بریکنگ نیوز
Home / اداریہ / کرکٹ میں شاندار کم بیک

کرکٹ میں شاندار کم بیک


پاکستان کی قومی کرکٹ ٹیم نے چیمپئنز ٹرافی کے فائنل میں روایتی حریف بھارت کو عبرتناک شکست دے کر فتح کا تاج اپنے سرسجا لیا 1992ء کے بعد عالمی کرکٹ میں یہ ایک بڑی کامیابی ہے اس اہم ترین مقابلے میں فخر زمان کے 114رنز پورے میچ میں نمایاں رہے جبکہ محمد عامر کی طوفانی باؤلنگ نے بھارتی بیٹنگ لائن کی کمر توڑ دی اسی طرح حسن علی نے ٹورنامنٹ کے بہترین کھلاڑی کا اعزاز اپنے نام کیا پاکستان ٹیم کی شاندار کارکردگی کا نتیجہ تھاکہ بھارتی ٹیم 31ویں اوور ہی میں156 رنز پر آؤٹ ہوگئی ٹرافی کے گزشتہ میچ میں شکست کے بعد کرکٹ کے شائقین اور پوری قوم ایک بار پھر ٹیم کی کارکردگی سے مایوس نظر آرہی تھی جسے فائنل نے مستقبل کے لئے بھی بڑی امید میں تبدیل کردیا مایوس چہروں نے کھل اٹھنے کے ساتھ ٹیم کی کارکردگی سراہنے میں کوئی کمی نہیں کی ہر ایک نے اپنے اپنے لیول پر کھلاڑیوں کی حوصلہ فزائی کی صدر مملکت اور وزیراعظم نے ٹیم کو مبارکباد پیش کی جبکہ آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کھلاڑیوں کو عمرہ کرانے کا اعلان کیا پاکستان ٹیم کے سابق کپتان اور تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے تو قوم کو جیت کی مبارکباد ایڈوانس ہی میں دی وطن عزیز میں کھیلوں کے فروغ کے لئے بھاری فنڈ ز مختص کئے جاتے ہیں ۔

قوم کی خواہش ہوتی ہے کہ پاکستانی سٹارز ہر میدان میں نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کریں بدقسمتی سے ہمارے ہاں کھیلوں کے شعبے میں بھی خلاف میرٹ انتخاب کی شکایات رہی ہیں جس کا نتیجہ مختلف کھیلوں کو متاثر کرتا رہا کرکٹ کے عالمی سطح کے مقابلے میں شاندار کامیابی کا تقاضا ہے کہ ٹیلنٹ ہنٹ سے لیکر مقابلوں کے انعقاد تک کے سارے عمل کو ہر سطح پر کڑی نگرانی میں رکھا جائے نوجوانوں کی بھرپور حوصلہ افزائی ہو اور کھیلوں کے تمام ادارے ہر قسم دباؤ سے آزاد رہ کر کام کریں رائے اس میں بھی کوئی دوسری نہیں کہ کامیابیوں کیساتھ ان کا تسلسل برقرار رکھنا بھی ایک چیلنج کی حیثیت رکھتا ہے ہمارے فیصلہ سازوں اور کھلاڑیوں کو اب ہر مرحلے پر اس چیلنج کا مقابلہ کرنا ہوگا تاکہ ٹیم کا گراف نیچے نہ آنے پائے اس مقصد کے لئے کھیلوں کے ذمہ دار اداروں میں اصلاحات کا عمل بھی جاری رکھنا ہوگا۔

نتیجہ خیز اقدامات کی ضرورت

صوبائی وزیر محمود خان کا کہنا ہے کہ خیبر پختونخوا حکومت ملاکنڈ ڈویژن سمیت صوبے کے دیگر موزوں مقامات پرایک ہزارمائیکروہائیڈل پاورپراجیکٹ بنا رہی ہے خبررساں ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق خیبر پختونخوا تیل وگیس کی آمدنی میں دوسرے نمبر پر آگیا ہے 120ارب روپے کی لاگت کے چشمہ کینال منصوبہ پر بھی کام رواں سال شروع ہونے کا عندیہ دیا جارہا ہے یہ سب قابل اطمینان اور خوش آئند سہی تاہم عام شہری حکومتی اعلانات کے برسرزمین نتائج کا منتظر ہے بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خاتمے اورصنعتوں کے لئے سستی بجلی کے منصوبے عملی شکل اختیار نہیں کرپارہے ضرورت اس بات کی ہے کہ وفاق اور صوبے کی حکومتیں مستقبل کی ساری منصوبہ بندی کیساتھ عوام کے فوری ریلیف کیلئے اقدامات یقینی بنائیں اس مقصد کیلئے متعلقہ اداروں میں باہمی رابطہ بھی ضروری ہے تمام تر اختلافات کے ساتھ عوامی مفاد کے معاملات پر سیاسی قیادت کو مل بیٹھ کر حکمت عملی وضع کرنا ہوگی تاکہ لوگ تبدیلی کا خوشگواراحساس پائیں۔