بریکنگ نیوز
Home / کالم / لہوپکارے گاآستیں کا

لہوپکارے گاآستیں کا


یک با ت واضح ہے کہ بے گناہ کا خون کبھی رائیگاں نہیں جاتا اور اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ جس نے بھی اس مملکت خدادا د سے غداری کی اور اپنے فائدے کو اس مملکت پر مقدم رکھا اللہ تعالیٰ نے اُسے ذلیل و خوار کیا۔پاکستان بننے سے لے کر اب تک کے بہت سے حوالے ہیں کہ جس بھی شخص نے اس مملکت سے غداری کی چاہے وہ کسی بھی پوسٹ پر کیوں نہیں تھا اُسے اس کی سز ا ضرو ملی آپ کتنے بھی طاقت ور ہوں سیاسی طور پر یا کسی اور طرح سے، دیکھا یہ گیا ہے کہ اگر آپ نے پاکستان سے غداری کی ہے تو آپ کو جلد یا بدیر سزا ضرور ملی۔اس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ ہمارے اولیائے کرام کو پاکستان بننے سے قبل اس کی خوشخبریاں دے دی گئی تھیں کہ اللہ تعالیٰ اس مملکت کو وجود دینے والا ہے۔پاکستان بننے کے بعد بہت سے لوگوں نے اس کے ساتھ سیاسی طور پر یا معاشی طور پر غداریاں کیں اور ہم نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ اُن کا انجام بخیر نہیں ہوا۔ جنہوں نے اس کی ترقی میں روڑے اٹکائے اُن کو بھی اللہ کریم نے معاف نہیں کیا اور آج بھی جو اس کے خلاف کام کر رہے ہیں وہ وزیر ہوںیا فقیر ‘اللہ کی پکڑ میں آ کے رہیں گے اللہ دلوں کے بھید جاننے والا ہے ہمارے نزدیک کوئی شخص کتنا ہی پرہیز گار کیوں نہ ہواللہ اُس کے دل کو جانتا ہے اور ہم اس پر پوری طرح سے یقین کرتے ہیں۔

کہ اُس کو سزا ضرور ملے گی۔ اللہ نے ایک منیاری کی دکان کے مالک کو اتنا بڑ ا عہدہ دیا کہ لوگ اسے اپنا پیر ماننے لگے۔وہ سب کا پیر بھائی بن گیا مگر اُس کے دل میں کھوٹ تھی او ر وہ دشمن کے ایجنڈے کو آگے بڑھا رہا تھا اور اس کو اللہ نے ایسے انجام تک پہنچایا کہ آج وہ راندہ درگاہ ہے۔وہی لوگ جو اس کی پوجا کی حد تک محبت کرتے تھے آج اُس کا نام بھی سننا پسند نہیں کرتے اُس کے منہ سے اللہ تعالیٰ نے وہ کچھ سر بزم کہلوا دیا جو اُس کے دل میں تھا اور اُس نے کھل کر پاکستان مردہ باد کا نعرہ لگا دیا ۔ یہ اُس کے دل میں اُس وقت سے تھا جب سے اُس نے مہاجروں کو پاکستان کے خلاف کام کرنے کیلئے اور پاکستان کو مزید توڑنے کے لئے مہاجرستان کے ایجنڈے پر کام شروع کیا۔مہاجر جب سے اس ملک میں آئے ہیں پاکستان نے انہیں اس سے بڑی عزت دی ہے جتنا ان کا حق تھا۔ پاکستان کی پہلی اسٹیبلشمنٹ ان ہی لوگوں پر مشتمل تھی اسلئے کہ زیادہ پڑھے لکھے لو گ اور ہندوستان میں آئی سی ایس کے یہی لوگ تھے مگر اس شخص نے ہندوستان کے اشارے پر کراچی کو یرغمال بنا دیاپاکستان کے سب سے پر سکون شہر کو اس نے جہنم میں تبدیل کر دیا وہی کراچی جس کو غریب کی ماں کہا جاتا تھا غریب کے خون سے رنگا گیا۔

اُس نے ایک ایسی گینگ تیار کی کہ جو اس کے ایجنڈے پر کام کرنے سے انکا ر کر تا اُسے یہ موت کی نیند سلا دیتامگر اللہ کے اپنے ہی کام ہوتے ہیں چونکہ یہ شخص اللہ کی دی ہوئی زمین پر فساد بر پا کر رہا تھا اس لئے اس پر اللہ نے یہ زمین ہی تنگ کر دی اس نے اپنا کام برطانیہ میں بھی جاری رکھا ۔ یہاں تک کہ اُس کے قریب ترین لوگ بھی اس کا نشانہ بن گئے اس کے وہ ساتھی جو اس کے ہر کام میں شریک تھے جب اُ س سے آگے نکلنے لگے تو اُن کو ڈیتھ سکواڈ کے حوالے کر دیا۔خدا کا کرنا یہ ہوا کہ اس کے اپنے ہی اسکے خلاف ہو گئے اسلئے کہ وہ اس کے اندرونی ایجنڈے سے ناواقف تھے اور جن کو واقفیت ہوئی وہ اس کو چھوڑ گئے اور ایسے ملکوں میں چلے گئے جہاں اس کے ڈیتھ سکواڈ کی پہنچ نہیں تھی۔اب جو اللہ کی بے آواز لاٹھی نے اپنا کام شروع کیا تو وہی ہاتھ جو ان جرائم میں ملوث تھے پکارنے لگے اور الزام ایک دوسرے پر دھرنے لگے جن بے گناہوں کا لہو بہایا گیا تھا اُس نے پکارنا شروع کر دیا اور قریب ہے کہ وہ لوگ جو ان گناہوں میں شریک تھے ، جن کا ایجنڈا اس مقدس زمین کو توڑنا تھا ، جو صوبے کے نام پر ایک سٹیٹ بنانے کا ارادہ کر رہے تھے۔ اب یہ سب طشت ازبام ہوچکا اب حکومت کا ہاتھ اور ان کا گریبان ہے۔