308

امریکی سیکرٹری دفاع کی بریفنگ

وطن عزیز کی سیاسی و عسکری قیادت کے مضبوط اور ذمہ دارانہ مؤقف کے نتیجے میں امریکی سیکرٹری دفاع جیمز میٹس دہشت گردی کیخلاف جنگ میں پاکستان کے کردار کو سراہنے کیساتھ یہ بھی تسلیم کر رہے ہیں کہ پاکستان کی قربانیاں نیٹو فورسزسے زیادہ ہیں جیمزمیٹس کا کہنا ہے کہ پینٹاگون پاکستان کی اعلیٰ فوجی قیادت خصوصاً آرمی چیف جنرل قمر جاوید باوجوہ سے رابطے بحال کر رہا ہے ‘ دریں اثناء امریکی ذرائع ابلاغ کا کہناہے کہ پاکستان نیٹو سپلائی کسی بھی لمحے بند کر سکتا ہے نیو یارک ٹائمز کا کہنا ہے کہ امریکی صدر اس بات کے متحمل نہیں ہو سکتے کہ پاکستان کو چھوڑدیں امریکی میڈیا خود صدر ٹرمپ کے فیصلوں کو عجلت کا شکار قرار دے رہا ہے ‘ خبر رساں ایجنسی دوسری جانب نیٹو کنٹینرز کے ٹول ٹیکس میں100 فیصد اضافے کا عندیہ بھی دے رہی ہے جہاں تک امریکہ کے پاکستان کیخلاف بے بنیادالزامات اور دھمکی آمیز بیانات کے جاری سلسلے کا تعلق ہے تو پوری دنیا اسے برسرزمین حقائق کے تناظر میں امریکہ کی افغانستان میں پے درپے ناکامیوں کا ملبہ پاکستان پر گرانے کی سعی لا حاصل ہی قرار دے گی۔

اس بات سے کسی کیلئے انکار ممکن ہی نہیں کہ ہزاروں قیمتی جانوں کی قربانی کیساتھ خطے میں امن کے قیام کیلئے پاکستان کی معیشت برُی طرح متاثر ہوئی ہے خود وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اقتصادی شعبے میں نقصانات کا حجم120 ارب ڈالر بتا رہے ہیں وزیراعظم امریکی امداد کو غیر اہم قرار دینے کیساتھ یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ پچھلے5 سال میں ہمیں سالانہ ایک کروڑ ڈالر کے حساب سے فنڈز ملے افغانستان پر روسی یلغار سے اب تک کے پورے منظر نامے میں پاکستان کا کردار انتہائی واضح اور قابل تعریف رہا ہے پاکستان آج بھی لاکھوں افغان مہاجرین کا میزبان ہے افغانستان میں امن کے قیام کیلئے پاکستان کی کاوشیں کسی سے پوشیدہ نہیں موجودہ حالات میں پاکستان کی سیاسی و عسکری قیادت کے واضح اور دو ٹوک موقف اور خود انحصاری سے متعلق عزم کو ہر سطح پر قابل اطمینان قرار دیاجا رہا ہے تاہم مستقبل میں کسی بھی ممکنہ صورتحال سے نمٹنے کیلئے ہوم ورک مزید بہتر بنانا ہو گا پاکستان کو مؤثر خارجہ حکمت عملی اختیار کرنا ہو گی اس مقصد کیلئے محاذ آرائی پر مبنی سیاسی درجہ حرارت کی شدت کو بھی کم کرنا ہو گا سیاسی معاملات کو سیاسی انداز میں حل کرنے کیساتھ اہم قومی امور کو بھی باہمی مشاورت سے یکسو کرنا ہو گا۔

پیشگی انتظامات کی ضرورت
خیبر پختونحوا میں ایک بار پھر برڈ فلو کے خطرات کی نشاندہی کردی گئی ہے خبررساں ایجنسی کے مطابق لائیو سٹاک کے محکمے نے اس ضمن میں متعلقہ دفاتر کو ضروری الرٹ جاری کیا ہے برڈ فلو مرغیوں کا وائرس ہے جو انسانوں کو بھی متاثر کرتا ہے ہمارے ہاں متعدد معاملات میں ذمہ دار محکمے صرف الرٹ جاری کرنے پراکتفا کرتے ہیں ڈینگی ہو یا برڈ فلو الرٹ جاری کرنے کے ساتھ فوری اقدامات کی ضرورت اپنی جگہ موجود رہتی ہے فلو کے پھیل جانے پر اقدامات مشکل ہوجاتے ہیں جس طرح ڈینگی کے کیس میں مچھروں کے پھیل جانے پر واٹر ٹینکوں کی صفائی شروع ہوئی تاہم اس وقت تک کئی قیمتی جانیں ضائع ہوچکی تھیں برڈ فلوکے خطرات اس بات کے متقاضی ہیں کہ پشاور پہنچنے والی فارمی مرغیوں کو انٹری پوائنٹس پر چیک کیا جائے ساتھ ہی گھر میں مرغیاں پالنے والوں کو ضروری ادویات کی فراہمی بھی یقینی بنائی جائے۔