے والے حکمران اپنے کاروبار کو ترجیح دیتے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ بیرون ملک پاکستانی سفارتخانوں کو فعال ہونا چاہئے ۔ سفارتخانے ہونے کے باوجود بیرون ملک پاکستانی بے یارومددگار ہیں ۔ سفارتی عملہ ٹیلیفون سننا بھی گوارہ نہیں کرتا ۔ پاکستان کی معیست کی بہتری میں اوورسیز پاکستانیوں کا ہاتھ ہے مگر موجوودہ اور سابقہ حکومتوں نے اوورسیز کے لئے کوئی پالیسی نہیں بنائی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ جماعت اسلامی کرپشن فری مہم کے ملک میں چرچے ہیں اب بھی یہی مطالبہ ہے کہ حزب اختلاف اور حزب اقتدار سب کا احتساب ہونا چاہئے ۔

پانامہ لیکس میں 436 افراد کا نام ہے جن کے خلاف وکلاء کی مشاورت کے بعد سپریم کورٹ میں جائیں گے ۔ غلط معاشی پالیسیوں کی وجہ سے ورلڈ بنک کی زنجیروں میں جکڑے ہوئے ہیں لوٹا گیا یا باہر رکھا گیا پیسہ واپس لایا جائے تو قرضوں سے نجات مل سکتی ہے اور ملک میں کرپشن ختم ہونے سے بیرون ملک سے زرمبادلہ کا اضافہ ہو سکتا ہے لیکن یہاں نہ تو کوئی جمہوریت ہے اور نہ ہی اداروں کا وقار اور یہاں کی جمہورتی چند خاندانوں کے ہاتھوں یرغمال ہے اور وہ جمہوریت کے نام پر اداروں کو تباہ و برباد کر رہے ہیں ۔