بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / رجسٹریشن کیلئے آنیوالے افغان مہاجرین کی سکریننگ سخت

رجسٹریشن کیلئے آنیوالے افغان مہاجرین کی سکریننگ سخت

اسلام آباد ۔وزیر خارجہ خواجہ محمد آصف کی جانب سے افغان مہاجرین کے دہشت گردی اور دیگر جرائم میں ملوث ہونے کے بیان کے بعد افغان کمشنریٹ بھی متحرک ہوگیا ہے۔ رجسٹریشن کیلئے آنے والے مشکوک افغان مہاجرین کا کریمنل ریکارڈ بھی چیک کیا جانے لگا ہے۔ ذرائع کے مطابق وزیر خارجہ خواجہ آصف کے بیان کے بعد ملک بھر میں افغان کمشنریٹ حکام نے افغان مہاجرین کی رجسٹریشن کے ساتھ ساتھ ان کا کریمنل ریکارڈ بھی چیک کرنا شروع کردیا ہے۔

اس حوالے سے افغان کمشنریٹ حکام نے اپنے اپنے شہروں میں پولیس تھانوں سے رابطے کرلیے ہیں۔ جہاں سے انہیں کریمنل ریکارڈ ہونے کی صورت میں افغان مہاجرین کے خلاف کارروائی میں آسانی پیدا ہوگی۔ افغان کمشنریٹ اسلام آباد کے ایک سینئر آفیسر نے بتایا کہ کریمنل ریکارڈ یا کسی قسم کی معلومات ملنے پر اس شہر کا کمشنریٹ ہمیں مطلع کرتا ہے جس کے بعد ہم ان کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لاتے ہیں تاہم رجسٹریشن کا عمل اب 16 اگست سے شروع ہے اب اس عمل کو تیز کردیا گیا ہے تاکہ کسی بھی قسم کے ناخوشگوار واعات سے بچا جاسکے۔ ماضی میں افغان مہاجرین کے جرائم اور دہشت گردی میں ملوث ہونے کے متعدد واقعات سامنے آئے ہیں۔

اس لئے اب اس کی مزید سخت نگرانی شروع کردی گئی ہے۔ رجسٹریشن کے عمل کے بعد جرائم پیشہ عناصر تک قانون نافذ کرنے والے اداروں کو آسانی سے رسائی حاصل ہوجائے گی۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ مختلف شہروں میں افغان کمشنریٹ کو افغان مہاجرین کا ڈیٹا حاصل کرنے میں کئی قسم کی مشکلات پیش آرہی ہیں۔ واضح رہے کہ وزیر خارجہ خواجہ آصف نے چند روز قبل اپنے بیان میں کہا تھا کہ پاکستان میں دہشت گردی میں افغان مہاجرین بھی ملوث ہیں۔ جس کے بعد افغان کمشنریٹ ملک بھر میں حرکت میں آگئے ہیں یاد رہے کہ افغان مہاجرین کی پاکستان میں بے دخلی میں ناکام کے بعد حکومت نے غیر قانونی طور پر پاکستان میں رہائش پذیر افغان مہاجرین کی رجسٹریشن کا عمل 16 اگست سے شروع کر رکھا ہے۔ جس میں نادرا‘ افغان کمشنریٹ ‘ وزارت سیفران اور افغانستان کی وزارت افغان مہاجرین مل کر کام کررہے ہیں۔