بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / تحفظات کے باوجود الیکشن کمیشن میں پیش ہونے جارہا ہوں ٗ عمران خان

تحفظات کے باوجود الیکشن کمیشن میں پیش ہونے جارہا ہوں ٗ عمران خان


اسلام آباد۔چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان نے کہا ہے کہ تحفظات کے باوجود الیکشن کمیشن میں پیش ہونے جارہا ہوں ، ڈان لیکس کے پیچھے مریم نواز ہیں ، قطری خط کی جگہ منی ٹریل ہی دے دیتے تو کیس ختم ہوجاتا،جمہوریت میں سیاسی احتجاج پر کسی کے خلاف دہشت گردی کے مقدمات نہیں بنتے ۔

یہ فوج کو اس لئے برابھلا کہہ رہے ہیں کہ ان کو کیوں نہیں بچایا،شریف خاندان ہمیشہ امپائروں کو ساتھ ملا کر کھیلنے کے عادی ہیں، میں کے پی کے میں احتساب سسٹم سے مطمئن نہیں ہوں ، یہ اتناطویل طریقہ کار تھا کہ ہم اس کو صحیح طرح نافذ نہ کرسکے،2013کے الیکشن میں ملٹری انٹیلی جنس (ایم آئی)کے ایک بریگیڈئر نے (ن) لیگ کی مدد کی۔بدھ کو نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ شریف خدانان نے 300ارب کے اثاثے چھپائے ہیں ، یہ پیسہ پاکستان سے باہر گیا ہے ۔

ان کیساتھ پورا مافیا ہے ، نوازشریف او اس کا خاندان احتساب عدالت سے بھاگ رہے ہیں ، ان کے بچے اربوں روپے کے گھر میں رہتے ہیں ، حسین شریف کی اربوں کی کمپنی ہے ، میری جائیداد کے معاملے پر عدلت نے جو ثبوت مانگا میں نے فراہم کیا ، نہ میں حکومت میں تھا اور نہ میں نے منی لانڈرنگ کی ، بند ہوئے بینک اکاؤنٹ سے ریکارڈ کا حصول مسئلہ تھا ، جس طرح میری تلاشی ہوئی پاکستان میں کسی کی نہیں ہوئی ۔

انہوں نے کہا کہ ریگولیٹری باڈیز کے پاس توہین لگانے کا اختیار نہیں ہوتا، ان اداروں کا توہین لگانے آزادی اظہار پر پابندی ہے ، سپریم کورٹ پر حملے کئے جا رہے ہیں ، الیکشن کمیشن میں تحفظات کے باوجود پیش ہونے جا رہا ہوں ، دنیا میں ایسی کوئی مثال نہیں ملتی کہ الیکشن کمیشن توہین عدالت کی کارروائی کرے ، (ن) لیگ کے رہنما سپریم کورٹ کے خلاف باتیں کر رہے ہیں ، خیبرپختونخوا میں کسی سیاسی مخالف پر کیس نہیں بنائے گئے ۔

نوازشریف اور زرداری کو پکڑو تو کہتے ہیں کہ جمہوریت خطرے میں ہے ،عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکی جا رہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ ڈان لیکس کے پیچھے مریم نواز ہیں ، نوازشریف اور (ن) لیگ ڈکٹیٹر کی گود میں پیدا ہوئی ، 2013کے الیکشن میں ملٹری انٹیلی جنس (ایم آئی)کے ایک بریگیڈئر نے ان کی مدد کی ، الیکشن کمیشن میں پیش ہونا کسی خوف کا نتیجہ نہیں ہے ، الیکشن کمیشن میں تحفظات کے باوجود پیش ہونے جارہا ہوں ۔

یہ قطری خط کی جگہ منی ٹریل ہی دے دیتے تو کیس ختم ہوجاتا ۔عمران خان نے کہا کہ جمہوریت میں سیاسی احتجاج پر کسی کے خلاف دہشت گردی کے مقدمات نہیں بنتے ، یہ فوج کو اس لئے برابھلا کہہ رہے ہیں کہ ان کو کیوں نہیں بچایا، مجھے حکومت چلتی نظر نہیں آرہی ، شریف خاندان ہمیشہ امپائروں کو ساتھ ملا کر کھیلنے کے عادی ہیں ، خیبرپختونخوا میں سکول ، اسپتال اور پولیس بہتر ہوئی ہے ، آپ ہمارا بلین ٹری پراجیکٹ دیکھ لیں ، میں کے پی کے میں احتساب سسٹم سے مطمئن نہیں ہوں ، یہ اتناطویل طریقہ کار تھا کہ ہم اس کو صحیح طرح نافذ نہ کرسکے ۔