بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / پاکستان بھارت کے ساتھ جامع مذاکرات اور بہتر تعلقات کا حامی ہے، طارق فاطمی

پاکستان بھارت کے ساتھ جامع مذاکرات اور بہتر تعلقات کا حامی ہے، طارق فاطمی

اسلام آباد۔وزیر اعظم کے معاون خصوصی طارق فاطمی نے کہا ہے کہ پاکستان بھارت کے ساتھ جامع مذاکرات اور بہتر تعلقات کا حامی ہے تاہم ایسے مذاکرات نہیں چاہتا جن سے ہمارے کور ایشو، ہماری سلامتی و خودمختاری پر آنچ آنے کا اندیشہ ہو ہم ایسے مذاکرات چاہتے ہیں جن میں کور ایشو سمیت تمام ایشو زیر بحث آئیں ایک نجی ٹی وی انٹرویو میں طارق فاطمی نے کہا کہ اگر بھارت مذاکرات کے لیے سنجید ہ ہے تو ہم اس کے لیے تیار ہیں پاکستان بھارت کے ساتھ بہتر تعلقات چاہتا ہے مگر اچھے تعلقات مسئلہ کشمیر جیسے کور ایشو کے حل سے ہی ممکن ہیں ۔

اگر بھارت پاکستان کو غیر مستحکم پاکستان میں دہشتگردی کو فروغ دینے اور پاکستان کی معاشی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے کی خواہش رکھتا ہے اس صورت میں تعلقات آگے نہیں بڑھ سکتے انہوں نے کہا کہ پاکستان کشمیر ایشو کا فریق ہے پاکستان کے بغیر مسئلہ کشمیر کا حل ممکن نہیں پاکستان کشمیریوں کی مسئلہ کشمیر کے حل تک اخلاقی سفارتی اور سیاسی حمایت جاری رکھے گاپاکستانی عوام کی خواہش ہے کہ کشمیریوں کو حقوق ملیں انہوں نے کہا کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق چاہتا ہے اور جب تک کشمیریوں کو حق خود ارادیت نہیں مل جاتا ہم اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے اور اس مسئلے کو ہر عالمی فورم پر اٹھاتے رہیں گے انہوں نے کہا کہ کشمیریوں کو ایک سال میں آزادی مل جائے تو یہ حقیقت نہیں انہوں نے کہا کہ ہم نے اپنی خارجہ پالیسی میں بہت کامیابیاں حاصل کی ہیں پاکستان نئے تعلقات بڑھا رہا ہے ہم خارجہ پالیسی میں تمام اسلامی ممالک کے ساتھ تعلقات کو بہت اہمیت دیتے ہیں ہم دو اسلامی ممالک کے اختلافات میں ہرگز پارٹی بنے ہیں نہ خواہش ہے ہماری کوشش یہ رہے گی کہ تمام مسلمان ملکوں میں اتحاد یکجہتی ہو اور ان کے درمیان اختلافات کو کم سے کم کر کے بتدریج ختم کر دیا جائے1947سے قائد اعظم کے متعی متعن اصول پر عمل پیرا ہیں ہم مسلم کازز کو ہر جگہ فروغ دیتے ہیں اور ان کا دفاع کرتے ہیں۔

اسلامی ممالک کے اندرونی معاملات میں دخل نہیں دیتے انہوں نے کہا کہ 2016پاکستان اور بھارت کے تعلقات میں بڑی مشکلات کا سال تھا وزیر اعظم پورے خطے میں امن و تعاون تجارت معاشی تعلقات اور سرمایہ کاری چاہتے ہیں وزیر اعظم کے اس وژن کی امریکہ سمیت دنیا کے تمام ممالک متعرف ہیں ہم بھارت کے ساتھ بات چیت کو جاری رکھنے کے خواہاں ہیں مگر ایسی بات چیت کے بھی حامی نہیں ہیں جس سے ہمارے کور ایشو اور ہماری سلامتی و خودمختاری پر آنچ آئے ہم ایسے مذاکرات کے حامی ہیں جن میں تمام ایشو زیر بحث آئیں انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کسی ایک سے نہیں سب سے مشورہ کرتے ہیں ہم وزیر اعظم کے وژن پر کام کر رہے ہیں پاکستان نے عالمی سطح پر پچھلے تین سال میں 19الیکشن لڑے ہیں جس میں سے 17الیکشن میں کامیابی حاصل کی انہوں نے کہا کہ ہماری خارجہ پالیسی میں نئے نئے تعلقات بنانا ہے کامیاب خارجہ پالیسی یہی ہے کہ نئے دوستوں کو ڈھونڈ کر تعلقات بہتر بنائیں یہ تصور غلط ہے کہ اگر روس سے تعلقات بہتر ہو رہے ہیں تو کسی دوسرے ملک سے خراب ہو رہے ہیں کامیاب خارجہ پالیسی یہی ہے کہ نئے دوست پیدا کریں اور پرانے دوستوں سے تعلقات کو مذید مستحکم بنائیں۔