بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / ن لیگ تصادم کی راہ پر گامزن ہے ٗاسفندیارولی

ن لیگ تصادم کی راہ پر گامزن ہے ٗاسفندیارولی

پشاور۔عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیارولی خان نے کہاہے کہ مسلم لیگ ن تصادم کی راہ پر گامزن ہے جس میں سب سے زیادہ نقصان اسی کو ہوگا ، تصاد م کی سیاست ملک کے لیے نقصان دہ ثابت ہوسکتی ہے پارلیمنٹ کو بااختیار بناکرتمام مسائل حل کیے جاسکتے ہیں نیشنل گورنمنٹ کے نام پر اب ملک کسی بھی نئے تجربے کامتحمل نہیں ہوسکتا فاٹا کا انضمام ناگزیر ہوچکاہے ٹرمپ کی پالیسیاں پاکستان اورافغانستان دونوں کے لیے خطرناک ثابت ہوسکتی ہیں ۔

وہ گذشتہ روز پارٹی اجلاس کے بعدمیڈیا کو بریفنگ دے رہے تھے اس موقع پرحاجی غلام احمد بلور ، میاں افتخارحسین ،افراسیاب خٹک اور دیگر رہنما بھی موجودتھے اسفندیارولی نے کہاکہ انگریز تو فاتح تھے اس لیے مفتوح کو دبائے رکھنے کی خاطر ایف سی آر کاظالمانہ قانون نافذکیے رکھا آزادی کے بعداس کاجواز باقی نہیں رہتا فاٹاانضمام کی راہ میں ڈیورنڈلائن کے ایشو کو پیش کرنے کی مولانا فضل الرحمان کی منطق ناقابل قبول ہے اگر چترال ،دیر اور بلوچستان میں چمن سے نیچے تک کاسارا علاقہ فاٹا نہ ہونے کے باوجودانٹرنیشنل باؤنڈری پر واقع ہونے سے کوئی مسئلہ پیدا نہیں ہوا تو بیچ میں فاٹا کاعلاقہ صوبہ کا حصہ بن جانے سے آخر کیسے ڈیورنڈلائن کاایشو سراٹھائے گا ۔

سوال یہ بھی پیدا ہوتاہے کہ انگریز کی کھینچی گئی لکیر کی وراثت آخر مولانا فضل الرحمان او ر محمودخان اچکزئی کو کیسے مل گئی حالانکہ اس سے قبل تو اچکزئی چترال سے لے کربولان تک پختونوں کو متحد کرنے کانعرہ لگاتے رہے ہیں اب فاٹا اور خیبر پختونخواکے پختونوں کے اکٹھا ہونے میں ان کاکیانقصان ہے انہوں نے کہاکہ اس انضمام کے بعدہم شمالی وجنوبی پختونخواکو بھی اکٹھا کرکے پختونوں کا ایک صوبہ بنائیں گے۔

انہوں نے ہم فاٹا کی مردم شماری کو مکمل طورپر مستردکرتے ہیں وفاقی حکومت علاقہ میں فی الفور نئی مردم شماری کرائے سی پیک کے حوالہ سے انہوں نے کہاکہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی سی پیک اور فاٹا کے حوالہ سے سابق وزیراعظم نوازشریف کے تمام وعدے اوریقین دہانیا ں پوری کریں کیونکہ اگر ایسا نہ کیاگیا تو اس سے بدگمانیاں جنم لیں گی جس سے پھر مسائل میں اضافہ ہوتاچلا جائے گا صوبائی حکومت پر کڑی تنقیدکرتے ہوئے ۔

انہوں نے کہاکہ پہلے اصلاحا ت کے نام پر شعبہ صحت کابیڑہ غرق کردیاگیا اب محکمہ تعلیم کو تباہ کرنے کی کوشش کی جانے لگی ہے صوبائی حکومت نے صوبہ کو تجربہ گاہ بناکررکھ دیاہے عمران خان خودکو ناتجربہ کار تسلیم کرچکے ہیں اگر ناتجربہ کارتھے تو صوبہ تباہ کرنے کے بجائے اقتدارچھوڑ دیتے ہمارے صوبہ نے کبھی اتناقرضہ نہیں لیاجتناموجودہ دور میں لیا گیاہے انہوں نے کہاکہ اگرپانامہ میں صرف نوازشریف کی آف شور کمپنی نہیں تھی اور بہت سارے بھی شامل تھے عمران خان اور جہانگیر ترین بھی اپنی اپنی آف شور کمپنیا ں تسلیم کرچکے ہیں مگر کاروائی صرف نوازشریف کے خلاف ہوئی ا سی لیے بدگمانیاں جنم لے رہی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ پاکستان اورافغانستان کو آپس کی بداعتمادی ختم کرناہوگی ویسے بھی چار میں سے تین ہمسائے ہم سے ناراض ہیں اس لیے ہمیں اپنی پالیسی پر نظر ثانی کرناہوگی ملک کے اندر بھی ہمیں اداروں کے تصادم سے بچنا ہوگا انہوں نے کہاکہ گھرکی صفائی کے بیان کی وضاحت ضروری ہے لیکن اگر اس سے مرادصوبوں اورفیڈریشن کے درمیان معاملات کو حل کرناہے تو ہم اس کی حمایت کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تصادم کاسب سے زیادہ نقصان خودمیاں نوازشریف کوہوگا اس لیے تصادم سے بچنا ضروری ہے نہوں نے کہا کہ شدت پسندی میں ملوث تنظیمیں اپنے گناہ قبول کر کے توبہ کریں اور سیاسی دھارے میں شامل ہونا چاہیں تو تو کوئی مضائقہ نہیں البتہ خفیہ سرگرمیوں میں ملوث افراد کو سیاسی سرگرمیوں کی اجازت نہیں ہونی چاہئے، اسفندیار ولی خان نے کہا کہ مسلم لیگ ن اداروں سے ٹکراؤ کی پالیسی پر گامزن ہے اور اس پالیسی سے سب سے زیادہ نقصان مسلم لیگ اور نواز شریف کو ہی ہوگا ،اے این پی نے نواز لیگ تک پیغام پہنچا دیا تھا کہ اداروں سے ٹکراؤ ملکی مفاد میں نہیں اور ملکی و بین الاقوامی صورتحال کے پیش نظر ملک اور جمہوریت کے مفاد میں قومی اداروں کے درمیان ہم آہنگی کی فضا از حد ضروری ہے،