بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / بی آر ٹی منصوبہ کے اخراجات کا تخمینہ اور عوامی فوائد

بی آر ٹی منصوبہ کے اخراجات کا تخمینہ اور عوامی فوائد


پشاور۔پشاور بس ریپڈ ٹرانزٹ منصوبے کے لئے ایشیائی ترقیاتی بینک41 ارب روپے بطور قرضہ دے گا جبکہ 7 ارب روپے سے زائد رقم صوبائی حکومت مہیا کرے گی منصوبے میں تقریباً8 ارب روپے کی لاگت سے 300 ایئر کنڈیشنڈ بسوں کی فراہمی بھی شامل ہے پشاور بی آر ٹی تکمیل کے ساتھ ہی تقریباً 4تا 5 لاکھ افراد کو موثر اور محفوظ ٹرانسپورٹ کی سہولت مہیا ہو گی اس منصوبے میں ایسٹ ویسٹ کوریڈور جو چمکنی سے حیات آباد تک 26 کلومیٹر پر پھیلا ہوا ہے32 بس اسٹیشنز پر مشتمل ہے جبکہ 150 بس سٹاپ بھی مقرر کئے گئے ہیں ۔

شہر سے ملحقہ 68 کلومیٹر فیڈر روٹس سے بھی شہری مستفیدہوں گے جن میں چارسدہ روڈ ٗ کوہاٹ روڈ ٗ ورسک روڈ ٗ باڑہ روڈ اور رنگ روڈ قابل ذکرہیں اس روٹ کا15 کلومیٹر حصہ زمینی سطح کے ساتھ اور 8 کلو میٹر زیرزمین ہوگا اس منصوبے پر لاگت کا تخمینہ 48ارب روپے ہے جس میں تقریباً اس میں مہیا کردہ کئی سہولیات لاہور ٗ اسلام آباد اور ملتان کے میٹرو بس میں دستیاب نہیں سسٹم میں پارکنگ کی سہولت بھی رکھی گئی ہے تاکہ لوگ اپنی گاڑیاں پارک کر کے آرام سے بی آر ٹی استعمال کر سکیں۔