بریکنگ نیوز
Home / اداریہ / بھارت کے جارحانہ اقدامات

بھارت کے جارحانہ اقدامات


دفتر خارجہ کے ترجمان نے واضح کیا ہے کہ پاکستان بھارت سے جموں وکشمیر سیاچن اور سرکریک سمیت تمام مسائل پر بات چیت کیلئے تیارہے بھارت کے جارحانہ اقدامات علاقائی امن کیلئے نقصان دہ ہیں پاک فوج خطے میں کسی بھی مہم جوئی کا جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہے۔ بھارت کی جانب سے کروز میزائل کے تجربے پر کوئی پیشگی اطلاع نہیں دی گئی تھی۔ بھارت کی جانب سے میزائل پروگرام کیلئے بجٹ میں اضافہ اور اسلحے کے ذخائر بڑھانے سے خطے میں ہتھیاروں کی دوڑ میں اضافہ ہوگا اس سب کیساتھ پاکستان مسئلہ کشمیر پر اپنے موقف سے پیچھے نہیں ہٹ سکتا جبکہ بھارت کی جانب سے مختلف بیانات میں چین پاکستان اقتصادی راہداری منصوبے کے خلاف اس کی خفیہ ایجنسی را کے سیل کی تصدیق ہوتی ہے دوسری جانب یہ بات بھی ریکارڈ پر موجود ہے کہ رواں برس بھارت نے لائن آف کنٹرول کی1300 سے زائد مرتبہ خلاف ورزیاں کی ہیں گزشتہ روز بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو دفتر خارجہ طلب کرکے چڑی کوٹ میں بلااشتعال فائرنگ اور اس کے نتیجے میں ایک خاتون کے شہید ہونے پر احتجاج بھی نوٹ کرایاگیا۔

پاکستان بھارت کی جانب سے انسانی حقوق کی مسلسل خلاف ورزیوں کی بھرپور مذمت کے ساتھ جنیوا میں انسانی حقوق کونسل میں رپورٹ بھی پیش کرچکا ہے اس موقع پر117 سے زائد ممالک کی نمائندگی موجود تھی دوسری جانب اس حقیقت سے بھی انکار ممکن نہیں کہ پاکستان افغانستان کے حالات سے بھی متاثر چلا آرہا ہے اس کے ساتھ دفتر خارجہ کے ترجمان ایک بار پھر کلیئر کرتے ہیں کہ پاکستان اپنی ہمسائیگی میں ایک پرامن اور معتدل افغانستان چاہتا ہے۔ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ امریکی سینٹ کام کے کمانڈر جنرل جوزف ووٹل کے ساتھ بات چیت میں کہتے ہیں کہ افغانستان میں قیام امن پاکستان کیلئے کسی بھی دوسرے ملک سے زیادہ اہم ہے۔ امریکی سینٹ کام کمانڈر جنرل جوزف ووٹل انسداد دہشتگردی کیلئے پاکستان کی کوششوں کو سراہتے بھی ہیں اس سے ایک روز قبل قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس میں دشمن ایجنسیوں کی پاکستان مخالف سرگرمیوں پر تشویش کا اظہار کیاگیاعالمی منظرنامے اور خطے کی صورتحال میں پاکستان کا موقف اور کردار واضح ہے جس کا ہر پلیٹ فارم پر برملا اظہار بھی کیاجا رہا ہے ضرورت اس بات کی ہے کہ عالمی برادری صورتحال کا ادراک کرتے ہوئے پاکستانی موقف کو سپورٹ کرے۔

مہنگائی کا نوٹس؟

ڈپٹی کمشنر پشاور نے سبزیوں اور پھلوں کے بڑھتے ہوئے نرخوں کا نوٹس لیتے ہوئے سکواڈ تشکیل دے دیا ہے سپیشل سکواڈ روزانہ سبزی و فروٹ منڈیوں میں نرخوں کا تعین کرے گا صوبائی دارالحکومت کی مارکیٹ میں شدید مہنگائی نے شہریوں کو اذیت میں مبتلا کر دیا ہے۔ ایسے میں انتظامیہ مختصر وقفوں سے بعض اقدامات کا اعلان کر دیتی ہے جو اس ضمن میں احساس وادراک کے عکاس ضرور ہیں تاہم ایڈمنسٹریشن کے پاس عمل درآمد کیلئے میکنزم اور افرادی قوت کا فقدان بھی ایک حقیقت ہے سپیشل سکواڈ اگر منڈیوں میں نرخنامے کا جائزہ لے بھی لیتا ہے تو ضرورت اوپن مارکیٹ میں اس پر عملدرآمد چیک کرنے کے انتظام کی بھی ہے۔ دارا لحکومت کے گلی کوچوں میں سبزی اور پھل فروشوں کو چیک کرنا کسی دفتر کے بس کا کام نہیں اس کیلئے کمیونٹی کو شریک کرنا ہوگا اور پرائس ریویو کمیٹیوں کو یونین کونسلوں کی سطح پر تشکیل دینا ہوگا۔