بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / نوازشریف، بیٹی اور داماد کے ہمراہ احتساب میں پیش

نوازشریف، بیٹی اور داماد کے ہمراہ احتساب میں پیش


اسلام آباد۔ مسلم لیگ (ن) کے صدر اورسابق وزیراعظم نوازشریف، بیٹی مریم اور داماد کیپٹن (ر) صفدرکی مالی بدعنوانی سے متعلق نیب ریفرنسزکی سماعت بغیر کارروائی کے منگل تک ملتوی کردی گئی جبکہ عدالت نے کہاہے کہ آئندہ سماعت پر بے شک گواہوں کو نہ بلایا جائے ،آئندہ سماعت پر ریفرنسز کو یکجا کرنے سے متعلق کارروائی ہوگی ۔جمعہ کو اسلام آباد کی احتساب عدالت میں سابق وزیراعظم نوازشریف، بیٹی مریم نوازاورداماد کیپٹن (ر )محمد صفدرکی مالی بدعنوانی سے متعلق نیب ریفرنسزکی سماعت جج محمد بشیر نے کی ۔اس دوران نوازشریف کے وکیل نے کہاکہ اسلام آبا دہائیکورٹ کے تفصیلی فیصلے کا انتظار ہے ۔اس پر عدالت نے کہاکہ آئندہ سماعت پر بے شک گواہوں کو نہ بلایا جائے ۔

آئندہ سماعت پر ریفرنسز کو یکجا کرنے سے متعلق کارروائی ہوگی ۔ کیس کی سماعت بغیر کسی کارروائی 7نومبر بروز منگل تک ملتوی کردی گئی۔ نوازشریف پیشی میں اہم دستاویزات بھی ساتھ لائے تھے جب کہ انہوں نے عدالت میں عزیزیہ اور فلیگ شپ ریفرنسز میں پچاس پچاس لاکھ روپے کے دو ضمانتی مچلکے بھی جمع کراد یئے ۔ انہوں نے عدالت میں حاضری یقینی بنانے کے لیے یہ ضمانتی مچلکے جمع کرائے۔پیشی کے موقع پر احتساب عدالت کے باہر سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کیے گئے تھے جب کہ مسلم لیگ ن کی خواتین ارکان اسمبلی نے عدالت کے اندر جانے کی اجازت نہ ملنے پر احتجاج کیا ۔ جوڈیشل کمپلیکس کے باہر ایف سی، پولیس اور ایلیٹ کمانڈوز کی بھاری نفری تعینات رہی جبکہ عدالت جانے والی کشمیر ہائی وے کو عام ٹریفک کے لئے بند اور راستوں کو خار دار تاریں لگا کر سیل کر دیا گیا۔

احتساب عدالت کے باہر مسلم لیگ کے حامیوں کی آمد کا سلسلہ جاری رہا۔ کارکنوں کی جانب سے نواز شریف کے حق میں نعرے بازی کی جاتی رہی اورجوڈیشل کمپلیکس کے اطراف میں مریم نواز اور نواز شریف کے حق میں خیر مقدمی بینرز بھی آویزاں تھے ۔واضح رہے کہ نیب نے 8 ستمبرکونوازشریف اوران کے بچوں کے خلاف لندن فلیٹس، آف شورکمپنیوں، عزیزیہ اسٹیل اورہل میٹل کمپنی سے متعلق 3 مقدمات درج کیے گئے۔

ان مقدمات میں نیب آرڈیننس کی سیکشن 9 اے لگائی گئی ہے جو غیرقانونی رقوم اور تحائف کی ترسیل سے متعلق ہے۔ جرم ثابت ہونے کی صورت میں ملزمان کو 14 سال قید کی سزا ہوسکتی ہے۔گزشتہ روز اسلام آباد ہائی کورٹ نے تینوں نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے سے متعلق نوازشریف کی درخواست منظور کرلی ہے۔ سپریم کورٹ نے 28 جولائی کو پاناما لیکس سے متعلق مقدمے میں نواز شریف کو اثاثے ظاہر نہ کرنے پر نا اہل قرار دے دیا تھا۔