بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / حدیبیہ ریفرنس ٗ نیب کی اپیل پر سپریم کورٹ کا 3 رکنی بینچ قائم

حدیبیہ ریفرنس ٗ نیب کی اپیل پر سپریم کورٹ کا 3 رکنی بینچ قائم


اسلام آباد۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے قومی احتساب بیورو (نیب) کی اپیل پر شریف برادران کے خلاف حدیبیہ پیپر ملز ریفرنس کی سماعت کے لیے 3 رکنی بینچ تشکیل دے دیا۔بینچ کی سربراہی جسٹس آصف سعید کھوسہ کریں گے، دیگر ارکان میں جسٹس دوست محمد اور جسٹس مظہر خیل عالم میاں خیل شامل ہیں۔سپریم کورٹ کا 3 رکنی بینچ 13 نومبر کو پہلی سماعت کرے گا۔اس حوالے سے سپریم کورٹ کے رجسٹرار آفس کی جانب سے نیب پراسکیوٹر جنرل کو نوٹس جاری کردیا گیا ہے۔

نیب نے حدیبیہ پیپر ملز کیس کھولنے کیلئے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرد ی واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے پاناما کیس پر نظرثانی اپیلوں کے فیصلے میں نیب کو ایک ہفتے کے اندر حدیبیہ پیپر ملز کیس کھولنے کی ہدایت دی تھی جس پر نیب حکام نے عدالت کو کیس پر اپیل دائر کرنے کی یقین دہانی کرائی تھی۔بعدازاں نیب نے حدیبیہ پیپرملز کیس کو دوبارہ کھولنے کے لیے سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی جو لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف دائر کی گئی تھی۔

نیب کی جانب سے دائر اپیل میں سابق وزیراعظم نواز شریف، وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف اور ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز کو فریق بناتے ہوئے درخواست میں استدعا کی گئی کہ پاناما کیس کی تحقیقات کرنے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کی رپورٹ میں نئے شواہد سامنے آئے ہیں، جن پر تحقیقات ہونی چاہیے۔درخواست میں استدعا کی گئی تھی کہ عدالت عظمیٰ ہائیکورٹ کے فیصلے کے خلاف کارروائی کرے جس میں عدالت عالیہ کے دو ججوں کے درمیان اس کیس پر فیصلہ ٹائی ہوا تھا اور تیسرے ریفری جج نے کیس ختم کرنے کا کہا تھا۔

نیب کی جانب سے مزید کہا گیا تھا کہ اس معاملے میں کچھ چیزیں ضروری ہے جن کی نیب تحقیقات کرنا چاہتا ہے۔ یا د رہے کہلاہور ہائیکورٹ نے مارچ 2014 میں حدیبیہ پیپرز ملزکیس میں نیب کی تحقیقات کو کالعدم قرار دیدیا تھا جب کہ یہ معاملہ پاناما پیپرز کیس کی سماعت میں بھی زیر بحث آیا تھا۔ حدیبیہ پیپرز ملز کے مقدمے میں وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے اعترافی بیان دیا تھا اْنھوں نے کہا تھا کہ وہ شریف برادران کے لیے منی لانڈرنگ میں ملوث تھے۔

اکتوبر 1999 میں فوجی بغاوت کے بعد اس وقت کے آرمی چیف جنرل پرویز مشرف نے وزیراعظم نواز شریف کے خاندان کے خلاف کرپشن کے 3 ریفرنسز دائر کیے تھے جن میں سے ایک حدیبیہ پیپر ملز کیس بھی تھا۔ 2014 میں لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد احتساب عدالت نے اس ریفرنس کو خارج کردیا تھا۔ تاہم جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بینچ کی جانب سے پاناما کیس کی سماعت کے دوران حدیبیہ ریفرنس کا معاملہ دوبارہ سامنے آگیا۔