بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / فاٹا کے عوام اپنے حقوق کیلئے اٹھ کھڑے ہوں ٗ پرویز خٹک

فاٹا کے عوام اپنے حقوق کیلئے اٹھ کھڑے ہوں ٗ پرویز خٹک

پشاور۔وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ حیرت ہے کہ ایک طرف نااہل وزیر اعظم کو واپس سیاست اور حکومت میں لانے کیلئے قانون میں ترمیم کی جاتی ہے اور اس مقصد کیلئے پورے پارلیمنٹ کو یر غمال بنا کر ربڑ سٹیمپ کے طور پر استعمال کیا جا تا ہے تو دوسری طرف فاٹا کے غیور مگر غریب عوام کو اْن کا بنیادی قانونی اور آئینی حق نہیں دیا جا رہا۔ وقت آچکا ہے کہ فاٹا کے عوام اپنے بنیادی حق کیلئے بیک آواز اْٹھ کھڑے ہوں ۔

موجودہ وفاقی حکومت کوفاٹا کے خیبر پختونخوا کے ساتھ انضمام پر کوئی اعتراض نہیں مگر انضمام کی صورت میں اسے فاٹا کو 100 ارب روپے کاپیکیج دینا پڑے گا جو وفاق نہیں چاہتا مگر رقم بچانے کی فکر میں قومی یکجہتی کو داؤ پر لگانے کی اسے کوئی فکر نہیں وزیراعلیٰ نے اعلان کیا کہ پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت اے این پی کے زیراہتمام اسلام آباد میں قبائلی آل پارٹیز کانفرنس کے پانچ نکاتی اعلامیے کی سو فیصد حمایت کرتی ہے جس کے تحت وفاق سے فاٹا کا خیبرپختونخوا میں آئینی اور انتظامی طور پر انضمام، ایف سی آر کا خاتمہ کر کے مکمل عدالتی نظام کے نفاذ، قبائلی عوام کو تمام قانونی حقوق کی فراہمی، دس سالہ ترقیاتی پیکج اور خیبر پختونخوا اسمبلی میں بھرپور نمائندگی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

افسوس کہ وفاق نے فاٹا اصلاحات کیلئے پارلیمانی کمیٹی کا جرآت مندانہ فیصلہ کیا مگر اس کی سفارشات پر عمل درآمد کی بجائے قبائلی عوام سے بھونڈا مذاق شروع کر دیا وہ پشاور میں جمعیت علماء اسلام س کے زیراہتمام قبائلی جرگہ اور آل پارٹیز کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے جس میں تمام قبائلی ایجنسیوں سے چیدہ مشران کے علاوہ سیاسی جماعتوں کے صوبائی اور قبائلی قائدین نے شرکت کی پرویزخٹک نے ملک کی جغرافیائی سرحدوں کے تحفظ اور قومی استحکام کیلئے قبائلی عوام کی لازوال قربانیوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ فاٹا کے عوام کی قربانیوں کی قدر کرنے اور ان کی مشکلات کے ازالے کیلئے کوئی ٹھوس قدم اٹھانے کی بجائے وفاق الٹا ان کا صبر آزمانے میں مگن ہے اور کبھی انہیں چھ سال اور کبھی دس سال بعد خیبرپختونخوا میں ضم کرنے اور کبھی الگ صوبہ بنانے کے شوشے چھوڑ رہا ہے ا۔

نہوں نے کہا کہ خیبرپختونخوا اسمبلی میں نمائندگی دینے کی صورت میں بھی وفاق فاٹا کے ارکان صوبائی اسمبلی کو گورنر کے ماتحت رکھنے اور ترقیاتی فنڈز کیلئے ترسانے پر مصر ہے جو ایف سی آر سے زیادہ بے رحمانہ رویہ ہے پرویزخٹک نے کہا کہ انہوں نے بحیثیت وزیراعلیٰ قبائلی باشندوں کی حالت زار ختم کرنے اور فاٹا اصلاحات پر حقیقی عمل درآمد کیلئے وزیراعظم سے لے کر آرمی چیف تک کو خطوط لکھے اور یہ نازک ترین معاملہ اپکس کمیٹی زیر غور لانے کی استدعا کی مگر مرکز کے سیاسی ہتھکنڈے قبائل کی خوشحالی میں بڑی رکاوٹ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت اگر قبائلی عوام اور اسکے نتیجے میں پوری قوم کی ترقی اور یکجہتی میں مخلص ہے تو فاٹا اصلاحات پر فوری عمل درآمدیقینی بنائے جس کیلئے سالوں نہیں بلکہ صرف ایک مہینہ بھی کافی ہے اگر کرپشن اور منی لانڈرنگ کے جرائم کی پاداش میں نا اہل وزیراعظم کو دوبارہ اہل بنانے کیلئے پارلیمنٹ سے آئینی ترامیم منظور کی جاسکتی ہیں تو ملک کیلئے بیش بہا قربانیاں دینے والے قبائلی عوام کو خیبرپختونخوا میں انضمام کے بنیادی حق کا تحفہ کیوں نہیں دیا جا سکتا ۔

وزیراعلیٰ نے نوازشریف کی نااہلی کے خاتمے کیلئے پارلیمنٹ سے ترامیم منظور کرانے کے چکر میں ختم نبوت کی شق اڑانے پر بھی خیبرپختونخوا کی حکومت اور عوام کی جانب سے گہری تشویش کا اظہار کیا اور واضح کیا کہ عوام کو اپنے دینی اقدار کے برخلاف اور منافقت کی سیاست ہرگز قبول نہیں اسلئے نا اہل حکمرانوں اور انکے مفادپرست حواریوں کو اس کا خمیازہ بھگتنے کیلئے بھی تیار رہنا ہوگا کیونکہ قوم نے یہ قانون پارلیمنٹ سے منظور کرانے کیلئے جانوں کے نذرانے بھی دیئے ہیں