بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا اسمبلی میں ناظمین کی گاڑیوں پر ہوٹر لگانے کی گونج

خیبر پختونخوا اسمبلی میں ناظمین کی گاڑیوں پر ہوٹر لگانے کی گونج


پشاور۔ناظمین کی طرف سے اپنی گاڑیوں پر ہوٹر لگانے کے معاملہ کی گونج صوبائی اسمبلی پہنچ گئی اپوزیشن نے اسے غیر قانونی جبکہ حکومت نے قانونی قرارد دے دیا جبکہ حکومتی ممبر نے ایک مرتبہ پھر اسمبلی اور حکومت کی بے اختیار ی اور بیوروکریسی کی منہ زوری کارونارویا اسمبلی اجلاس کے دوران وقفہ سوالات کے موقع پر عظمیٰ خان کے سوال پر وزیر بلدیا ت نے واضح کیا کہ ضلع ناظم نائب ناظم اور تحصیل ناظم کو سرکاری گاڑی رکھنے کی اجازت ہے اور ان کے لیے گاڑیوں پر ہوٹر لگانے پر کوئی پابندی بھی نہیں ہے۔

جب سرکاری افسران ہوٹر لگا سکتے ہیں تو منتخب نمائندے کیوں نہیں لگا سکتے اس پر عظمیٰ خان نے کہاکہ ہوٹر لگانا وی آئی پی کلچر کی نشانی ہے جبکہ صوبائی حکومت نے وی آئی کلچر کے خاتمہ کے دعوے کی ہوئے ہیں جس پروزیر بلدیات نے کہاکہ ہوٹر ن لگانے کے لیے ہمیں قانون سازی کرنا پڑے گی اورایوان چاہے تو قانو ناً اس کو رو ک سکتے ہیں۔

دریں اثناء جماعت اسلامی کے محمد علی خان نے جاری سکیموں کے لیے فنڈز کی فراہمی میں تاخیر پر تشویش کااظہارکرتے ہوئے کہاکہ وزیر اعلیٰ کے واضح احکاما ت کے باوجودبیوروکریسی چار ماہ سے اس معاملہ میں روکاوٹ بنی ہوئی ہے ایسا لگ رہاہے کہ حکومت کی میعاد پور ی ہوجائے گی مگر بیورو کریسی کے حربو ں سے فنڈز جاری نہیں ہوسکیں گے انہوں نے اس معاملہ پر سپیکر سے رولنگ کامطالبہ بھی کیا