بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / نیب ریفرنسز ٗ شریف خاندان کا مختلف آپشنز پر غور

نیب ریفرنسز ٗ شریف خاندان کا مختلف آپشنز پر غور

اسلام آباد۔ سابق وزیراعظم نواز شریف اور انکے بچوں نے نیب ریفرنسز کے چنگل سے نکلنے کیلئے پلی بارگین کی سہولت حاصل کرنے کیلئے سنجیدگی سے غور شروع کر دیا ہے، شریف فیملی کے قانونی مشیر خواجہ حارث نے معاملات کو آسان بنانے کیلئے پارلیمنٹ کے ذریعے نیب ایکٹ کی دفعہ 25اور 26میں ترامیم کا مشورہ بھی دیدیا۔

باوثوق ذرائع کیمطابق پانامہ فیصلے کی روشنی میں قومی احتساب بیورو (نیب )کی جانب سے سابق وزیر اعظم نواز شریف ان کے خاندان کے ساتھ ساتھ سیاسی جانشینوں کے خلاف غیر قانونی اثاثے بنانے اور بیرون ملک پاکستانیوں کے ٹیکس کا لوٹا ہوا پیسہ منتقل کرنے کے حوالے سے ریفرنسز احتساب عدالت میں جمع کروانے کے بعد شریف خاندان خاصی اضطراب میں مبتلا ہو گئے ہیں اب بیگم کلثوم نواز کی تیزی سے صحت یابی اور الیکشن 120کی جیت کے بعد شریف کی جانب سے مقدمات لڑنے کا حتمی فیصلہ کر لیا گیا ہے۔

اس حوالے سے ذرائع کا مذید کہنا تھا کہ مسلم لیگ لندن کی جانب سے خواجہ حارث کو لندن بلائے جانا بھی اسی فیصلے کی ایک کڑی ہے اس حوالے سے خواجہ حارث کی جانب سے شریف خاندان کو دی جانے والی بریفنگ سے سابق وزیراعظم نواز شریف کے ارادوں نے نیا زور پکڑا ہے اور نواز شریف نے خود پاکستان واپس آکر ریفرنسز کا سامنا کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے نیب کے سیکشن 25اور 26اور ان کی ذیلی شکوں پر خواجہ حارث کی جانب سے دی جانے والی بریفنگ کے حوالے سے ذرائع کا مذید کہنا تھا کہ خواجہ حارث کی جانب سے سابق وزیراعظم نواز شریف کو قانونی مشورہ دیا گیا کہ سیکشن 25اور 26 جو کہ پلی بارگینگ سے متعلقہ ہے میں ملزم کو ریلیف دیا گیا ہے کہ وہ چیئرمین نیب سے رجوع کر سکتا ہے اور چیئرمین نیب اس درخواست کوبعد ازں مشاورتی کمیٹی کو معاملہ بھجوائے گئے لیکن اس میں ملزم کا گرفتار کیے جانا ضروری ہوتا ہے۔

گرفتاری اور رقم کی واپسی کے حوالے سے دیئے گئے ٹائم پریڈ کے ساتھ ساتھ اور کئی قانونی پہلوؤں پر روشنی ڈالی گئی اس حوالے سے ذرائع کا مذید کہنا تھا کہ شریف خاندان کی پراپرٹی ضبط کئے جانے کے احتساب عدالت کے فیصلے اور خطے کی تیزی سے بدلتی ہوئی صورت حال کے تناظر میں پاکستان مسلم لیگ لندن نے وزیر خارجہ خواجہ آصف جو کہ پیپلز پارٹی کے دور حکومت میں بھی وزارت کے مزے لوٹتے رہے کو پیپلزپارٹی کے ساتھ نیب ایکٹ میں ترمیم کے حوالے سے خصوصی ٹاسک بھی سونپ دیا گیا ہے ۔

اس حوالے سے ذرائع کا مذید کہنا تھا پاکستان مسلم لیگ نواز کے ناراض کارکنوں کے حوالے سے شہباز شریف کو بھی خصوصی ٹاسک سونپ دیا گیا ہے واضع رہے سابق نااہل وزیر اعظم نواز شریف اور ان کے سیاسی جانشینوں کی جانب سے عدلیہ مخالف ہرزہ سرائی اور فوج مخالف پروپیگنڈا کرنے پر مسلم لیگ نواز لندن اور پاکستان مسلم لیگ نواز میں گزشتہ کئی ماہ سے کشیدگی کی وجہ سے پاکستان کی معاشیات تباہی کے دہانے پر پہنچ چکی ہے ۔