بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / بھارت افغان سر زمین پاکستان کیخلاف استعمال کر رہا ہے ٗ نفیس ذکریا

بھارت افغان سر زمین پاکستان کیخلاف استعمال کر رہا ہے ٗ نفیس ذکریا

اسلام آ باد۔ ترجمان دفتر خارجہ نفیس ذکریا نے کہاہے کہ عالمی برادری مقبوضہ کشمیر میں معصوم کشمیریوں کا قتل عام روکنے میں ناکام ہو گئی ہے،مقبوضہ کشمیر میں معصوم لو گوں پرجاری مسلسل بھارتی مظالم اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں عالمی برادری کی انسانی حقوق کی ذمہ داریوں کے حوالے سے ساکھ کے لئے چیلنج ہے۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا سلسلہ جاری ہے اور کشمیریوں کا قتل عام جاری ہے، رواں ہفتے پندرہ معصوم کشمیری شہید کردئے گئے ہیں، بھارت ممکنہ رائے شماری کے نتائج پر اثر انداز ہونا چاہتا ہے۔

بھارت کشمیر میں آبادی کا تناسب بدلنا چاہتا ہے۔عالمی برادری بھارتی ہتھکنڈوں کا نوٹس لے پاکستان دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پرعزم ہے ،افغان مسئلے کا حل مذاکرات میں ہے، پاکستان چار دہائیوں سے لاکھوں افغان مہاجرین کی میزبانی کررہا ہے۔کسی افغان مہاجر کو زبردستی افغانستان واپس نہیں بھجوایا۔

افغان مہاجرین کی انکی مرضی سے باعزت وطن واپسی چاہتے ہیں۔ جمعرات کو ترجمان دفتر خارجہ نفیس ذکریا نے ہفتہ وار میڈیا بریفنگ دیتے ہوئے کہاکہ نئے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے چارج سنبھال کیا۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا سلسلہ جاری ہے اور روزانہ لوگوں کو قتل کیا جارہا ہے ۔

رواں ہفتے پندرہ معصوم کشمیری شہید کردئے گئے جن میں اکثریت نوجوانوں کی ہے۔ ۔عالمی برادری معصوم کشمیریوں کا قتل عام روکنے میں ناکام ہے۔مقبوضہ کشمیر میں جاری بلا رکاوٹ مسلسل بھارتی مظالم اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں عالمی برادری کی انسانی حقوق کی ذمہ داریوں کے حوالے سے ساکھ کے لئے چیلینج ہے۔

بھارت مقبوضہ کشمیر میں اکثریتی مسلم علاقوں کو اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتا ہے ۔بھارت مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل کرے ۔ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف بے بہا قربانیاں دیں۔بھارت پاکستان میں دہشت گردی پھیلا رہا ہے۔

پاکستان دہشت گردی کے خاتمے کیلئے پرعزم ہے ۔ امریکہ افغانستان بارے اپنی پالیسی کا ازسر نو جائزہ لے رہا ہے۔افغان مسئلے کا حل مذاکرات میں ہے۔حزب اسلامی کے ساتھ افغان حکومت کے مذاکرات کا خیر مقدم کیا تھا۔

طالبان سمیت تمام متحارب گروہوں کے ساتھ مذاکرات ہونے چاہیں ۔ پاکستان چار دہائیوں سے لاکھوں افغان مہاجرین کی میزبانی کررہا ہے۔کسی افغان مہاجر کو زبردستی افغانستان واپس نہیں بھجوایا۔افغان مہاجرین کی انکی مرضی سے باعزت وطن واپسی چاہتے ہیں۔دہشت گردوں کے خلاف بلاتفریق کارروائی کررہے ہیں۔

دنیا نے ہماری دہشت گردی کے حوالے سے کاوشوں کو سراہا ہے۔ بھارت افغانستان کی سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال کر رہا ہے۔افغانستان کے ساتھ یہ معاملہ متعدد مرتبہ اٹھایا ہے۔

امریکہ کے سامنے بھی افغان سرزمین کے پاکستان کے خلاف استعمال کا معاملہ رکھا گیا ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کشمیر کے حوالے سے اقوام متحدہ کی قراردادوں کو ستر سال کا عرصہ گزر چکا۔

بھارت ممکنہ رائے شماری کے نتائج پر اثر انداز ہونا چاہتا ہے۔بھارت کشمیر میں آبادی کا تناسب بدلنا چاہتا ہے۔عالمی برادری بھارتی ہتھکنڈوں کا نوٹس لے ۔ انہوں نے کہاکہ سی پیک پلاننگ کمیشن دیکھ رہا ہے۔اس میں مرحلہ وار کام ہو رہا ہے۔ 2018میں پہلا مرحلہ مکمل ہوگا ۔اس میں توانائی کے منصوبے شامل ہیں

۔ 1602017میں ایل او سی کی خلاف ورزی 500 سے زائد مرتبہ کی گئی۔ بھارت کی ایک چال ہے کہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی سے دنیا کی نظر ہٹائی جا سکے۔ بھارت چاہتا کہ ایل او سی پر فائرنگ کر کی ثابت کر سکے کہ سرحد پار سے دراندازی ہو رہی ہے۔جب کہ حقیقت میں بھارت کشمیریوں کو مار رہا ہے۔

2006 میں اجتماعی قبریں ملی تھیں جن میں سینکڑوں کشمیری دفن تھے. ڈی ین اے ٹیسٹ سے پتہ چلا کہ یہ تمام مقامی کشمیری ہیں۔