بریکنگ نیوز
Home / انٹرنیشنل / اپنی سرزمین دہشت گردی کیلئے استعمال نہیں ہونے دینگے ،شاہد خاقان عباسی

اپنی سرزمین دہشت گردی کیلئے استعمال نہیں ہونے دینگے ،شاہد خاقان عباسی


سوچی/اسلام آباد۔وزیراعظم شاہدخاقان عباسی نے کہا ہے کہ پاکستان کسی کواپنی سرزمین دہشت گردی کے لئے استعمال نہیں کرنے دے گا، پاکستان خطے اور عالمی معاشی ترقی کے خلاف دہشت گردی، علیحدگی پسندی اور انتہاپسندی کے خطرات سے آگا ہ ہے،ہم نے دہشت گردی کے باعث 6 ہزار 500 فوجی اور قانون نافذ کرنے والے اہلکاروں سمیت ہزاروں جانیں گنوائیں ہیں اور ہماری معیشت کو 120 بلین ڈالر کے نقصان کا سامنا کرنا پڑا لیکن یہ صرف ہماری دہشت گردی کے خلاف جنگ کو مضبوط کرنے کے لیے خدمات ہیں،سیاست کو خطے کی معاشی ترقی اور منصوبوں سے منسلک علاقائی رابطوں سے الگ رکھنا چاہیے۔

پاکستان چین پاکستان اقتصادی راہداری کو تنظیم کی چھ بڑی تجارتی راہداریوں سے منسلک کرنے کا خواہشمند ہے۔گزشتہ روز روس کے شہر سوچی میں شنگھائی تعاون تنظیم کے کونسل برائے ریاستی سربراہان کے 16 ویں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ پاکستان میں شنگھائی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کیلئے باہمی ا ور مفید تعاون کے بے پناہ مواقع موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تنظیم کی مکمل رکنیت کادرجہ ملنے کے بعد پاکستان اسے مزید موثر اور فعال بنانے کیلئے پرعزم ہے کیونکہ اس فورم میں عالمی وعلاقائی تجارت اوراقتصادی سرگرمیوں کے شاندار امکانات ہیں۔وزیراعظم نے خطے میں ترقی کے کئی منصوبوں کو سیاست کی نذر کرنے والی طاقتوں کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ‘ہم خطے کے معاشی منصوبوں کو سیاست کی نذر کرنے والوں کو متنبہ کرتے ہیں کیونکہ ایسے اقدامات ہماری مشترکہ ترقی کو پیچھے لے جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ دنیا مشرقی خطے کی جانب سے ابھرنے والی عالمی ترقی کی صلاحیت کی حامل تبدیلی سے گزر رہی ہے، چین پاکستان اقتصادی راہداری ایک خطہ ایک سڑک منصوبے کاآغاز ہے اور یہ شنگھائی تعاون تنظیم کے روابط اور اقتصادی تعاون کے فروغ پر مبنی منشور کیلئے بڑامعاون ثابت ہوگا۔وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان چین پاکستان اقتصادی راہداری کو تنظیم کی چھ بڑی تجارتی راہداریوں سے منسلک کرنے کا خواہشمند ہے جس سے یورپ، وسطی ایشیا، چین اور جنوبی ایشیا کے درمیان زمینی اورسمندری رابطوں کے قیام کے دیرینہ ہدف کے حصول میں مدد ملے گی۔

شاہد خاقان عباسی کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان توانائی کے شعبے میں علاقائی روابط کے فروغ کیلئے کاسا1000 اورتاپی پائپ لائن منصوبے پر بھی کام کررہاہے، وزیراعظم نے اس بات پر زوردیا کہ شنگھائی تعاون تنظیم کو بین الاقوامی قانون کے احترام اورایک دوسرے کے داخلی معاملات میں عدم مداخلت پرمبنی اقوام متحدہ کے منشور کے مطابق منصفانہ اور منطقی عالمی نظام کے قیام کیلئے اپنا کردار جاری رکھناچاہیے۔

انہوں نے کہاکہ طویل مدتی ہمسائیگی، دوستی اور تعاون ایس سی او کا چارٹر ہے جو ہمارے مشترکہ مفادات اور اعتماد کے وژن کو آگے بڑھانے میں معاون ہوسکتا ہے۔شاہد خاقان عباسی نے تنظیم کے اراکین پر زور دیا کہ وہ خطے کے انفراسٹرکچر اور شاہراہیں، میری ٹائم، فضائی اور آئی ٹی کے میدان میں ترقی کے لیے تعاون کو بڑھائیں۔