بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / پاکستان کی کشمیر پالیسی میں تبدیلی آئی ہے نہ آئے گی ، نفیس ذکریا

پاکستان کی کشمیر پالیسی میں تبدیلی آئی ہے نہ آئے گی ، نفیس ذکریا

اسلام آباد۔ ترجمان دفتر خارجہ نفیس ذکریا نے واضح کیا ہے کہ پاکستان کی کشمیر پالیسی میں تبدیلی آئی ہے نہ آئے گی مسئلہ کشمیر دونوں ملکوں کے درمیان بنیادی تنازعہ ہے اس کے حل کے بغیر دیگر مسائل ثانوی حیثیت کے حامل ہیں عالمی برادری کشمیریوں کے ساتھ کیے گئے اپنے حق خود ارادیت کے وعدے کو پورا کرے پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل تک ہر فورم پر اٹھاتا رہے گا ،ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ کشمیر پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں آئی ہماری ایک ہی پالیسی ہے کہ مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق حل ہونا چاہیے کیونکہ اقوام متحدہ کی قرادادوں میں کشمیریوں کو حق خود ارادیت دینے کا وعدہ کیا گیا ہے۔

مگر بھارت اس مسئلے کے حل کی راہ میں رکاوٹ ہے انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشمیر ہی مرکزی تنازعہ ہے جب تک یہ مسئلہ حل نہیں ہو گا بھارت کے ساتھ کوئی مسئلہ حل نہیں ہو سکتا ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ پاکستان دو طرفہ مذاکرات سے مسئلہ کشمیر کا پرامن حل چاہتا ہے بھارت کی جانب سے مذاکرات سے انکار پر ہم دنیا کی توجہ اس طرف دلواتے ہیں کہ تالی ایک ہاتھ سے نہیں بجتی پاکستان کی تمام تر کوششوں کے باوجود بھارت مذاکرات کی میز پر نہیں آرہا بھارت کی جارحیت سے خرابیاں پیدا ہو رہی ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ اگر ہماری کشمیر پالیسی موثر نہ ہوتی تو بھارت مضطرب نہ ہوتا پاکستان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں صرف کشمیر پر فوکس کیا جس پر بھارت نے تنقید بھی کی اسی دوران اڑی کا نام نہاد واقعہ ہوا اب دیکھنا یہ ہے کہ اس واقعہ کا فائدہ کس کو ہوااس واقعہ سے دنیا کی توجہ کشمیر سے ہٹ کر اس جھوٹے واقعہ کی طرف چلی گئی ترجمان نے کہا کہ اس وقت کشمیریوں کو ہماری سخت یکجہتی کی ضرورت ہے کشمیریوں کے ساتھ دن رات ظلم ہو رہا ہے ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم سب یکجا ہو کر کشمیریوں کی حمایت کریں ہم دنیا کے ہر فورم پر مقبوضہ کشمیر کے حالات کو اجاگر کر رہے ہیں اور دنیا کو باور کرا رہے ہیں کہ کشمیری کس بات کے منتظر ہیں ہمارے دنیا بھر میں قائم مشنز بھی اس سلسلے میں متحرک ہیں۔