بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / سائل تنقید سے نہیں وسائل سے حل ہوتے ہیں، شاہد خاقان

سائل تنقید سے نہیں وسائل سے حل ہوتے ہیں، شاہد خاقان


اسلام آباد ۔ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ انجینئرکی ترقی کے بغیر کوئی ملک ترقی نہیں کر سکتا، بدلتی ہوئی ٹیکنالوجی کے باعث انجینئرنگ کے تقاضوں میں تبدیلی ہوئی ہے، تنقید سے مسائل حل نہیں ہوتے وسائل سے حل ہوتے ہیں، موجودہ حکومت نے10ہزار400میگاواٹ بجلی نظام میں شامل کی، پاکستان کی ایٹمی قوت بننے میں انجینئرنگ کا بنیادی کردار ہے، تھرکول منصوبہ ترقی کررہا ہے اور کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے منصوبے لگ رہے ہیں۔

1200میگاواٹ کے 3منصوبے موجودہ حکومت نے لگائے۔جمعرات کو وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے انجینئرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انجینئرنگ کونسل کے کونسل میں شرکت پر خوشی ہوئی ہے، کنونشن میں انجینئرنگ کے شعبے کو درپیش مسائل پر بات ہو سکے گی، انجینئرز پر خدمات کی انجام دہی کی بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے، انجینئرز کی ترقی ے بغیر کوئی ملک ترقی نہیں کر سکتا، وقت ے ساتھ انجینئرنگ کے تقاضوں میں تیزی سے تبدیلی ہوئی ہے۔

انجینئرکے ہنر کو ہر شخص جانتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ انجینئر کے پاس مسائل کے حل کی سوچ ہوتی ہے، دو سال میں یہ احساس ہوا کہ توانائی کا حل گیس کی درآمد میں ہے، تنقید سے مسائل حل نہیں ہوتے،وسائل سے حل ہوتے ہیں، مثبت سوچ سے کام کیا اور آج توانائی کے مسائل حل ہو گئے ہیں، کھاد درآمد کی جاتی تھی اور تنعتیں بند تھیں، صنعتوں کی ضرورت گیس تھی اور نظام میں مزید گیس لانا ضروری تھا، سیدھی بات کا جواب دینے کیلئے تیار ہیں، موجودہ حکومت نے 10ہزار400میگاواٹ بجلی نظام میں شامل کی۔ انہوں نے کہا کہ انجینئرز کے بنیادی کام میں اعلیٰ معیار قائم کرنا شامل ہے۔

تعمیرات کا شعبہ پاکستان کیلئے ایک بڑا چیلنج ہے، ملک میں ترقی کیلئے انجینئرز کو معیاری تعمیرات پر بھی توجہ دینا ہو گی، پاکستان انجینئر کونسل کی بہتری کیلئے ہمارا تعاون شامل رہے گا، نصاب اور معیاری تعلیم پر توجہ دینے کی ضرورت ہے، انجینئرنگ کی تعلیم کے حوالے سے پی ای سی اپنا کردار ادا کرے، ادارے کے سربراہ کے پاس تعلیم کے ساتھ انتظام کا تجربہ ہونا چاہیے، تعلیم اور تجربے کے ساتھ ہی ملک کے نظام میں بہتری لائی جا سکتی ہے۔

پاکستان کے ایٹمی قوت بننے میں انجینئرنگ کا بنیادی کردار ہے، موجودہ حکومت کے دور میں انفراسٹرکچر نے سب سے زیادہ ترقی کی ہے، ملک کے ہر کونے میں بڑی تعداد میں ترقیاتی منصوبے جاری ہیں، ہماری پہلی حکومت ہے جس نے سڑکوں پر توجہ دی۔ انہوں نے کہا کہ لواری ٹنل اور نندی پور منصوبے التواء کا شکار تھے، ہماری حکومت نے التواء کا شکار منصوبوں کو مکمل کیا، تھرکول منصوبہ ترقی کر رہا ہے اور کوئلے سے بجلی پیدا کرنے والے منصوبے لگ رہے ہیں۔

1200میگاواٹ کے تین منصوبے موجودہ حکومت نے لگائے، گیس سے چلنے والے پاور پلانٹ ریکارڈ مدت میں مکمل کئے، حکومت نے ایل این جی پلانٹس لگائے جس سے سستی بجلی مل رہی ہے، توانائی قلت کا خاتمہ چیلنج تا اور موجودہ حکومت نے اس پر قابو پایا، منصوبوں کی بروقت تکمیل بھی چیلنج تھا جسے حکومت نے پورا کیا، فخر ہے کہ آج ملک کی باگ دوڑ انجینئرز کے ہاتھ میں ہے۔