بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / اقتدار میں آکر خود فائدہ اٹھاؤ نگا نہ کسی کو اٹھانے دونگا ٗعمران خان

اقتدار میں آکر خود فائدہ اٹھاؤ نگا نہ کسی کو اٹھانے دونگا ٗعمران خان


لاہور۔پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اقتدار میں آکر خود فائدہ اٹھاؤ ں گا اور نہ کسی کو اٹھانے دوں گا ،شمولیت اختیا ر کرنے والے اورٹکٹ کے خواہشمند اچھی طرح سوچ لیں کسی کو بھی ترقیاتی فنڈز نہیں ملیں گے بلکہ انہیں بلدیاتی اداروں کے ذریعے خرچ کیا جائے گا ،آصف زرداری اور نواز شریف لوگوں کو نظریے کیلئے ساتھ نہیں ملاتے بلکہ انہیں پیسے کے بل بوتے پر خریدتے ہیں۔

ان خیالات کااظہار انہوں نے سابق وزیر خارجہ سردار آصف احمد علی کی رہائشگاہ پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر سیکرٹری جنرل جہانگیر ترین ، پنجاب کے صدر عبد العلیم خان، شعیب صدیقی ،عظمیٰ کاردار سمیت دیگر بھی موجود تھے۔ اس موقع پر سردار آصف احمد علی نے اپنے ساتھیوں سمیت دوبارہ تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا ۔ عمران خان نے سردار آصف احمد علی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اب آپ کو ہم سے مایوسی نہیں ہوگی ۔

انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کے اقتدار میں آنے سے پہلے اور اقتدار میں آنے کے بعد کے اثاثوں کا جائزہ لیں سب واضح ہو جائے گا،دس سالوں میں ایک فیکٹری سے تیس فیکٹریاں ہو گئی ہیں ۔ یہ چاہتے ہیں کہ قبضہ گروپ اور کنٹریکٹر سیاست میں آجائیں اور ان کے ساتھ مل ملا کر منصوبے کریں ۔ آج آپ بڑے بڑے نام دیکھ لیں جواقتدار میں آنے سے پہلے کیا تھے اور آج کیا ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اب ملک میں پرانی اور روایتی سیاست نہیں چلے گی ۔جو بھی پی ٹی آئی میں آئے گا وہ اپنے لئے نہیں بلکہ ملک کے لئے کھیلے گا ۔

تبدیلی آئے گی اور میرے سے شروع ہو گی ۔ انہوں نے کہا کہ چار سال سے خیبر پختوانخواہ میں حکومت میں ہیں لیکن ایک فیکٹری بھی نہیں لگائی ،بینک آف خیبر سے کوئی قرضہ لیا اور نہ رشتہ داروں نے کوئی فائدہ اٹھایا ،ان چار سالوں میں درجہ چہارم کا ایک ملازم بھی بھرتی نہیں کرایا ۔ اس لئے جو میں کروں گا میں توقع رکھتا ہوں میری ٹیم بھی وہی کرے ۔ اقتدار سے خود فائدہ اٹھاؤں گا اور نہ کسی کو فائدہ اٹھانے دوں گا ۔ انہوں نے کہا کہ آج پوری قوم سیاستدانوں کو برا بھلا کہتی ہے اور اس کی وجہ یہ ہے کہ سیاستدان قیادت کر رہے ہوتے ہیں اس لئے لیڈروں کو شفافیت کی مثال بننا ہوگا ۔

انہوں نے کہا کہ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی ترقیاتی فنڈز کے نام پر اراکین اسمبلی کو 94ارب روپے دے رہے ہیں جبکہ خیبر پختوانخواہ کے پورے صوبے کا ترقیاتی فنڈ 100ارب روپے ہے ،دنیا کی کسی جمہوریت میں ایسا نظام نہیں ہے کہ اراکین اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز دئیے جائیں بلکہ یہ بلدیاتی اداروں کا کام ہوتا ہے ۔ آصف زرداری اور نواز شریف نظریے کے لئے لوگوں کو ساتھ نہیں ملاتے بلکہ انہیں پیسے کے بل بوتے پر خریدا جاتاہے ،کرپشن اوپر سے شروع ہوتی ہے ۔ہم نئی روایت ڈالیں گے جب انشا اللہ ہماری باری آئے گی تو ہم کسی رکن قومی یا صوبائی اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز نہیں دیں گے بلکہ یہ نیچے بلدیاتی اداروں کے پاس جائیں گے ۔

اپنے تجربے کی بنیا دپر آئندہ بلدیاتی نظام میں ضلع ناظم کا انتخاب برطانیہ کے ماڈل کو دیکھتے ہوئے براہ راست کرایا جائے گا ۔ یہاں پنجاب میں صرف ایک شخص وزیر اعلیٰ پنجاب سارے فیصلے کرتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بہت سے لوگ پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کرنا چاہتے ہیں لیکن میں تمام لوگوں اور ٹکٹ کے خواہشمندوں کو بھی بتانا چا ہتا ہوں کہ سوچ لیں حکومت میں آ کر کسی کو ترقیاتی فنڈز نہیں ملیں گے۔

انہوں نے کہا کہ یہاں حکمرانوں نے اپنے مفادات کیلئے اداروں کو تباہ کیا ،جب ہم قائد اعظم کے پاکستان کی بات کرتے ہیں تو ادارے مضبوط ہوں اور شخصیت اداروں کو کنٹرول نہ کرے ۔حکمرانوں نے اپنے مفادات کیلئے ذاتی نوکروں کوتعینات کر رکھا ہے ۔ قبل ازیں سردار آصف احمد علی نے کہا کہ مجھے بے پناہ خوشی ہے کہ آج خان اعظم میر ے غریب خانے پر تشریف لائے ہیں ۔میں نے چار سال پہلے بھی پی ٹی آئی میں شمولیت اختیار کی تھی لیکن کچھ غلط فہمیاں ہو گئی تھیں او ریہ سیاست میں بڑی بات نہیں ۔ میں نے اس وقت ہی فیصلہ کیا تھاکہ اگر سیاست کروں گا تو تحریک انصاف کے پلیٹ فارم سے کروں گا وگرنہ نہیں کروں گا۔

انہوں نے عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ خان صاحب ہم چار سال آپ کے منتظر رہے اور انتظار کرتے رہے ہم ہر روز پی ٹی آئی میں شامل ہونے کے لئے تیار تھے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان واحدلیڈر ہیں جن کے دامن پر کوئی دھبہ نہیں اور عمران خان نے ڈوبتے ہوئے پاکستان کو بچایا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جو پوچھتے تھے مجھے کیوں نکالا اب انہیں خوب سمجھ آ گئی ہو گی ان کی جگہ اب اڈیالہ جیل ہے۔