494

فاٹا کو خیبرپختونخوا میں ضم کرنے کا فیصلہ ملتوی

اسلام آباد: پارلیمنٹ میں وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے (فاٹا) کو خیبر پختونخوا میں ضم کرنے کا معاملہ گزشتہ ایک برس سے زیر بحث ہے تاہم اس متنازع کو آئندہ بننے والی حکومت کے لیے چھوڑ دیا گیا۔

خیال ظاہر کیا جارہا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ (ن) کی حکومت نے یہ فیصلہ آئندہ انتخابات کے تناظر میں اپنی دو اتحادی جماعتیں جمعیت علمائے اسلام (ف) اور پشتونخوا ملی عوامی پارٹی (پی کےمیپ) کی مخالفت سے بچنے کے لیے کیا جارہا ہے۔

واضح رہے کہ جے یو آئی (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن اور پی کے میپ کے صدر محمود خان اچکزئی نے فاٹا کے خیبرپختونخوا میں انضمام کے فیصلے کی شدید مخالفت کرتے ہوئے اسے قبائلی عوام کی امنگوں کے خلاف قراردیا تھا۔

جبکہ اپوزیشن کی 2 بڑی جماعتیں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی ) اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) اس انضمام کے حق میں تھیں۔