بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / مشال قتل کیس ٗ گرفتار ملزمان کی درخواست ضمانت مسترد

مشال قتل کیس ٗ گرفتار ملزمان کی درخواست ضمانت مسترد


ہری پور۔مشال خان قتل کیس میں گرفتار ستاون ملزمان کی درخواست ضمانتیں مسترد چار ملزمان تاحال مفرور قرار دکیس کی دسویں سماعت کل پچیس اکتوبر ہو گی گزشتہ روز ابیٹ آباد ہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج فضل سبحان خان نے گرفتار پچیس ملزمان کی درخواست ضمانتوں پر فیصلہ سناتے ہوئے دیگر ملزمان کی بھی ضمانتوں کی درخواستیں مسترد کر دیں ہیں اس کیس کی دسویں سماعت پچیس اکتوبرکو سنانے کے احکامات جاری کر دیے ہیں۔

ملزمان کے وکلاء نے ضمانتوں کے لیے درخواستیں دائر رکر رکھی تھیں جس پر فیصلہ پہلے بیس اکتوبر تک محفوظ کیا گیا اور بعدا زں فیصلہ میں توسیع کرتے ہوئے تےئس اکتوبر کو سنانے کے احکاما ت جاری کیے گے تھے تاہم پیر کے روز ملزمان کے وکلاء دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں پیش ہوئے جہاں معزز جج فضل سبحان خان نے مختصر احکامات جاری کرتے ہوئے ضمانتوں پر فیصلہ سناتے ہوئے گرفتار ستاون کے ستاون ملزما ن کی دائر درخواست ضمانتیں مسترد کر دی ہیں۔

اس موقع پر ملزمان کے وکلاء کی ایک بڑی تعداد بھی موجو دتھی واضح رہے کہ مثال خان قتل کیس میں ایف آئی آ رمیں نامزد چا ر ملزمان تاحال مفرور ہیں نویں سماعت کے ہونے تک 37گواہوں کے بیانات قلمبند کیے جا چکے ہیں جن میں سرکاری گواہ بھی شامل ہیں مزید شہادتوں گواہوں کا سلسلہ بھی جاری ہے سنٹرل جیل ہری پور میں ٹرائل کورٹ روم میں سماعتیں بھی جاری ہیں اگلی سماعت پچیس اکتوبر تک ملتوی ہے ۔

مشال خان کے والد اقبال نے میڈیا سے گفتگو کے دوران کہا ہے کہ عدالتی کاروائی سے مطمئن ہوں میرے بیٹے کو بے گناہ قتل کیا گیا ہے انصاف کے لیے پرامید ہوں اور انصاف کے لیے ہی کیس کی پیروی کر رہا ہوں مردان سے ہر پیشی پر ہری پور ایبٹ آباد خود آتا ہوں یا درہے کہ ان کے ہمراہ دو سرکاری وکیل سمیت ہری پو رسے کالا خان اور سردار عبدالرؤف ایڈوکیٹ بھی مثال خان قتل کیس کے وکلاء میں شامل ہو گے ۔

مشال خان قتل کیس کی سنٹرل جیل میں سماعت کے دوران قیدیوں کی ملاقات پر پابندی بھی عائد ہے پولیس سمیت دیگر سیکورٹی فورسز کی بھاری نفری کو بھی سماعت ختم ہونے تک الرٹ رکھا جاتا ہے جیل کی طرف آنے والے داخلی وخارجی راستوں کو رکاوٹیں کھڑی کرکے مکمل بند ہے واضح رہے کہ عبدا لولی خان مردان یونیورسٹی میں شعبہ صحافت کے طالب علم مشال خان کو توہین مذہب کے الزام پر قتل کر دیا گیاتھا