بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا میں جرائم کی شرح 10سال کی کم ترین سطح پر

خیبر پختونخوا میں جرائم کی شرح 10سال کی کم ترین سطح پر


پشاور۔انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبر پختونخواصلاح الدین خان محسود نے کہا ہے کہ پولیس کی پیشہ ورانہ محنت کے نتیجے میں صوبے میں جرائم کی شرح گزشتہ دھائی میں کم ترین سطح پر ہے پولیس کی کاوشوں کاثمرہے کہ پختونخوا میں رواں برس دہشت گردی کا کوئی بڑا واقعہ پیش نہیںآیا 27 اکتوبر کو ڈیرہ اسماعیل خان میں پیش آنیوالے واقعے کا مقدمہ بلا تاخیراسی روز درج ہوامدعی کی جانب سے عدالتی بیان میں9 افراد کو نامزد کیا گیا اوراگلے ہی روز 28 اکتوبر کومقدمے میں نامزد 9میں سے 7افراد گرفتار کئے 48گھنٹوں میں آٹھواں ملزم بھی تحویل میں لے لیا گیا جبکہ رہ جانے والے ملزم کوبھی جلد گرفتا ر کرکے عدالت کے روبرو پیش کرینگے ۔

میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے آئی جی پولیس کا کہنا تھا کہ زیر حراست ملزمان میں سے 3نے عدالت کے روبرو اپنے جرم کا اعتراف کیا ہے ،ملزمان کو گرفتار کرنے کے بعد ان کے موبائل فونز بھی تحویل میں لے لئے گئے تاہم تفتیش کے دوران موبائل فونز سے کسی قسم کی ویڈیو حاصل نہیں ہوئی انہوں نے کہا کہ اگر کسی شخص کے پاس مقدمے کے حوالے سے کوئی مواد ہوا تو وہ اہم ثابت ہوگا جبکہ یہ تاثر بھی درست نہیں کہ واقعے میں ملوث بعض افراد کو مقدمے میں نامزد نہیں کیاگیا۔

انہوں نے کہا کہ جن3افراد پر ملزمان کی پشت پناہی کا شبہ ظاہر کیا گیا ان پر بھی مقدمہ درج ہے جبکہ مدعی کی تسلی کیلئے متعلقہ تھانیدارکا تبا دلہ کئی روز قبل عمل میں آچکا ہے صوبائی کا بینہ کے کسی بھی رکن نے مقدمے پر اثرانداز ہونے کی کوشش کی نہ اس کی اجازت دیں گے آزادانہ اور پیشہ ورانہ انداز میں معاملہ منطقی انجام تک پہنچائیں گے جبکہ معاملے میں ملوث افراد کو قانون کی روشنی میں جرم کی نوعیت اور حیثیت کے مطابق سزا ملے گی۔