بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / این ٹی ایس ایچ ای سی کی طرف سے منظور شدہ نہیں ہے، ہائرایجوکیشن کمیشن

این ٹی ایس ایچ ای سی کی طرف سے منظور شدہ نہیں ہے، ہائرایجوکیشن کمیشن


اسلام آباد ۔ہائرایجوکیشن کمیشن نے کہا ہے کہ این ٹی ایس لازمی ٹیسٹنگ باڈی کے طور پرایچ ای سی کی طرف سے منظور شدہ نہیں ہے،یونیورسٹیوں اور تعلیمی اداروں کی اپنی صوابدید ہے کہ وہ این ٹی ایس کے ساتھ مزید ٹیسٹنگ کا معاہدہ کریں یا نہ کریں۔ہائرایجوکیشن کمیشن نے عوام الناس کو مطلع کیا ہے کہ 23 جنوری 2014ء کو لاہور ہائیکورٹ نے دائر پٹیشن کا حتمی فیصلہ جاری کر دیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ نیشنل ٹیسٹنگ سروس (این ٹی ایس) ہائر ایجوکیشن کمیشن کی طرف سے لازمی ٹیسٹنگ باڈی کے طور پر منظور شدہ نہیں ہے اور این ٹی ایس اور ایچ ای سی کے درمیان معاہدہ 31 جنوری 2015ء کو ختم ہو چکا ہے اور اب ایچ ای سی نے این ٹی ایس کے ساتھ کوئی مزید معاہدہ نہیں کیا۔

اس لئے عوام الناس کو مطلع کیا جاتا ہے کہ یہ تاثر غلط ہے کہ این ٹی ایس ہائر ایجوکیشن کمیشن کی طرف سے تصدیق شدہ ٹیسٹنگ باڈی ہے اور اب یہ یونیورسٹیوں اور تعلیمی اداروں کی اپنی صوابدید ہے کہ وہ این ٹی ایس کے ساتھ مزید ٹیسٹنگ کا معاہدہ کریں یا نہ کریں۔ ایچ ای سی کے مطابق این ٹی ایس ایچ ای سی کے آرڈیننس 2002ء کے تحت منظور شدہ ٹیسٹنگ کا ادارہ نہیں ہے۔

اس لئے یونیورسٹیاں اور وہ اکیڈمک انسٹیٹیوشنز کسی بھی قانون کے تحت این ٹی ایس کے ذریعے ٹیسٹ کرانے کے پابند نہیں ہیں اور نہ ہی کسی بھی قسم کے داخلوں اور وظائف کے لئے این ٹی ایس کے نتائج کے پابند ہیں۔ اسی طرح سے ہائیکورٹ کے فیصلے کے تحت ایچ ای سی باقاعدہ قانون سازی سے قبل کسی ادارے کو ٹیسٹنگ کے کسی ادارے سے ٹیسٹ کروانے کا پابند نہیں کروا سکتی۔ اسی طرح طرح سے این ٹی ایس اپنے آپ کوایچ ای سی سے منظور شدہ ٹیسٹنگ سروس نہیں کہہ سکتی۔