بریکنگ نیوز
Home / انٹرنیشنل / پاکستان کی افغانستان میں دیر پا امن کی خواہش ہے ٗ نواز شریف

پاکستان کی افغانستان میں دیر پا امن کی خواہش ہے ٗ نواز شریف

آستانہ۔ وزیراعظم نواز شریف سے افغان صدر کی ملاقات میں وزیر اعظم نے واضح کیا ہے کہ افغانستان کیخلاف پاکستان کی سرزمین استعمال ہوئی نہ مستقبل میں ہوگی، کابل حملے کے ثبوت دیے جائیں محض الزامات نہ لگائیں ۔تفصیلات کے مطابق قازقستان کے شہر آستانہ میں شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس کے موقع پر وزیراعظم نواز شریف سے افغان صدر نے ملاقات کی جس کے آغاز میں دونوں رہنماں نے ایک دوسرے کو تحائف دئیے۔ملاقات ایک گھنٹے سے زائد جاری رہی جس میں دونوں رہنماوں نے پاک افغان امور پر طویل گفتگو کی۔ اشرف غنی سے ملاقات میں وزیراعظم نے واضح کیا کہ اگر افغانستان کابل حملے کا الزام پاکستان پر عائد کر رہا ہے تو اس کے واضح ثبوت دے محض الزامات نہ لگائے۔ اس موقع پر وزیراعظم نے اشرف غنی پر واضح کیا کہ پاکستان کی سرزمین نہ ہی افغانستان کے خلاف استعمال ہوئی اور نہ مستقبل میں ہوگی۔

پاکستان کی خواہش ہے کہ افغانستان میں دیر پا امن قائم ہو۔زرائع کا کہنا ہے کہ ملاقات میں وزیراعظم نے افغان صدر پر واضح کردیا کہ پاکستان افغانستان کے ساتھ انٹرنیشنل بارڈر بنانے پر غور کر رہا ہے تاکہ افغان سرزمین سے دہشت گردوں کی بیج کنی کی جائے۔ملاقات میں نوازشریف نے افغان صدر سے کہا ہے کہ الزامات بہت لگائے جارہے ہیں لیکن کوئی ثبوت بھی ہونا چاہئے اور الزامات کے بجائے مسائل کا حل آپس میں بات چیت کے ذریعے ہونا چاہئے۔ ان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی سے سب سے زیادہ متاثرہونے والا ملک پاکستان ہے۔

ہمیں بہت زیادہ دہشت گردی کا سامنا ہے اور ملافضل اللہ جیسے لوگ افغانستان میں بیٹھ کر پاکستان میں دہشت گردی پھیلا رہے ہیں۔ملاقات کے بعد افغان صدر اشرف غنی اور وزیراعظم نوازشریف باہر آئے تو ایک صحافی کے سوال پر اشرف غنی کا کہنا تھا کہ ملاقات کا مشترکہ اعلامیہ جاری کیا جائے گا تاہم ہماری ملاقات ہمیشہ کی طرح اچھی رہی۔ اشرف غنی نے دہشت گردی سے متعلق سوال کا جواب نہیں دیا۔