بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا کی ترقی کیلئے 62پراجیکٹس کی منظوری

خیبر پختونخوا کی ترقی کیلئے 62پراجیکٹس کی منظوری

پشاور ۔ صوبائی ترقیاتی ورکنگ پارٹی(PDWP) نے36774.761ملین روپے لاگت کے62پراجیکٹس کی منظوری دے دی ہے۔ یہ منظوری ایڈیشنل چیف سیکرٹری محمد اعظم خان کی زیر صدارت جمعہ کے روزمنعقدہ پی ڈی بلیو پی کے اجلاس میں دی گئی جس میں صوبے کی ترقی کیلئے مختلف شعبوں بشمول سڑکوں اور پلوں،بلڈنگDWSSشہری ترقی،زراعت،جنگلات،بلدیات،ایم ایس ڈی،اعلیٰ تعلیم،ابتدائی و ثانوی تعلیم،کھیل و ثقافت،صحت،پانی،صنعت،معدنیات و معدنی ترقی،سائنس و ٹیکنالوجی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی،قانون اور خزانہ کے شعبوں سے متعلق84منصوبوں پر تفصیلی غور و خوض کے بعد62منصوبوں کی منظوری جبکہ 22پراجیٹس کو غیر موزوں ڈیزائن کے باعث ملتوی کر دیاگیا۔تفصیلات کے مطابق سڑکوں اور پلوں کے شعبے میں ضلع ڈی آئی خان میں چوھدواں سے گٹار سے جندی بابرسے مارومین روڈ(یو سی چوھدواں) سڑکوں کی تعمیر اورموسی زئی شریف سے کوٹ شاہ نواز سے گارا میر عالم سے گارا عیسیٰ خان (یو سی موسٰی زئی شریف) سڑکوں کی تعمیر ،کلاچی ڈی آئی خان دربند روڈ، ساگر سے مدی براستہ گاڑا انٹرا اتل شریف16کلومیٹر روڈ کی تعمیر،ڈیزائن اور فیزایبلٹی سٹڈی،ضلع ڈی آئی خان میں ٹانک اڈا سے ظفر آباد کالونی،ٹانک اڈا سے دربن چونگی سڑکوں کی تعمیر و بحالی سرکولر روڈ سے مریالی موڑ،شاہ عالم آباد روڈ،ہسپتال روڈ،چشمہ روڈ سے موضع جات سنگار شیخ یوسف آباد روڈ سڑکوں کی تعمیر و بحالی،پی کے17میں سڑکوں کی تعمیر، ملی پمپ نوشہرہ سے ستی آباد یوسی میرا بانگ205 کلو میٹر سڑک نوشہرہ سے کورونہ یو سی ڈھیری زردار تک دو کلو میٹر سڑک،پڑانگ مجوکئے سے فقیر آباد مجوکئے ایم سیIIضلع چارسدہ2.5کلو میٹر سڑک کی تعمیر،چمکنی سے پی اے ایف کیمپ بڈھ بیر ضلع پشاور تک سڑک کی بحالی،پی کے10ضلع پشاور میں اندرونی سڑکوں کی تعمیر،پی کے35ضلع صوابی میں 10کلو میٹر سڑک کی تعمیر،تورڈھیر ضلع صوابی میں کرنل شیر انٹر چینج سے جہانگیرہ صوابی روڈ تک روڈ کی تعمیر،صوابی انٹر چینج سے صوابی یونیورسٹی (نیاکیمپس) صوابی تک پانچ کلو میٹر سڑک اور اس کے نکاسی آب کے نالوں کی تعمیر،ضلع نوشہرہ میں آرمی کیمپ کورونہ سرتاج آباد اکوڑہ خٹک ایک کلو میٹر روڈ کی تعمیر،نوشہرہ صدر میں کشتی پل میں دریائے کابل پر آر سی سی پل کی فیزابیلٹی سٹڈی،ڈیزائن اور تعمیر،ہری پور میں یو سی وسطی،جنوبی و شمالی ریحانہ،شاہ مقصود علی خان،درویش،پنڈک،منکرئی،پنڈ ہاشم خان،سرائے صالح،سرائے نعمت خان اور سکندر پورہ کی اندرونی سڑکوں کی تعمیر،ضلع نوشہرہ میں انزری سے حسار تنگ اور شیدو خوڑ سے شنواری کورونہ براستہ عید گاہ ضلع نوشہرہ کی تعمیراور بحالی،’’ضلع نوشہرہ میں دریائے کابل پر محب بانڈہ،پشتون گڑھی پر رائٹ بنک اور خویشگی میں لفٹ بنک پر ملانے والے پل کی تعمیر ڈیزائن اور فیزیبلٹی سٹڈی،ضلع نوشہرہ میں جی ٹی روڈ سے سڑکوں کی فیزیبلٹی سٹڈی،ڈیزائن اور تعمیر و بحالی بشمول جی ٹی روڈ سے سید اکبر کورونہ،ایوب آباد سے عیسوری بالا، جہانگیرہ کٹی میانہ،پتاؤ پایاں سے موضع درگئی،جی ٹی روڈ خوڑ محلہ شین باغ کورونہ،ضلع نوشہرہ میں سڑکوں کی تعمیر و بحالی ،ڈیزائن اور فیزیبلٹی سٹڈی،گجو خیل امیرو روڈ ،جبی روڈ پیران بالا و پایاں،دوران مسم خیل براستہ ملک خیل بالا و پایاں کی تعمیر،بحالی،ڈیزائن اور فیزیبلٹی سٹڈی، ضلع نوشہرہ میں جہانگیرہ بائی پاس اور نظام پور روڈ سے موضع چھرپنی سڑک کی تعمیر و بحالی،خیر آباد تا مندو خیل گاؤں ،کیمپ کورونہ یوسف آباد،اکوڑہ ،آدم زئی تا مہمند گڑھی،جہانگیرہ چوک سے ریلوے سٹیشن تک 10کلو میٹر سڑک کی فیزیبلٹی سڈٹی ،ڈیزائن تعمیر و بحالی،ضلع نوشہرہ میں ڈاگ اسماعیل خیل،شاہ کورٹ،ڈاگ بیسود،بالو سپن خاک اور جلوزئی میں اندورونی سڑکوں کی تعمیر اور گلیوں کو پختہ بنانے،نکاسی کے نالوں کی تعمیر ،ضلع نوشہرہ میں بختئی کوٹلی خورد کوٹلی کلاں روڈ؍آئی سی پلوں،چراٹ روڈ سے سپن خاک گاؤں،سپن خاک سڑکوں و پلوں کی تعمیر اور فیزابیلٹی سٹڈی،ضلع نوشہرہ میں خویشگی بالا اور پایاں میں 16کلو میٹر اندرونی سڑکوں کی بہتری ،پختہ بنانے ، ڈیزائن اور فیزابیلٹی سٹڈی کے منصوبے شامل ہیں۔اس کے علاوہ ضلع ہری پور یو سی سرائے صالح،شاہ مقصود،ریحانہ،علی خان،درویش،پنڈ ہاشم خان،یو سی جنوبی اور پنڈ ک کی سڑکوں اور گلیوں کی مرمت،دیر بالا میں سواسہر قصئی،گلی باغ اور سرو منزئی میں آر سی سی پلوں کی تعمیر،ضلع کرک کی تحصیل بانڈہ دادوشاہ میں ٹیری سے کوٹ بانڈہ تک سڑکوں کی تعمیر اور انہیں پختہ بنانے،ضلع شانگلہ میں کروڑ ا سے اجمیر12کلو میٹرروڈ کی بحالی،ضلع ایبٹ آباد میں بنگارہ ملکوٹ سے خان دانا پانچ کلو میٹر روڈ کی تعمیر،پی کے46میں 25کلو میٹر مختلف سڑکوں کی تعمیرBT/PCC،بہتری،بحالی اور توسیع،بنوں میں بنوں شہر سے ککئی براستہ مندیاں پانچ کلو میٹر سڑکوں کی تعمیر،ڈیزائن اور فیزابیلٹی سٹڈی،ضلع چارسدہ میں یونین کونسلز شیر پاؤ،زیام،ابازئی،کتوزئی بٹگرام، کانگڑا،دولت پورہ،حسن زئی،مرزا ڈھیر،تنگی،مندانی اور نستہ میں سڑکوں،پی سی سی روڈز کے ساتھ،نکاسی کے نالوں،حفاظتی دیواربنانا،سڑکوں،بریم سے نذر آباد،ائیر پورٹ لم ڈھیرہ،گورہ تنگئی شاہ، طوطانوبانڈئی ،تنگی شینہ،سگرام،مہک،نارنگ پورہ،وینئی،اوچرئی روڈ اور سجبان۔سپردار سڑکوں کی تعمیر اور پختہ بنانا،سوات میں روڈ کالاکلے،نصرت چوک روڈ،جیگا تنگ بنڑ،باڑہ بنڈ غوریجوئی،شور گٹ روڈ کی دوبارہ تعمیر، تحصیل مٹہ ضلع سوات گیارہ کلو میٹر مختلف سڑکوں کی تعمیر،23کلو میٹر ہری پور بائی پاس روڈ کی تعمیر،ضلع دیر بالا میں حتن درہ روڈ کی بحالی،پختہ بنانا،بہتری،ڈیزائن اور فیزابیلٹی سٹڈی،سمنگ گلواڑئی درہ اور شعور میں پی سی سی سڑکوں کی تعمیر، ضلع دیر بالا میں اشیرئی درہ اور اس کے مسنگ لنکس کی تعمیر،توسیع اور پختہ بنانا،بریکوٹ ضلع سوات میں دو کلو میٹر بائی پاس روڈ کی تعمیر اور ضلع دیر لوئرمیں روڈ بخت بلندہ ،اتک،نگرئی پائیں،پنگرل شتی چنار،کانو گمبٹ کٹی اور ظوئل بابا حاجی آباد روڈ اسیلو کی بحالی اور تعمیر کے منصوبے شامل ہیں۔بلڈنگ سیکٹر کے منظور شدہ منصوبے میں سی اینڈ ڈبلیو ڈیپارٹمنٹ میں CSR/MRS سیل کا قیام جبکہ ڈی ڈبلیو ایس ایس سیکٹر کے منظور شدہ منصوبے میں ڈبلیو ایس ایس کی سکیمیں اور پی کے۔40ضلع کرک میں کام کی تقسیم کے منصوبے شامل ہیں۔زراعت کے شعبے کے منظور شدہ منصوبے میں خیبر پختونخوامیں واٹرکورسز کی دیکھ بھال ،زرعی زمین کے تحفظ اورفوڈ سیکیورٹی کیلئے پانی کے ذرائع کو بہتر بنانا، خیبر پختونخوا میں واٹر ریسورسز کے تحفظ اور ترتیب دینا اور واٹر سٹوریج ٹینک کی تعمیر شامل ہے۔ جنگلات کے شعبے کے منظور شدہ منصوبے میں خیبر پختونخوامیں بلین ٹری شجر کاری منصوبہ فیزتھری شامل ہے۔ لوکل گورنمنٹ شعبے کے منظور شدہ منصوبوں میں مردان میں گجر گڑھی کینال پارک کی تعمیر ،کھلا بٹ ٹاؤن شپ ہری پور(این ایچ پی) کے ٹیوب ویلوں کی شمسی توانائی پر منتقلی،تمام سی ڈی ڈبلیو اے کے لئے صاف پینے کا پانی اور خیبر پختونخوا کے مخصوص ضلعوں میں دیہی سڑکوں کی بحالی کے منصوبے شامل ہیں۔ایم ایس ڈی شعبے کے منظور شدہ منصوبے میں ریجنل جی ڈی پی؍اکنامک انڈیکیٹر(بی او ایس) کی ترقی جبکہ ہائیر ایجوکیشن سیکٹر کے منظور شدہ منصوبے میں خیبر پختونخوامیں 10گورنمنٹ کالجز کا قیام اور دیر اپر میں یو ای ٹی کے سب کیمپس کا قیام شامل تھے۔کھیل اور ثقافت کے شعبے کے منظور شدہ منصوبے میں پشاور میں آرٹ اکیڈمی ور ڈویژنل لیول پر کلچر کمپلیکس کے قیام کے منصوبے شامل ہیں۔شعبہ صنعت میں منظور شدہ پراجیکٹ ’’خیبر پختونخوا بورڈ آف انوسٹمنٹ اینڈٹریڈ کے ساتھ معاونت‘‘ اور شعبہ معدنیات و معدنی ترقی میں منظور شدہ پراجیکٹ ضلع نوشہر ہ میں کوئلہ کی ماڈل کان کا قیام ہے۔ایس ٹی اینڈآئی ٹی شعبہ میں منظور شدہ پراجیکٹ میں سنٹرل جیل پشاور میں ’’جیل خانہ جات انتظامات اور معلومات کے نظام اور خیبر پختونخوامیں ہیلتھ سروسز ڈیلیوری کی بہتری کیلئے’’ آئی ٹی سپورٹ کے منصوبے شامل ہیں۔شعبہ قانون و انصاف میں منظور شدہ پراجیکٹ’’ریگی ماڈل ٹاؤن پشاور میں خیبر پختونخوا جوڈیشل اکیڈمی کی ماسٹر پلاننگ و ڈیزائننگ کے لئے فیزیبلٹی سٹڈی‘‘ جوڈیل کمپلیکس مانسہرہ کی تعمیر،جوڈیشل کمپلیکس ہری پور میں جوڈیشل کمپلیکس اور لائرز شیڈ کی تعمیر شامل ہیں۔ شعبہ خزانہ میں منظور شدہ پراجیکٹ’’پنشن پیمنٹ سسٹم کو خود کار بنانے کا منصوبے شامل ہے۔