بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا کے 9اضلاع میں سیلاب کا خطرہ

خیبر پختونخوا کے 9اضلاع میں سیلاب کا خطرہ

پشاور۔تیز ترین موسمیاتی تبدیلیوں کے با عث صوبہ کے پچیس میں سے پندرہ اضلاع بدترین سیلاب کے خطرات سے دوچار ہوچکے ہیں جبکہ آٹھ اضلاع درمیانے خطرے کاسامنا کررہے ہیں صرف ضلع کرک سیلاب کے خطرات سے باہر قرارد یاگیاہے ۔

اس سلسلے میں ایشیائی ترقیاتی بینک کی طرف سے جو تازہ ترین رپورٹ جاری کی گئی ہے اس میں صوبہ کے تمام اضلاع کاتفصیلی جائزہ لینے کے بعدان کی درجہ بندی کی گئی ہے رپورٹ کے مطابق صوبہ کے جو نو اضلاع بدترین سیلاب کے شدید ترین خطرا ت سے دوچار ہیں ان میں صوبائی دارلحکومت پشاور کے علاوہ چارسدہ ،نوشہرہ ،شانگلہ ،سوات ،بونیر ،صوابی ،ڈی آئی خان اور مردان شامل ہیں۔

اسی طرح دوسرے نمبرپر جن چھ اضلاع کو خطرہ درپیش ہے ان میں مانسہر ہ بشمو ل تورغر ،دیربالا ،بنوں،دیرپائین ،ملاکنڈ اورٹانک شامل ہیں جبکہ درمیانے درجہ کے خطرے اورسیلاب کاسامناکرنے والے اضلاع میں ایبٹ آباد،ہری پور ،ہنگو ،کوہستان ،کوہاٹ ،چترال ،لکی مروت اور بٹگرام شامل ہیں جبکہ کرک کو سب سے کم خطرہ درپیش ہے تاہم محکمہ موسمیات کے کے مطابق چترال اور دیر بھی شدید ترین خطرات سے دوچار فہرست میں شامل ہیں انکے مطابق سیلابوں سے بچاؤ کے چھوٹے ڈیم تعمیرکے دعوؤں پر عملدرآمدنہیں ہوسکاہے جسکے بعدمستقبل میں بڑے خطرات کاسامنا کرناپڑ سکتاہے ۔

ان کے مطابق سوات ،چترال او ردیر میں گلیشئیر پگھلنے کی رفتار تیز ہونے سے جھیلوں کے پھٹنے کی صورت میں سیلاب کے خطرات موجودہیں اور اس حوالہ سے ہنگامی بنیادوں پراقدامات کی ضرورت ہے جن میں موسمیاتی تبدیلیوں پر قابو پانے کے لیے کوششیں سب سے اہم ہیں