بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / پی ٹی آئی کے تبدیلی اقدامات دیر پا اثرات کے حامل ہیں ٗ پرویز خٹک

پی ٹی آئی کے تبدیلی اقدامات دیر پا اثرات کے حامل ہیں ٗ پرویز خٹک


پشاور۔وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت کی تبدیلی کے سفر کی حقیقی معنوں میں عکاسی کیلئے محکمہ اطلاعات کی تشکیل نو ناگزیر بن چکی ہے۔سرکاری مشینری میں زیادہ سے زیادہ شفافیت اور گڈ گورننس کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ حکومتی اقدامات کی تشہیر اور ان پر متعلقہ حلقوں کی جانب سے فیڈ بیک میں اس محکمہ کے کردار مسلمہ ہے تاہم انہوں نے محکمہ اطلاعات کے یکطرفہ کردار کو دو طرفہ اور کثیر الجہتی مواصلاتی نظام میں بدلنے کی ہدایت کی تاکہ عوامی فلاح و بہبود پر مبنی حکومتی اقدامات کو وسیع بنیادوں پر پھیلایا جا سکے اور اس ضمن میں زیادہ سے زیادہ عوامی تعاون بھی حاصل کیا جاسکے۔

وہ وزیراعلیٰ ہاؤس پشاور میں سیکرٹر ی اطلاعات قیصر عالم کی طرف سے پریزینٹیشن سے خطاب کر رہے تھے ۔جس میں چیف سیکرٹری اعظم خان، ایڈیشنل چیف سیکرٹری شہزاد بنگش ، سیکرٹری خزانہ شکیل قادر، وزیراعلیٰ کے پرنسپل سیکرٹری شہاب علی شاہ، ڈائریکٹر جنرل اطلاعات سید امیر حسین شاہ اور دیگر افسران نے شرکت کی۔پریزینٹیشن میں محکمہ اطلاعات کی موجودہ سرگرمیوں اور مجوزہ نئے رول کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔

وزیراعلیٰ نے صوبائی حکومت کے عوام دوست اقدامات کی موثر تشہیر اور پرنٹ، الیکٹرانک اور سوشل میڈیا کے ذریعے دو طرفہ اور کثیر الجہتی مواصلاتی طور طریقے اپنانے کیلئے سیکرٹری اطلاعات کو گرین سگنل دیتے ہوئے مجوزہ پروگرام کو آگے بڑھانے کی ہدایت کی ۔انہوں نے واضح کیا کہ صوبے میں شفافیت اور گڈ گورننس پر مبنی ترقیاتی اور فلاحی اقدامات کی موثر عکاسی کیلئے جامع اصلاحاتی و ترقیاتی مواصلاتی حکمت عملی کی تشکیل وقت کی اہم ضرورت ہے۔

انہوں نے کہاکہ ہماری حکومت کے بر سر اقتدار آنے پر جب ہم نے صوبے میں تبدیلی کے ایجنڈے کے تحت ترقیاتی اقدامات کا آغاز کیا تو ہمیں کئی چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑا۔صوبائی حکومت کا پورا انتظامی نظام تقریباًناکارہ ہو چکا تھا اور محکمے زبوں حالی کا شکار ہونے کے سبب عوامی خدمات بجا لانے کے قابل نہیں تھے تاہم انہوں نے کہاکہ ہماری حکومت نے تمام حکومتی شعبوں اور اداروں میں مختلف اصلاحات کا بیڑہ اُٹھایا اور اس سلسلے میں ہمیں ریکارڈ قانون سازی بھی کرنا پڑی ۔انہوں نے کہاکہ ہمارے ارادے نیک اور مضبوط ہیں۔

ہمارا مقصد زنگ آلود نظام کو مکمل طور پر بدلنا ہے تاہم سٹیٹس کو کی قوتیں بھی موجود ہیں جو تبدیلی کی کوششوں میں حائل ہیں۔انہوں نے کہا کہ باقاعدہ قانون سازی کے ساتھ ہمارے تبدیلی کے اقدامات دیر پا اثرات کے حامل ہیں۔یہ تبدیلیاں ہمیشہ کیلئے ہیں جنہیں بدلنا ممکن نہیں اور جو تبدیلی کی راہ میں رکاوٹ بنیں گے تو ناکامی اور نقصانات سے دوچار ہوں گے جس کی تاریخ بھی گواہ ہے۔وزیراعلیٰ نے کہاکہ محکمہ اطلاعات اپنے نئے کردار کے تحت تبدیلی کے اقدامات سے متعلق عوامی شعور اُجاگر کرے اور حکومت کے اصلاحاتی ایجنڈے کی مناسب عکاسی کرے جو گڈ گورننس اور شفافیت کا لازمہ ہے۔

دریں اثناء وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ وقت آ گیا ہے کہ خطے میں پائیدار امن کیلئے مخالف قوتوں کے خلاف طاقت کی بجائے ڈائیلاگ کا طریقہ کار اپنایا جائے تاکہ نفرت کے جذبات کو محبت میں بدلا جائے اور امن و آشتی کو فروغ ملے تاریخ سے ثابت ہے کہ دنیا میں جنگ اور تصادم سے تباہی پھیلی اور عوام کو جان و مال اور عزت و آبرو کے نا قابل تلافی نقصانات سے دو چار ہونا پڑا جبکہ بات چیت سے ہر قسم کے پیچیدہ ترین مسائل حل ہوئے اور لوگوں کی معاشی ترقی میں اضافہ ہوا یہی اصول افغانستان کیلئے اپنایا جائے تو گذشتہ کئی دہائیوں سے جاری جنگ،خانہ جنگی اور تصادم کی فضاء کومحبت کے ماحول میں بدلا جا سکتا ہے جبکہ افغانستان میں امن پورے خطے میں پائیدار امن و سلامتی کا پیش خیمہ ہو سکتا ہے۔

وہ وزیر اعلیٰ سیکرٹریٹ پشاورمیں سبکدوش ہونے والے امریکی قونصل جنرل ریمنڈ میگراتھ سے بات چیت کر رہے تھے۔ خیبر پختونخوا اور فاٹا کیلئے یو ایس ایڈ کے ڈپٹی مشن ڈائریکٹر ٹموتھی ڈونے اور سیاسی و معاشی شعبے کے سربراہ ماٹن میئر بھی ان کے ہمراہ تھے۔