بریکنگ نیوز
Home / پاکستان / خیبر پختونخوا میں سیاسی پارہ اونچا ٗ مشاورت تیز

خیبر پختونخوا میں سیاسی پارہ اونچا ٗ مشاورت تیز

پشاور۔صوبائی حکومت کی طرف سے اپوزیشن کے چھ ممبران کی حمایت کے حصول کے دعوے کے بعدپی ٹی آئی کے ناراض اراکین اوراپوزیشن جماعتوں نے ہارس ٹریڈنگ کے الزام کے تحت الیکشن کمیشن سے رجوع کرنے کی تیاریا ں شروع کردی ہیں اس سلسلے میں مشاورت کے بعدالیکشن کمیشن میں باقاعدہ شکایت درج کرائی جائے گی جبکہ صوبائی اسمبلی میں تحریک التواء بھی جمع کراد ی گئی ہے ذرائع کے مطابق وزیر اعلیٰ کے بیان کے بعدپی ٹی آئی کے ناراض اراکین کی طرف سے گورنر کو خط لکھنے کافیصلہ بھی کیا گیاہے کہ وہ فی الفور اس بیان کانوٹس لیں اس سلسلے میں ناراض اراکین کامشاورتی اجلاس گذشتہ روز منعقدہوا جس میں ان ہاؤ س تبدیلی کے حوالہ سے مشاورت کی گئی اجلاس کے بعد پی ٹی آئی کے رکن اسمبلی اورسابق صوبائی وزیر ضیاء اللہ آفرید ی نے صوبائی اسمبلی میں وزیر اعلیٰ کے بیان کے خلاف تحریک التوا ء جمع کرائی ۔

جس میں کہاگیاہے کہ وزیر اعلیٰ نے 75اراکین کی حمایت کے حصول کادعویٰ کرکے اراکین کی خرید وفروخت کا اعتراف کرلیاہے لہٰذا الیکشن کمیشن ،اور عدالت عظمی فوری نوٹس لیں اور ساتھ ہی اس پر بحث بھی کرائی جائے ناراض اراکین نے گورنر کو بھی خط میں اپناکردار ادا کرنے کے مطالبہ کافیصلہ کیاہے جبکہ ن لیگ نے وزیر اعلیٰ کے بیان کے بعدالیکشن کمیشن سے فوری طورپر حرکت میں آنے کامطالبہ کرتے ہوئے اس امر پرافسو س کااظہار کیاہے کہ صوبہ کاچیف ایگزیکٹو ازخود ہارس ٹریڈنگ کااعتراف کررہاہے ۔

دوسری جانب وزیر اعلیٰ کی طرف سے اپوزیشن کے چھ اراکین کی حمایت کے حصول کے بیان کے بعداپوزیشن جماعتوں نے مذکورہ ممبران کی تلاش شروع کردی ہے جبکہ اپنے اراکین کو متحد رکھنے کے لیے بھی حکمت عملی وضع کرلی گئی ہے ذرائع کے مطابق وزیراعلیٰ کے بیان کے بعد حکومت کی حمایت کرنے والے اپوزیشن کے چھ ممبران کی تلاش تیز کردی گئی ہے تمام اپوزیشن جماعتیں اپنی صفوں پر نظریں دوڑارہی ہیں ن لیگ اورجے یو آئی کے ایک ایک ممبر کے حوالے سے صورت حا ل واضح ہے جس کے بعد دیگر جماعتوں نے مزید چار اراکین کی تلاش جاری رکھی ہے جبکہ اپنے دیگر ممبران کو پھسلنے سے بچانے کے لیے بھی حکمت عملی وضع کرلی گئی ہے ذرائع کے مطابق اگلے چندر وز میں اپوزیشن جماعتیں الگ الگ پارلیمانی اجلاس بلانے کی تیاریاں کررہی ہیں