بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / میاں صاحب جمہوریت کیخلاف ہر سازش میں شامل رہے ‘ بلاول

میاں صاحب جمہوریت کیخلاف ہر سازش میں شامل رہے ‘ بلاول


لاہور۔ پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ اگرمیاں صاحب کی 30سال کی سیاسی تاریخ دیکھ لی جائے تو وہ جمہوریت کے خلاف ہونے والی ہر سازش میں شامل رہے ہیں ،مولانا فضل الرحمن ،نواز شریف کے دفاع میں زیادہ دور چلے گئے ہیں، انکی اپنی جماعت ہے وہ اسے دیکھیں ، حلقہ بندیوں کے حوالے سے آئینی بحران پیدا ہو رہا تھا ، مشترکہ مفادات کونسل کے اجلاس میں پیپلز پارٹی کے تحفظات دور کرنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے ،کچھ لوگ چاہتے ہیں کہ انتخابات نہ ہوں لیکن انتخابات اپنے مقررہ وقت پر ہوں گے ،(ن) لیگ کی قیادت سے ملاقات کرنے کا کوئی امکان نہیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے سینئر صحافی منو بھائی کی عیادت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔

اس موقع پر پنجاب کے صدر قمر زمان کائرہ ، لاہور کے صدر عزیز الرحمن چن سمیت دیگر بھی موجود تھے ۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ میاں نواز شریف کی 30سال کی سیاسی تاریخ دیکھ لیں تو میری نظر میں ان کے لئے دلیل دینا تھوڑا مشکل ہے ۔ اس عرصے میں جمہوریت کے خلاف جتنی بھی سازشیں ہوئی میاں صاحب اس میں شامل رہے ہیں ۔ آج دیکھ لیں پیپلزپارٹی اور (ن) لیگ کے جو سیاستدان ہیں ان کے کیسز پر جس طرح عملدرآمد کیا جارہا ہے وہ سب کے سامنے ہے ۔ پیپلز پارٹی کے وزرائے اعظم یوسف رضا گیلانی اور راجہ پرویز اشرف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں شامل رکھا گیا انہیں بار بار نیب کے سامنے پیش ہونا پڑا ۔ ہم کہتے ہیں اگر الزام ہیں تو ہم ان کا سامنا کریں گے لیکن شرجیل میمن ، نواز شریف اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کے کیس میں جو تفریق برتی گئی وہ سب نے دیکھی ہے ۔ ہمارا واضح موقف ہے کہ (ن ) لیگ ، پیپلز پارٹی بلکہ پی ٹی آئی کے کیسز میں بھی فرق نہیں ہونا چاہیے اور قانون سب کے لئے برابر ہونا چاہیے ۔

بلاول بھٹو نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ مولانا فضل الرحمن کا میں بہت احترام کرتا ہوں لیکن وہ نواز شریف کے دفاع میں زیادہ دور چلے گئے ہیں ، وہ نواز شریف کے مسئلے کو چھوڑیں اور اپنی پارٹی کو دیکھیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ مجلس وحدت المسلمین کے رہنما راجہ ناصر کی سربراہی میں وفد نے ملاقات کی ۔ ہم ایم ڈبلیو ایم کے رہنما ناصر شیرازی کو اٹھائے جانے کی شدید مذمت کرے ہیں اور پنجاب حکومت سے مطالبہ ہے کہ ناصر شیرازی کو تلاش کیا جائے اس طرح اغواء نہیں ہونا چاہیے بلکہ اگر کسی پر الزام ہے تو اسے عدالتوں کے سامنے پیش کرنا چاہیے ۔ (ن) لیگ والے جمہوریت کی بات کرتے ہیں توپنجاب میں بھی جمہوریت ہونی چاہیے ۔ انہوں نے کہا کہ مردم شماری کو (ن) لیگ نے خو دمتنازعہ بنایا ۔کراچی سے فاٹا تک اس پر اعتراضات اٹھائے گئے لیکن حکومت کی طرف سے مطمئن کرنے کے لئے ایک قدم نہیں اٹھایا گیا۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے حکومت سے کہا تھاکہ مردم شماری کے نتائج کو صوبوں کے ساتھ شیئر کیا جائے لیکن یہ نہیں کیا گیا ۔ سندھ حکومت نے سینیٹ میں معاملہ اٹھایا تو کہا گیا کہ ایک فیصد بلاک کو دوبارہ چیک کیا جائے گا ۔ حلقہ بندیوں کے معاملے میں ہونے والی تاخیر کی ذمہ دار بھی (ن) لیگ ہے ۔ مشترکہ مفادات کونسل میں ہم نے تحفظات اٹھائے ہیں اور ہمیں کہا گیا کہ ایک فیصد بلاک کو چیک کر رہے ہیں ،ہم الیکشن کے بعد بھی اس معاملے کو دیکھیں گے۔ انہوں نے کہا کہ عام انتخابات مقررہ وقت پر ہوں گے ۔ ہمار ے دورمیں بھی کہا گیا کہ حکومت اپنی مدت پوری نہیں کرے گی ، نگراں حکومت کی مدت تین سال بڑھ جائے گی لیکن پھر سب نے دیکھا کہ نہ صرف بروقت انتخابات ہوئے بلکہ ایک سویلین حکومت سے دوسری سویلین حکومت کو پر امن انتقال اقتدار بھی ہوا ۔ یقیناًکچھ لوگ چاہتے ہیں کہ انتخابات نہ ہوں لیکن ان کی خواہش پوری نہیں ہو گی ۔

انہوں نے کہا کہ (ن ) لیگ پارلیمنٹ میں اکثریت رکھتی ہے لیکن پھر بھی کورم پورا نہیں رکھ سکتی ۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اپنے نظریے پر کھڑی ہے ، آصف علی زرداری نے دورہ لاہور کے موقع پر پارٹی کارکنوں ، رہنماؤں اور ٹکٹ ہولڈرز سے ملاقات کی ۔ جہاں تک ذوالفقار کھوسہ سے ملاقات کا تعلق ہے تو اگر کوئی شخصیت (ن) لیگ سے مایوس ہے تو اس سے ملاقات میں کوئی حرج نہیں ۔انہوں نے نواز شریف سے کسی ملاقات کے امکان کے حوالے سے سوال کے جواب میں کہا کہ اس کا کوئی امکان نہیں ہے ۔ انہوں نے رانا آفتاب کے پیپلز پارٹی کو خیر باد کہنے کے سوال کے جواب میں کہا کہ میں انفرادی کسی کی بات نہیں کروں گا لیکن سچ سامنے آ جائے گا ۔ جب محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت ہوئی تو اس وقت بھی بہت سے انکلز نے ہمیں چھوڑا تھا ،ا ب بھی کچھ انکلز چھوڑ رہے ہیں لیکن کارکن او رجیالے میرے ساتھ ہیں اور میں بھی ان کے ساتھ خوش رہتا ہوں ۔

قبل ازیں چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری سے لاہور سے قومی اسمبلی کے ٹکٹ ہولڈر بیرسٹر عامر حسن نے ملاقات کی ۔ اس موقع پر صدر پیپلز پارٹی وسطی پنجاب قمر الزمان کائرہ بھی موجودہ تھے ۔ ملاقات میں پارٹی امور اور مستقبل کے لائحہ عمل پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ بلاول بھٹو نے کہا کہ ہم اپنے کارکنوں کے ساتھ رابطے بحال کر رہے ہیں ،نوجوان قیادت کو آگے آنا چاہیے ،جلد یونیورسٹیز اور تعلیمی اداروں کا دورہ کروں گا۔انہوں نے کہا کہ ہمیں پارٹی کے دیرینہ ساتھیوں کو ساتھ لے کر چلنا ہے،پنجاب ہمارا گڑھ ہے ہر کونے میں جیالا بستہ ہے اور میرے خاندان کی یادیں ان جیالوں کے ساتھ وابستہ ہیں،بے نظیر شہید اور ذولفقار شہید کے ساتھیوں سے مل کر خوشی ہوتی ہے ۔

بلاول بھٹو سے مجلس وحدت مسلمین کے وفد نے راجہ ناصر کی قیادت میں ملاقات کی جس میں ایم ڈبلیو ایم کے رہنما ناصر شیرازی کی اغواء کے معاملے پر بات چیت کی گئی ۔ اس موقع پر پیپلز پارٹی فیصل آباد کے صدر حسن مرتضی بھی موجود تھے ۔ بلاول بھٹو نے وفد کو ناصر شیرازی کی بازیابی کیلئے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کروانے کے ساتھ وفاقی اور پنجاب حکومت سے ناصر شیرازی کی بازیابی کا مطالبہ کیا ۔بعد میں چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو نے پارٹی کے کارکن دلاور بٹ کے گھر جا کر عیادت کی ۔ انہوں نے دلاور بھٹی کی خدمات کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ پیپلزپارٹی ایک خاندان ہے ،پارٹی جیالے ہمارا اثاثہ ہیں اور دلاور بٹ بھی پارٹی کا اثاثہ ہیں۔