بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / این اے فور پر تاحال کس پارٹی کا پلہ بھاری

این اے فور پر تاحال کس پارٹی کا پلہ بھاری

پشاور۔پی ٹی آئی کے گلزا ر خان وفات سے خالی ہونے والی نشست پر ضمنی الیکشن کیلئے اگلے ہفتہ شیڈول جاری ہونے کاامکان ہے ماضی میں یہ حلقہ عوامی نیشنل پارٹی کاگڑھ رہاہے 1988سے لے کر 2013ء کے تک ہونے والے سات انتخابات میں سے اس نشست پر چار بار اے ا ین پی اور ایک ایک بار پی پی پی،ایم ایم اے اورپی ٹی آئی کو کامیابی ملی ضمنی الیکشن میں بھی کانٹے دار مقابلہ متوقع ہے ارباب ظاہر کو اس حلقہ سے تین با ر منتخب ہونے کااعزاز حاصل ہے1988ء میں جب طویل عرصہ بعدجماعتی بنیادوں پر الیکشن ہوئے تو یہ اس وقت این تھری کہلاتاتھا الیکشن میں پی پی پی کے سردار علی خان نے اے این پی کے عبدالطیف آفریدی کو شکست سے دوچارکیاتھا 1990اور1993ء میں اس حلقہ سے اے این پی کے ارباب محمد ظاہرخان دومرتبہ کامیابی سے ہمکنا رہوئے تھے۔

پہلی بار انہوں نے عبدالطیف آفرید ی اور دوسری بار سردارعلی خان کو شکست دی تھی 1997ء میں بھی یہ حلقہ اے این پی کے نام رہا اورا س بار اربا ب سعداللہ خان فاتح ٹھہرے تھے پی پی پی کے سردارعلی پھر شکست کھاگئے 2002کے انتخابات میں یہ قومی اسمبلی کاحلقہ چاربن گیا اور ایم ایم اے کے صابر حسین اعوان نے فتح حاصل کی تھی ارباب ظاہر دوسرے نمبرپررہے تاہم 2008ء میں ارباب ظاہرنے تیسر ی بار یہ نشست اپنے نام کرلی پی پی پی کے اعظم آفریدی اور مسلم لیگ کے امیر مقام ہارگئے تھے 2013ء کے انتخابات میں فتح پی ٹی آئی کے گلزار خان کے حصہ میں آئی ن لیگ کے ناصر موسیٰ زئی دوسرے نمبرپر رہے گذشتہ انتخابات میں گلزار خان نے حلقہ کے ریکارڈ ووٹ لے کرکامیابی حاصل کی تھی گلزا ر خان نے الیکشن میں 55134ووٹ حاصل کیے تھے جبکہ ن لیگ کے ناصر خان موسیٰ زئی 20412ووٹ لے کر دوسرے نمبر پررہے۔

،جماعت اسلامی کے صابر حسین اعوان نے 16493ووٹ حاصل کیے چاربار فاتح اے این پی کے امیدوار سابق صوبائی وزیر اربا ب ایو ب جا ن تھے جنہوں نے 15795ووٹ حاصل کیے جے یو آئی کے امیدوار نے 12519ووٹوں کے ساتھ پانچویں جبکہ پی پی پی کے امیدوارنے 12013ووٹوں کے ساتھ چھٹی پوزیشن حاصل کی ۔ اس کے علاوہ صوبہ میں عام انتخابات کے بعدقومی اسمبلی کے لیے اب تک چھ ضمنی الیکشن ہوچکے ہیں جن میں سے چار انتخابات میں حکمران جماعت پی ٹی آئی نے کامیابی حاصل کی جبکہ ایک ایک نشست اے این پی اورن لیگ نے اپنے نام کی 22اگست 2013کو صوبہ میں قومی اسمبلی کی خالی ہونے والی چار نشستوں کے لیے ضمنی انتخابات ہوئے جن میں سے این اے ون پر اے این پی کے حاجی غلام احمد بلور نے کامیابی حاصل کی جبکہ این اے پانچ پرعمران خٹک ،این تیرہ پر عاقب اللہ خان اور این اے ستائیس پر امیر اللہ مروت نے کامیابی حاصل کی تینوں کاتعلق پی ٹی آئی سے ہے بعد ازاں 18ستمبر 2013کو قومی اسمبلی کے حلقہ پچیس ٹانک کے لیے ہونے والے ضمنی الیکشن میں بھی میدان پی ٹی آئی کے ہاتھ رہا صوبہ میں قومی اسمبلی کاآخری ضمنی الیکشن 16اگست 2015ء کو ہوا جس میں مسلم لیگ ن کے بابر نوازخان نے پی ٹی آئی کو شکست سے دوچار کیااب این اے چار پر ساتویں ضمنی الیکشن ہورہے ہیں اوردیکھنا یہ ہے کہ میدان کس کے ہاتھ رہتاہے ۔