بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / نجی تعلیمی اداروں میں پروموشن فیس غیر قانونی قرار

نجی تعلیمی اداروں میں پروموشن فیس غیر قانونی قرار


پشاور۔پشاورہائی کورٹ کے جسٹس وقاراحمدسیٹھ اور جسٹس غضنفرخان پرمشتمل دورکنی بنچ نے نجی تعلیمی اداروں کی جانب سے فیسوں میں بے تحاشہ اضافے ٗ سالانہ پروموشن فیس اورموسم گرما کی تعطیلات کے دوران ٹرانسپورٹ فیس کی وصولی کے اقدام کو کالعدم قرار دے دیا ہے عدالت عالیہ کے فاضل بنچ نے گذشتہ روز پشاوربارایسوسی ایشن کے صدر فضل واحد ایڈوکیٹ کی جانب سے دائررٹ کی سماعت کی اس موقع پر وکلاء کی ٹیم عباس خان سنگین ٗ فضل شاہ مہمند اورذوالفقارخلیل وغیرہ پیش ہوئے اس موقع پر عدالت کو بتایاگیاکہ نجی تعلیمی اداروں میں سالانہ فیسوں میں بے تحاشہ اضافہ کیاجاتاہے جبکہ اگلی کلاس میں پروموش کی علیحدہ فیس وصول کی جاتی ہے اسی طرح ٹرانسپورٹ کی سہولت تو دی جاتی ہے تاہم موسم گرماکی تعطیلات میں ٹرانسپورٹ نہیں دی جاتی لیکن اس کی فیسیں وصول کی جاتی ہیں۔

جبکہ آرمی پبلک سکول کے سانحہ کے بعد نجی تعلیمی اداروں کے طلباء سے سکیورٹی کے نام پرفی کس تین سو روپے تک سکیورٹی فیس وصول کی جاتی ہے انہوں نے عدالت کو بتایاکہ صوبائی حکومت میں شامل مختلف سیاسی جماعتوں کے بااثرسیاستدان نجی تعلیمی ادارے چلارہے ہیں اور ریگولیٹری اتھارٹی تو قائم کردی گئی ہے۔

لیکن اتھارٹی کے قوانین طلباء کی بجائے مالکان کے فائدے کیلئے بنائے گئے ہیں فاضل بنچ نے دلائل مکمل ہونے پر رٹ پٹیشن منظورکرکے فیسوں میں اضافے ٗ سالانہ پروموش فیس اورموسم گرماکی تعطیلات کے دوران ٹرانسپورٹ فیس کی وصولی کے اقدام کوکالعدم قرار دے دیا ہے ۔