بریکنگ نیوز
Home / کالم / پانامہ گیٹ کا دراز ہوتا ہوا سایہ

پانامہ گیٹ کا دراز ہوتا ہوا سایہ


کوئی دن، یا چند عشرے، جاتے ہیں جب نوا ز شریف آئی ایس آئی اور د نیاکی دیگر ایجنسیوں کے چہیتے تھے اور اُنہیں پی پی پی سے دودوہاتھ کرنے کیلئے ، تھپکی دے کر میدان میں اتارا جارہا تھا تو سکیورٹی برہان کا بیانیہ تھا کہ پی پی پی ایک سکیورٹی رسک ہے‘ نوا ز شریف و ہمنوا بلاتکان راگ آلاپتے کہ پی پی پی اور پاکستان اکٹھے چل نہیں سکتے ۔ اگر ڈان کے صفحہ اول پر شائع ہونیوالے انکشافات کا تعلق کہیں پی پی پی سے ہوتا تو اس پر جہنم کے دروازے کھل جاتے، نواز شریف کالا کوٹ زیب تن کرکے، جیسا کہ وہ میمو گیٹ کے موقع پر دکھائی دئیے، سپریم کورٹ کے سامنے پیش ہوکر ’’غداری‘‘ پر سخت ترین کاروائی کا مطالبہ کرتے ۔
تاہم پی ایم ایل (ن) کا پنجاب کی پارٹی ہونا ایک ایسا شافی تعویذتھا جو دفع بلیات و قاطع آفات و جملہ مشکلات ثابت ہوتا رہا ۔ ہمارا قومی سلامتی کا معیار ہر جگہ یکساں نہیں۔ سندھ اور بلوچستان میں اس کی پیمائش کاپیمانہ مختلف، پنجاب میں اس کے خدوخال کی پرکھ کا معیار اورتاہم آج یہ معروضات تبدیل ہوتے دکھائی دیتے ہیں، بلکہ کہنے دیجیے کہ ان میں نمایاں تبدیلی واقع ہوچکی ۔ کئی ایک عوامل پنجاب کے پرسکون افق کو برہم کرتے دکھائی دیتے ہیں ۔ رائے ونڈ کے نواب، یا کہنے دیجیے کہ پاناما کے نواب، کے چہروں پر پریشانی کے آثار ہویدا ہیں۔

اس کی تین وجوہ ہیں۔۔۔ پاناما، فوج کے ساتھ تعلقات اوروہ مسئلہ جس کا ان نوابوں کے پاس کوئی حل نہیں، عمران خاں۔ پاناما کی تلوار سر پر، اسٹبلشمنٹ ناراض، اور ڈان لیک اس تاثر کو مزید تقویت دیتے ہوئے کہ ان کے فوج اور خفیہ اداروں سے تعلقات میں مزید بگاڑ آچکا ، اور عمران خان اسلام آباد کی طرف کوچ کرنے کیلئے کمر بستہ۔ ان میں سے کوئی ایک مسئلہ کسی بھی دلاور کولرزہ براندام کرنے کیلئے کافی تھی، تینوں کی آمیزیش سے وجود میں آنے والی کاک ٹیل خطرناک ۔ اہم بات یہ ہے کہ ان مسائل کا تدارک کرنے کیلئے شریف برادران کے پاس کوئی پلان نہیں، صرف کسی معجزے کا انتظار کہ وقت گزر جائے ، سیاہ بادل چھٹ جائیں اور روہ پہلی دھوپ خوف کے تاریک ہیولوں کو مٹا دے ۔ پی ایم ایل (ن) میں ذہین ترین دماغ رکھنے والے رہنما، چوہدری نثار ہیں۔ اُنھوں نے ڈان لیک پر فوج کی سائیڈ لی ہے ۔ اُن کے ذہن میں کیا ہے ؟ کیا وہ سیلاب کی صورت اپنے لئے کوئی محفوظ کنارہ تلاش کرنے کی کوشش میں ہیں ؟تبدیل ہوتے ہوئے ماحول میں سازش کی تھیوریاں پر پرزے نکالتی ہیں۔
شریف برادران کیلئے یہ نیک شگون نہیں ہے کہ اسی ہفتے سپریم کورٹ بھی پاناما اسکینڈل کی سماعت کرنے جارہی ہے ۔ انہیں مے فیئر فلیٹس اور سمندر پار اکاؤنٹس کیس، جس میں ان کے دو بیٹوں اور ایک صاحبزادی کے نام ہیں، کو الجھاوا دینے کیلئے بہت ہی شاطر وکلا کی ضرورت ہوگی ۔ کئی عشروں سے شریف برادران نے ان اکاؤنٹس اور جائیداد کو عوام کی نظروں سے چھپایا ہوا تھا،ان کے ٹیکس کے گوشواروں اور الیکشن پیپرز میں ان کا کوئی تذکرہ نہیں ملتا۔ پاکستانی قوانین ان جرائم کی پاداش میں کسی کو کوئی عوامی عہدہ رکھنے سے نااہل قرار دیتے ہیں۔ چنانچہ یہ بات واضح ہوچکی ہے کہ اس کیس کی سماعت بہت اہمیت کی حامل ہے ۔ پہلے سپریم کورٹ کے رجسٹرار نے پاناما اسکینڈل کی دی جانے والی درخواستوں کو ’’بے بنیاد‘‘قرار دے کر رد کردیا تھا لیکن فاضل چیف جسٹس صاحب نے رجسٹرار کے موقف کو مسترد کرتے ہوئے انہیں قابلِ سماعت قرار دیا۔ پی ٹی آئی نے پاناما پر درخواستوں کی فوری سماعت کی بھی استدعا کی جو منظور ہوگئی۔

ہر چیز ایک سلوموشن میں ہورہی ہے ۔ اس میں جسٹس چوہدری کی عدالت کی دھمکی آمیز لہجہ نہیں ہے ۔ جسٹس چوہدری صاحب کے دھماکہ خیز بیانات بریک نیوز بن کر برستے رہتے، لیکن موجودہ عدالت بہتر ین کارکردگی کے باوجود میڈیا سے باوقار گریز کی پالیسی رکھتی ہے ۔ جب وزیرِ اعظم نے پاناما اسکینڈ ل پر ایک بے ضررجوڈیشل کمیشن بنانے کی درخواست کی تومحترم چیف صاحب نے انکار کردیا۔ گویا حکومت اس ڈرامے بازی کو چھوڑ کر کوئی بامقصد اقدام اٹھائے ۔ جب جوڈیشل تاریخ رقم ہوگی تو یہ عدالت اپنے بصیرت اور جاندار فیصلوں کی وجہ سے یاد رکھی جائے گی۔ اب اس کے سامنے یہ یادگار کیس پیش ہونے جارہا ہے ، اور اس پر اسٹیک بہت گہرے ہیں۔ جیسا کہ میں نے کہا کہ پی ایم ایل (ن)کو بہت ہوشیار وکلا کی خدمات حاصل کرنیکی ضرورت ہے خدشہ ہے کہ شریف فیملی کے ذاتی معاملات کی نگرانی کرنیوالے مبتدی وکلا کام نہیں دیں گے ۔

اس ماحول میں ایک تاثر گہرا ہوتا جارہا ہے ، اور آپ اس بات کو لکھ رکھیں، ہم ایک فیصلہ کن مرحلے کے قریب پہنچ چکے ہیں۔ ہمارے سامنے ایک دور ختم ، اور دوسرا شروع ہوا چاہتا ہے ۔ تاہم اس تبدیلی میں خامشی کا پہلو نمایاں ہے ، نعروں اور نقاروں کے بغیر، اور یہ بھٹو یا ایوب خان کے خلا ف چلنے والی تحریکیوں جیسے مرحلہ نہیں۔ بہت مدہم سروں میں ، کوئی شور و غوغا نہیں۔ اس پرشاعرانہ محاورہ ہے …’’خدا کی لاٹھی بے آوازہوتی ہے ‘‘ہم اس بے آواز لاٹھی کی ’’خاموش ضربیں ‘‘ دیکھنے جارہے ہیں۔ اس کاری ’’ ضربتِ خفیفہ‘‘ کاجلی اظہار شریف برادران کی میڈیا ٹیم کے واویلے سے ہوتا ہے ۔ اس ٹیم کے تین سرخیل شمشیر زن محبی پرویز رشید، طلال چوہدری اور دانیال عزیز ہیں، لیکن حیرت انگیز طور پر وہ سکوت کی چادر تانے ’’منتظرِ فردا ‘‘ ہیں۔اور پھر میرے دوست رانا ثنا اﷲکوکیا ہوا؟اب تو لسانی معرکے میں قیام کا وقت آیا تھا، وہ سجود میں تو نہیں گر گئے؟

ان مسائل کے ہوتے ہوئے خدا جانتا ہے کہ شریف برادران کو کیا سوجھی جو فوج سے تناؤبڑھا لیا۔ سیکرٹری خارجہ نے پہلے تو پاکستان کی بڑھتی ہوئی عالمی تنہائی پر روشنی ڈالی، اور جب آئی ایس آئی کے چیف نے پوچھا کہ صوبائی حکومتیں دہشت گرد عناصر کو گرفتار کیوں نہیں کرتیں تو کہا جاتا ہے کہ شہباز شریف نے اس کا جواب یہ دیا کہ جب وہ جہادی عناصر کو گرفتار کرتے ہیں تو ایجنسیاں اُن کی راہ میں حائل ہوجاتی ہیں۔ اُس وقت کمرے میں سکتہ سا طاری ہوگیا، اور پھر وزیر اعظم نے صورتِ حال کو سنبھالنے کی کوشش میں کہا کہ یہ آئی ایس آئی کا قصور نہیں ہے ۔ یہ ریاست کی پالیسی ہے اور وہ اس کی ذمہ داری اٹھاتے ہیں۔ کیا بات ہے ! پہلے تنقید اور پھر حمایت ۔ پھر بھی جو ہوا ٹھیک ہوا، لیکن یہ گفتگو ڈان کو کس نے بتائی ؟اب ڈان جو مرضی کہے، اُ س نے یہ کہانی درختوں کے پتوں سے نقل نہیں کی ہے ، یہ کمرے میں ہونے والی میٹنگ تھی۔ یہاں معلومات اور اظہار کی آزادی کے معروضات بہت پیچھے رہ جاتے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ پہلے تو حکومت نے آئی ایس آئی چیف پر تنقید کی، پھر حمایت کی اورپھر تمام معلومات عوام تک پہنچا دیں۔ خیر اس ڈرامے کا مقصد اور انجام کیا ہوگا؟لگتا ہے کہ اُنھوں نے بہت چالاک بننے کی کوشش کی تھی۔