276

صوبائی محکموں کے اثاثوں کی حفاظت کیلئے سافٹ ویئر تیار

پشاور۔خیبرپختونخوا انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ کے مختلف محکموں کے اثاثوں کے ریکارڈ کو محفوظ رکھنے کے لئے تیارہ کردہ سافٹ وئیر ’اثاثے‘ کے استعمال اور افادیت کے حوالے سے گزشتہ روز آئی ٹی بورڈ میں ایک روزہ تربیتی ورکشاپ کا انعقاد کیا گیا۔ تربیتی پروگرام میں محکمہ تعلیم، صحت، آرٹی آئی، ہائیرایجوکیشن، سرکاری جامعات اور دوسرے صوبائی محکموں کے متعلقہ افسران اور عملے کو سافٹ وئیر کے استعمال کے حوالے سے ٹریننگ دی گئی۔

  " اثاثے" سافٹ وئیر، خیبر پختونخوا انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ نے چیف سیکرٹری محمد سلیم کی زیرصدارت 12اپریل 2019کو منعقدہ ایک اعلی سطحی اجلاس میں جاری احکامات کے بعد تیار کیا ہے۔ تمام سرکاری ادارے بشمول صوبائی خودمختار ادارے فکسڈ ایسٹس یا اثاثوں کے ریکارڈ کو محفوظ رکھنے کے پابندہیں۔ ادارے یہ ریکارڈ ایک فکسڈ ایسٹس رجسٹر کے اندر درج کرتے تھے۔ ڈی سنٹرلائزڈ اور مینول نظام کی وجہ سے صوبائی حکومت کے لئے اس ریکارڈ کی نگرانی انتہائی مشکل تھی۔

 اس صورتحال کوجدید طرز پر لانے کے لئے آئی ٹی بورڈ نے چیف سیکرٹری خیبرپختونخوا کے احکامات کی روشنی میں ’اثاثے‘ کی شکل میں ایک فکسڈ ایسڈ پلیٹ فارم تیارکیا ہے۔ "اثاثے" کیوآر کوڈ (QR-Code) پر مبنی فکسڈ اثاثوں کی اندارج اور انتظام کا سافٹ وئیر ہے جس سے داروں کے اثاثوں کی مکمل منیجمنٹ کی جاسکتی ہے۔ اس سافٹ وئیر کی مدد سے آسانی کے ساتھ کوئی بھی محکمہ اپنے تمام فکسڈ اثاثوں کا اندراج کرسکتا ہے اور ضرورت کے وقت ادارے میں موجود اثاثوں کی تفصیلات صرف ایک کلک پر حاصل کی جاسکتی ہے۔

 اثاثے کی شکل میں منظم پلیٹ فارم کی بدولت مختلف محکموں میں موجود اثاثوں کی گمشدگی کے امکانات کو بھی ختم کیاجاچکا ہے۔  کے پی آئی ٹی بورڈ کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر ایڈمن مطیع اللہ خان نے تربیتی پروگرام کے شرکاء کو سافٹ وئیر کے استعمال، خوبیوں اور اسکی افادیت کے حوالے سے ٹریننگ دی۔

 ان کا کہنا تھا کہ آئی ٹی بورڈ نے صوبہ بھر کے تمام سرکاری اور خودمختار محکموں کی اثاثے سافٹ وئیر کے حوالے سے ٹریننگ مکمل کرلی ہے اور اگلے چھ ماہ میں صوبے کے تمام محکموں میں اس سسٹم کا نفاذ کیا جائے گا۔ یاد رہے کہ خیبرپختونخوا انفارمشن ٹیکنالوجی بورڈ اثاثے اور اس جیسے دوسرے پلیٹ فارمز کی تیاری صوبے کی ڈیجیٹل ٹرانسفرمیشن کی جانب ایک قدم ہے۔