بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / زراعت میں خود کفالت کیلئے قانون سازی کا عندیہ 

زراعت میں خود کفالت کیلئے قانون سازی کا عندیہ 

پشاور:زرعی زمین کو زراعت کے علاوہ دوسرے مقاصد جیسے رہائشی مکانات (کالونیاں) اور تجارت کے استعمال سے روکنے کیلئے مؤثر قانون سازی کی جائے گی تاکہ آئے روز گھٹتی ہوئی زرعی زمین کو روکا جائے۔ صوبے کی زرعی زمین کو زراعت کے علاوہ دوسرے مقاصد کے استعمال کو روکنے کیلئے خصوصی منصوبہ بندی کیلئے اعلی سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے صوبائی وزیرزراعت سردار اکرام اﷲ خان گنڈاپور نے بتایا کہ ایک طرف ہماری آبادی تیزی کیساتھ بڑھتی چلی جارہی ہے جبکہ دوسری طرف ہم اپنی قیمتی زرخیز زمینیں غیر زرعی مقاصد کے لئے استعمال میں لا رہے ہیں ۔

علاوہ ازیں تقسیم در تقسیم کی وجہ سے بتدریج ہماری زرعی اراضی گھٹ رہی ہے۔ صوبائی حکومت سارے سٹیک ہولڈرز کے اشتراک سے زرعی زمینوں کے غیر زرعی مقاصد کے لئے استعمال کی روک تھام کیلئے مشترکہ لائحہ عمل طے کرے گی۔ قانون سازی کے ذریعے اس بات کو یقینی بنایاجائیگا کہ مجاز اتھارٹی کے این او سی کے بغیر زرعی زمین کو زراعت کے علاوہ دیگر کاموں کیلئے استعمال نہیں کیا جائے گا۔ اجلاس میں سیکرٹری زراعت و امور حیوانات و امداد باہمی محمد اسرارکے علاوہ محکمہ ہائے بلدیات، ریونیو ، پی اینڈ ڈی اور قانون کے خصوصی نمائندگان اور محکمہ زراعت کے مختلف شعبہ جات کے سربراہاں نے بھی شرکت کی۔

اجلاس میں یہ تجویز بھی رکھی گئی کہ زرعی اراضی کے دوسرے مقاصد کے لئے استعمال کی صورت میں استعمال کنندہ کو مشروط اجازت صرف اسی صورت میں دی جائیگی جب وہ قابل کاشت رقبہ کے مقابلے میں کسی دوسرے ٹکڑا اراضی کو قابل کاشت بنا کر زرعی استعمال میں لائیگا۔ سیکرٹری زراعت نے اجلاس کو بتایا کہ اپنی خوراکی ضروریات کو مدنظر رکھتے ہوئے اپنے قدرتی وسائل جس میں زمین، پانی وغیرہ شامل ہیں کے تخفظ کو یقینی بنائیں۔ زرعی زمینوں کو مزید گھٹنے سے محفوظ بنانے کیلئے تمام چیلنجز کا مقابلہ کرنا ہو گا تاکہ اپنے صوبے کو زرعی خود کفالت کی جانب لے جا سکیں۔